Home » Author Archives: Admin

Author Archives: Admin

وزیراعظم عمران خان نے نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کا افتتاح کردیا

 اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے وفاقی دارالحکومت کے جی 13 میں نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کا افتتاح کردیا۔

وزیراعظم عمران خان نے نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کا افتتاح کردیا ہے، ہاؤسنگ پروگرام کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ بڑی جدوجہد کے بعد ہم اس مقام تک پہنچے ہیں جب سے حکومت میں آیا دل میں کوئی کنفیوژن نہیں، میراخواب پاکستان کو فلاحی ریاست بنانا تھا، کیوں کہ فلاحی ریاست کمزور طبقے کی ذمہ داری لیتی ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ ہماری حکومت کے پہلے دن ہی کہا گیا کہ حکومت ناکام ہوگئی ہے، میرا ویژن بڑا کلیئر ہے کہ مجھے کیا کرنا ہے،  ہاؤسنگ اسکیم پورے پاکستان میں شروع کریں گے،  یہ آسان کام ہوتا تو 70 سال میں کوئی بھی کردیتا۔ گزشتہ سالوں میں ملک میں بڑے پیمانے پر تاریخی لوٹ مار کی گئی، ماضی کی حکومتوں کےلیےگئےقرضوں کا سود ہماری حکومت 6 ارب روپےروزانہ اداکررہی ہے۔

پیپلز پارٹی، (ن) لیگ زرداری اور شریف سے باہر نکلیں، فواد چوہدری

اسلام آباد: وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ پیپلز پارٹی، (ن) لیگ زرداری اور شریف سے باہر نکلیں۔

سماجی رابطے کی سائٹ ٹوئٹر پر وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی، (ن) لیگ زرداری اور شریف سے باہر نکلیں اور نئے سیاسی بیانیے پر توجہ دیں، کرپشن کیسز سے گھبرائی ہوئی لیڈر شپ دونوں پارٹیوں کا مستقبل تاریک کر چکی ہے۔

وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ کبھی اٹھارویں ترمیم میں تبدیلی اور کبھی صدارتی نظام جیسی غیر سنجیدہ بحث کرتے ہیں، دونوں چاہتے ہیں کہ کسی طرح مقدمات سے توجہ ہٹے مگر ایسا نہیں ہوگا۔

پولیس فائرنگ سے بچے کی ہلاکت؛ آئی جی سندھ نے معافی مانگ لی

کراچی: گزشتہ روز پولیس اور ڈاکوؤں کی فائرنگ کے تبادلے میں 2 سالہ بچے کی موت پر آئی جی سندھ کلیم امام نے متاثرہ خاندان سے معافی مانگ لی ہے۔

کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے آئی جی سندھ کلیم امام کا کہنا تھا کہ پولیس کی جانب سے منگل کو پیش آنے والے واقعے پر معافی مانگتا ہوں، ہم کل اور کچھ روز پہلے ہونے والے واقعہ کے متاثرین کے ساتھ ہیں اور ذاتی طور پر معافی مانگتا ہوں۔ ہم چاہتے ہیں کہ اس طرح کے واقعات دوبارہ نہ پیش آئیں اور کوشش کریں گے کہ پولیس اہلکاروں کی  تربیت میں اضافہ ہو، بڑا اسلحہ ختم کردیا ہے، چھوٹے ہتھیار سے ٹریننگ کروائیں گے۔

کلیم امام کا کہنا تھا کہ کراچی میں امن و امان کے قیام میں پولیس کی قربانیاں شامل ہیں، سندھ میں چند سال کےدوران ڈھائی ہزار سے زیادہ پولیس کے جوان شہید اور ہزاروں اہلکار زخمی  ہوئے، صوبے میں موبائل چھینے کی وارداتوں اور 53 فیصد قتل کی واردتوں میں کمی آئی ہے، داعش کے نائب سرابرہ کا گینگ ختم کیا۔

آئی جی سندھ نے کہا کہ صوبےمیں پولیس کی کارکردگی پہلے سے بہترہے،  سندھ پولیس قانون کی پاسداری کرتی ہے، ہم جو کام کرتے ہیں سندھ حکومت کی پالیسی پر عمل کرتے ہیں، ہم عوام کے ساتھ ساتھ سندھ حکومت اور میڈیا کو بھی جواب دہ ہیں۔

ایمنسٹی سکیم اورپاکستانی معیشت

ایمنسٹی اسکیم کے حوالے سے حکمران جماعت کے درمیان وزراء کی آراء مختلف ہوگئی ہے۔ گزشتہ روز اسکیم کا اعلان کرنا تھا لیکن پی ٹی آئی کے کچھ وزراء نے اس کی مخالفت کردی جس کی وجہ سے اعلان موخرکرناپڑا ، پیپلز پارٹی نے بھی صدارتی آرڈیننس کے ذریعے ایمنسٹی اسکیم کے نفاذ کی مخالفت کی تھی۔ نیز ماضی کی اسکیم کو دیکھتے ہوئے بھی اس مرتبہ یہ اقدام کوئی خاصی کامیابی سے ہمکنار ہوتا ہوا نظر نہیں آرہا۔ شاید اسی وجہ سے اس پر مزید بحث کرنے کا عندیہ دیتے ہوئے فی الحال اسے موخر کردیا گیا ہے۔ بڑھتی ہوئی مہنگائی، ٹیکس کے نظام کو مزید پھیلانے اور ٹیکس ادائیگی کے حوالے سے بہت سے مسائل درپیش ہیں، نظام کو بھی درست کرنے کیلئے حکومت کو حتمی اقدام اٹھانے پڑیں گے۔ کپتان بھی مختلف چیزوں کو دیکھ ر ہے ہیں مگر چونکہ وہ پوری ٹیم کے کپتان ہیں انہیں خصوصی طورپر پنجاب اور کے پی کے کے مسائل بھی درپیش ہیں انہیں بھی حل کرنا وزیراعظم ہی کی ذمہ داری میں آتا ہے، ان سب چیزوں کو حل کرنے میں ٹیم کے دیگر کھلاڑی ممدو معاون نظر نہیں آرہے اسی وجہ سے حکومت کے متعدد منصوبوں کو اپوزیشن زبردست ہدف تنقید بناتی ہے۔ وفاقی کابینہ نے منی لانڈرنگ کے حالیہ کیسز میں شدید تحفظات کا اظہار کیا اور اس عزم کا اعادہ کہ کیسزکو منطقی انجام تک پہنچایا جائے گا سی ٹی ڈی کو انسداد منی لانڈرنگ کی تحقیقات کے حوالے سے اختیارات دیدیئے گئے ہیں۔حکومت 1 سے 5گریڈ کی نوکریاں قرعہ اندازی سے دے گی جبکہ دیگر گریڈ کی نوکریاں ٹیسٹ نظام سے دیں گے ۔ اس بات کا فیصلہ وفاقی کابینہ کے اجلاس میں کیا گیا جوگزشتہ روز وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت ہوا۔ وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے وزیر اطلاعات فواد چودھری نے کہا کہ ماضی کے حکمرانوں کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے ملک اقتصادی بدحالی کا شکار ہے۔ ماضی میں شریف خاندان اور زرداری نے منی لانڈرنگ اور کرپشن کی انتہا کی۔ شریف خاندان کے 95 فیصد اثاثوں کی ڈیکلریشن ٹی ٹی بیسڈ ہے۔ ٹی ٹی پیغامات کے ذریعے نواز شریف اور شہباز شریف کو پیسے باہر سے آتے رہے۔ حسن نواز، حسین نواز اور اسحاق ڈار عدالتوں کا سامنا نہیں کر رہے ہیں۔ متحدہ بانی، اسحاق ڈار، حسن اور حسین نواز پاکستان کے دیئے ہوئے تحفے ہیں، ہم چاہتے ہیں کہ برطانیہ انہیں واپس کرے۔ زرداری اور شریف خاندان اگر لوٹی ہوئی ملکی دولت واپس کر دیں تو ملک میں مہنگائی نہیں ہوگی۔ ماضی کی حکومتوں کے کابینہ ارکان بھی میگا سکینڈلز منی لانڈرنگ میں ملوث تھے۔ ہل میٹلز کے اکاؤنٹ سے ایک ارب 82 کروڑ روپے نواز شریف کو منتقل ہوئے۔ حمزہ شہباز کے 97 فیصد جبکہ شریف خاندان کے 95 فیصد اثاثے ٹی ٹی کے ذریعے بنے۔ اگر شریف خاندان 26 ملین ڈالر ظاہر کرکے پاکستان لاتا ہے تو سوچیں ان کا کتنا پیسہ باہر ہوگا؟ نیشنل ایکشن پلان کے بعد دہشت گردی کے واقعات میں کمی آئی ہے، نظام کی تبدیلی کی جنگ جاری ہے سب لوگ اپنے اپنے کام کر رہے ہیں، وفاقی کابینہ نے پی ٹی اے کے حوالے سے سفارشات تیاری کے لئے کابینہ کمیٹی کے قیام ، آڈیٹر جنرل آفس کی استعداد کار بڑھانے کیلئے ڈاکٹر عشرت حسین کو ٹاسک سونپنے،بھرتی کیلئے اراکین پارلیمنٹ کا کوٹہ ختم کر کے گریڈ ایک تا پانچ بھرتی کیلئے قرعہ اندازی کا نیا طریقہ کار اپنانے، اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کو ٹیسٹنگ سروسز کا جائزہ لینے، پاکستان سٹیل مل کے بحالی پلان ،پی ٹی ڈی سی اور متروکہ وقف املاک بورڈ چیئرمین کی تقرری کی منظوری دیدی ہے۔ کابینہ نے پاکستان پینل کوڈ میں ترمیم کی منظوری دیدی ہے جس کے بعد بیرون ممالک سے حوالے کئے گئے ملزمان کو سزائے موت نہیں دی جائے گی۔ بیرون ملک سے ملزم لانے کیلئے پینل کوڈ میں ترمیم ہوگی۔ حقیقت ہے کہ پاکستان کی عدالتوں، جیلوں اور پراسیکیوشن میں فرق ہے اس فرق کو دور کرنا ہے ،پی ٹی آئی نے حکومت تبدیل کی ہے اب نظام تبدیلی کی جنگ جاری ہے ، وزیراعظم کی کوشش ہے کہ امیروں اور غریبوں کے ساتھ ایک جیسا سلوک ہو ۔
پشاورمیں دہشت گردوں کیخلاف کامیاب آپریشن
قانون نافذ کرنے والے اداروں نے بروقت کارروائی کرتے ہوئے پشاور کو بڑی تباہی سے بچا لیا ، جب انہیں پتہ چلا کہ ایک مکان میں دہشت گرد چھپے بیٹھے ہیں تو جائے وقوعہ کو گھیرے میں لے لیا جس پر دہشت گردوں نے فائرنگ شروع کردی ، جوابی کارروائی کے دوران پانچ دہشت گرد مارے گئے جبکہ ایک اے ایس آئی نے جام شہادت نوش کیا۔ کوئٹہ ہزار گنجی، چمن کے بعد پشاور میں واقعہ کا رونما ہونا دہشت گردوں کیخلاف مزید گھیرا تنگ کرنے کی غمازی کرتا ہے۔ اگر خدانخواستہ پشاور میں بروقت کارروائی نہ کی جاتی تو کوئی بڑا واقعہ رونما ہوسکتا تھا۔ ہمارے امن و امان قائم کرنے والے ادارے پوری طرح چوکس ہیں اور دشمن کو اپنے مذموم عزائم میں کامیاب نہیں ہونے دیتے تاہم من حیث القوم ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم اپنے دائیں بائیں ایسے افراد پر نظر رکھیں جن کی حرکات و سکنات مشکوک ہوں ان کے بارے میں ہر شخص کو متعلقہ اداروں کو فوری اطلاع کرنے کی ضرورت ہے۔
پروگرام’’ سچی بات‘‘ میں ایس کے نیازی کی فکرانگیزگفتگو
پاکستان گروپ آف نیوز پیپرز کے چیف ایڈیٹر اور روزنیوز کے چیئرمین ایس کے نیازی نے روز نیوز کے پروگرام ’’سچی بات ‘‘ میں گفتگو کرتے ہوئے کہاہے کہ بھارت کے ساتھ ہمارے معمولات شروع سے خراب ہیں،سب سے اہم مسئلہ کشمیر ہے اس کے بعد پانی کا مسئلہ بھی ہے،اللہ کرے کہ مودی وزیراعظم عمران خان کی امید پرپورا اتریں،پاکستانی فوج دنیا کی مانی ہوئی فوج ہے، پاکستان آرمی کی تو بھارت کاپی کررہاہے،ہمارے گانے کی بھی کاپی کی گئی،پاکستان آرمی پر تو ہم جان بھی قربان کرتے ہیں ، لوگوں کا بہت برا حال ہے،لوگوں کی طرف توجہ کی ضرورت ہے،پرائیویٹ سکولوں نے لوٹ مار مچائی ہوئی ہے، ہرگلی ہرمحلے میں سکول کھلے ہیں،لوگ گھروں سے نہیں نکل سکتے،گورنمنٹ کے سکول اچھے ہونگے تو آپ کامیاب ہونگے،پشاور میٹروبس کا ٹھیکہ غلط بندے کو دیا گیا ہے،بہتری کاراستہ سوچنا چاہیے، اس ملک کا حل ہی صدارتی پارلیمانی نظام ہے، روزنیوز کے پروگرام ’’ سچی بات ‘‘میں گفتگو کرتے ہوئے سینئر رہنما پیپلز پارٹی قمر زمان کائرہ نے کہا کہ آج تک پاکستان میں احتساب کا نظام لوگوں کے بازومروڑنے کیلئے استعمال ہوا ہے،لوگوں نے فرضی اکاؤنٹس کھول رکھے ہیں جو غلط ہیں،کسی کاروباری شخصیت سے پوچھیں کہ آپ نے دولت کہاں سے بنائی تووہ نہیں بتاسکے گا،ہمارے دور حکومت میں نیب قانون نہیں بنے ،ہم نے اپنے دورحکومت میں ریکارڈ قانون سازی کی ،حکومت نے پچھلے 8ماہ سے کوئی قانون سازی نہیں کر سکی،اپوزیشن حکومت کو کہتی ہے کہ ہم تعاون کرنے کیلئے تیار ہیں،ملک مشکل حالت میں ہے،حکومت کو عوام کا سوچنا چاہیے۔

وزیراعظم عمران خان دنیا کے 100 با اثرترین افراد کی فہرست میں شامل

نیو یارک: مشہورامریکی میگزین ’’ٹائم‘‘ نے وزیراعظم عمران خان کو دنیا کے 100 با اثر ترین افراد کی فہرست میں شامل کیا ہے۔

معروف امریکی میگزین “ٹائم” نے سال 2019 کی با اثر افراد کی فہرست جاری کردی ہے جس میں وزیراعظم عمران خان اور دیگر کئی شخصیات شامل ہیں۔

ٹائم میگزین نے عمران خان کے بارے میں لکھا کہ پاکستان ایک مشکل دور سے گزر رہا ہے اور ایسے میں ملک کی بھاگ ڈور ایک ایسے شخص کے پاس ہے جس کی حیثیت ایک راک اسٹار کی سی ہے۔ پاکستانیوں کی بڑی تعداد پُرامید ہے کہ عمران خان ملک کو سنگین حالات سے نکال لیں گے۔

سانحہ کرائسٹ چرچ کے بعد مسلمانوں کے دکھ میں شریک نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جیسینڈا آرڈن، امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ، چینی صدرشی جن پنگ، امریکی ایوان نمائندگان کی اسپیکرنینسی پلوسی، ملائشیا کے وزیراعظم مہاتیر محمد اور پوپ فرانس بھی ٹائم میگزین کی اس فہرست کا حصہ ہیں۔

دوسری طرف کھیل سے مصری فٹبالر محمد صالح، امریکی گالفر ٹائگرووڈزاورامریکی باسکٹ بال اسٹارلیبرون جیمز بھی اس  فہرست میں شامل ہیں۔

فیس بک کے بانی مارک زکربرگ، سابق امریکی صدرباراک اوبامہ کی اہلیہ مشعل اوبامہ، گلوکارہ لیڈی گاگا، ٹیلرسوئفٹ، اداکار و ریسلر ڈیوائن جونسن اور گیم آف تھرونز کی ڈریگن کوئین اداکارہ ایمیلیا کلارک بھی فہرست کا حصہ ہیں۔

معصوم جانیں دہشت گردوں کا نشانہ

گزشتہ دنوں کوئٹہ میں خودکش دھماکے میں ایف سی اہلکار سمیت 20 افراد شہید جبکہ 48 زخمی ہوئے۔ خود کش حملہ آور نے سبزی لیکر آنے والے ہزارہ برادری کے افراد کو نشانہ بنایا ۔ دھماکے کا ہدف خاص کمیونٹی نہیں تھی اس میں دیگر لوگ بھی شہید ہوئے لیکن زیادہ تر ہزارہ برادری کے شہدا شامل ہیں۔اس واقعہ کے بعد ہزارہ قبیلے سے تعلق رکھنے والے افراد نے مغربی بائی پاس کو بند کر کے وہاں احتجاجی دھرنا دیا۔ وزیرمملکت برائے داخلہ شہر یار آفریدی کی کوئٹہ میں ہزارہ برادری کے رہنماؤں سے ملاقات کے بعد احتجاجی دھرنا ختم کر دیا گیا ۔ دہشت گردی کے واقعات میں ہزارہ برادری کے ڈھائی ہزار افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان اور شہر یار آفریدی نے کہا کہ ہزارہ قبیلے سے تعلق رکھنے والے افراد کے تحفظ کیلئے تمام وسائل کو بروئے کار لایا جائے گا۔ ہزارہ قبیلے سے تعلق رکھنے والے افراد کے ساتھ ظلم عظیم ہوا ہے اور موجودہ حکومت ان کے شانہ بشانہ کھڑی ہے۔بعض قوتیں پاکستان کو عدم استحکام سے دوچار کرنا چاہتی ہیں جس کے باعث انھوں نے عوام کو آپس میں لڑانے کے علاوہ ان کو ریاستی اداروں کے ساتھ لڑانے کی بھی کوشش کی۔ ان سازشوں کو ناکام بنانے کیلئے نہ صرف عوام بلکہ سکیورٹی فورسز نے بڑی قربانیاں دی ہیں۔ دہشت گردوں نے معصوم انسانی جانوں کو نشانہ بنایا ہے۔آخر یہ کون لوگ ہیں جو سرعام معصوم لوگوں کو مار رہے ہیں۔ یقیناًیہ پاکستانی اور مسلما ن نہیں ہو سکتے۔ یہ غیر ملکی دہشت گرد ہیں جو پاکستان کو کمزور کرنا چاہتے ہیں تاکہ پاکستان پر ناکام ریاست کا الزام لگا کر اسے دنیا میں سر اٹھانے کے قابل نہ چھوڑا جائے۔ ان غیر ملکی ایجنٹوں میں سرفہرست بھارتی ایجنسی را کے اہلکار ہیں جو افغانستان سے تربیت حاصل کر کے پاکستان میں داخل ہوتے ہیں ۔ پاکستانی سرحد کے ساتھ بھارت کے قونصل خانوں کے نام پر درجنوں دہشت گردوں کو تربیت دینے کے مراکز کھولے گئے۔ ان مراکز سے ہی دہشت گرد بلوچستان اور قبائلی علا قوں میں داخل ہوکر دہشت گردی کی کارروائیاں کر رہے ہیں۔یہ لوگ اپنے خدوخال اور ایشائی ہونے کی وجہ سے ہم لوگوں میں گھل مل جاتے ہیں۔ کوئٹہ کے حالیہ دونوں واقعات میں بھارت نے مذہبی فرقہ واریت کو ہوا دی ہے۔ یوں وہ چاہتا ہے کہ بلوچستان خصوصاً کوئٹہ میں مذہبی، نسلی اور قوموں کی بنیاد پر فسادات کروائیں جائیں تاکہ پاکستان کی وحدت کو خدانخواستہ توڑ ا جائے۔ بلوچستان کے مختلف حصوں سے گرفتار ہونے والے دہشت گردوں نے دوران تفتیش یہ اعتراف کیا ہے کہ افغانستان میں بھارتی خفیہ ایجنسی ’را‘ افغانیوں کو باقاعدہ ٹریننگ اور معاوضہ دیتی ہے ۔ اس کے ساتھ ساتھ انہیں مذکورہ علاقوں کے نقشے اور ٹارگٹ بھی دیئے جاتے ہیں۔ ٹریننگ کے بعد انہیں اسلحہ و بارود بھی دیا جاتا ہے۔ یہ ایجنٹ پاکستان میں داخل ہو رہے ہیں اور ان کا نیٹ ورک افغانستان میں ہے اور اس میں افغان حکومت کا بھارت کو مکمل تعاون حاصل ہے۔ بھارت پاکستان میں دہشت گرد عناصر کی معاونت کر رہا ہے۔ پاکستان شمالی علاقہ جات میں جاری دہشت گردی کے خلاف جنگ میں مصروف ہے لہٰذا بھارت شہری علاقوں میں شورش پیدا کر کے پاکستان کے مسائل میں اضافہ کر رہا ہے۔ بھارت پاکستان کے ساتھ خطرناک کھیل، کھیل رہا ہے۔ بھارت کی طرف پاکستان کے شمالی علاقہ جات میں اسلحہ اور رقوم فراہم کر کے دہشت گردوں کی حوصلہ افزائی کی جا رہی ہے اس کے علاوہ سرحدی علاقوں میں خصوصاً بلوچستان میں پاکستان مخالف تحریری مواد بھی پھیلایا جا رہا ہے۔ افغانستان کے تعاون سے بھارت بلوچستان میں تخریب کاری میں ملوث ہے۔بلوچستان کی سرحدیں افغانستان سے ملتی ہیں اور اس راستے سے بلوچ لبریشن فرنٹ کو اسلحہ ملتا ہے۔ بھارت نے 300 کمانڈوز افغانستان کے قندھار، جلال آباد اور کابل میں تعینات کئے ہیں تاکہ بھارتی شہریوں کی حفاظت کی جا سکے۔ حفاظت کی آڑ لے کر بھارت صوبہ بلوچستان میں تخریب کاری کرنا چاہتا ہے اور افغان حکومت بھارت کی آلہ کار بنی ہوئی ہے۔ بھارت پاکستان کا دشمن ہے اور اسے پاکستان کا وجود ، اس کی ترقی و خوشحالی، آزادی اور سلامتی گوارا نہیں۔ اس لیے وہ زبانی کلامی امن و آشتی کا راگ الاپنے کے باوجود پاکستان کی جڑیں کھوکھلی کرنے، اسے سیاسی و اقتصادی عدم استحکام سے دو چار کرنے اور اس کے دفاع کی مؤثر ضمانت ایٹمی پروگرام سے محروم کرنے کیلئے ریشہ دوانیوں میں مصروف ہے۔ دشمن کے وار سے بچنے کیلئے ہمیں نہ صرف اپنی آنکھیں کھلی رکھنی ہوں گی بلکہ ایسے ٹھوس اقدامات بھی کرنے ہوں گے جس سے بھارت کو منہ کی کھانے پڑے۔ فرقہ واریت زہر قاتل ہے جو پاکستان اور ہمارے معاشرے کو دیمک کی طرح چاٹ رہی ہے ۔ ہمارے ملک میں بدقسمتی سے مذہبی انتہا پسندی اور فرقہ واریت نے ہمیں ناقابلِ تلافی نقصان پہنچایا ہے۔ دہشت گردی فرقہ واریت اور انتہا پسندی پاکستانی قوم کیلئے ایک ناسور کی حیثیت رکھتے ہیں۔ایک خاص فرقہ کو دہشت گردی کا نشانہ بنانے کے واقعات سے صاف پتہ چلتاہے کہ پاکستان کوشیعہ سنی کی جنگ میں دھکیلنے کی گھناؤنی سازشیں کی جارہی ہیں۔ہم جس دین حق کے پیروکار ہیں اس نے انسانی جان کی حرمت کو سب سے اہم قرار دیا ہے اور ہم اس بات سے باخوبی واقف ہیں کہ اسلام نے ایک انسانی جان بچانے کو پوری انسانیت کی جان بچانے اور قتل کو پوری انسانیت کا قتل کے مترادف قرار دیا ہے یہ ہی وجہ ہے کہ اسلام میانہ روی اور ذمہ دارانہ طرز عمل کی بات و تلقین کرتا ہے۔فرقوں اور مذاہب کے درمیان ہونے والی جنگوں کے نتیجے میں لاکھوں انسان اپنی زندگی سے ہاتھ دھو چکے ہیں اور اگر ہم اسی طرح ایک ہی مذہب یا مختلف مذاہب کی تشریح و تفہیم کے مسئلہ پر جھگڑتے رہیں گے تو یہ بات افسوسناک ہوگی۔اگر ہم فرقہ واریت کی لعنت پر قابو پانا چاہتے ہیں تو ہمیں قرآنی پیغام کو اپنا حرزِ جاں بنانا ہو گا اور برداشت، اخوت اور رواداری کو اپناتے ہوئے جسد واحد کی طرح متحد ہونا ہو گا۔ آج ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم باہمی اختلافات کو فراموش کر کے اسلام دشمن طاقتوں کے خلاف متحد ہو جائیں۔

اسٹاک ایکسچینج میں مندی؛ ایک دن میں 145 ارب روپے ڈوب گئے

کراچی: پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں بدھ کے روز بھی مندی کے سبب 77 فیصد حصص قیمتیں گرگئیں اور سرمایہ کاروں کے 1 کھرب 43 ارب 97 کروڑ 42 لاکھ 66 ہزار 729 روپےڈوب گئے۔

اقتصادی محاذ پرغیریقینی صورتحال اور مختلف منفی افواہوں کے باعث پاکستان اسٹاک ایکس چینج میں بدھ کو بھی معمولی اتارچڑھاؤ کے بعد بڑی نوعیت کی مندی رونما ہوئی، جس سے انڈیکس کی 37000 پوائنٹس کی نفسیاتی حد بھی گرگئی۔ مندی کے سبب 77 فیصد حصص کی قیمتیں گرگئیں جب کہ سرمایہ کاروں کے 1 کھرب 43 ارب 97 کروڑ 42 لاکھ 66 ہزار 729 روپےڈوب گئے۔

ماہرین اسٹاک کا کہنا تھا کہ کاروبار کے دوران ایک موقع ہر36 پوائنٹس کی تیزی بھی رونما ہوئی لیکن مارکیٹ میں پھیلنے والی یہ افواہ کہ آئی ایم ایف نےحکومت کو ہدایت کی ہے کہ وہ بینکوں میں رکھے گئے اپنے ڈپازٹس کومرکزی بینک منتقل کرے کے سبب سیمنٹ بینکنگ سمیت دیگر شعبوں میں دھڑا دھڑ حصص کی فروخت شروع ہوئی جس سے مزکورہ تیزی 691 پوائنٹس کی مندی میں تبدیل، تاہم اختتامی لمحات میں نچلی قیمتوں پر خریداری سرگرمیاں بڑھنے سے مندی کی شدت میں کمی واقع ہوئی۔

نتیجتاً کاروبار کے اختتام پر کے ایس ای 100 انڈیکس 629 اشاریہ 38 پوائنٹس کی کمی سے 36752 اشاریہ 57 ہوگیا جب کہ کے ایس ای 30 انڈیکس287 اشاریہ 21 پوائنٹس کی کمی سے17407 اشاریہ 64، کے ایم آئی 30 انڈیکس 752 اشاریہ 61 پوائنٹس کی کمی سے60283 اشاریہ67 اور پی ایس ایکس کے ایم آئی انڈیکس 218 پوائنٹس کی کمی سے 17759 اشاریہ97 ہوگیا۔

کاروباری حجم منگل کی نسبت 23 اشاریہ49 فیصد زائد رہا اورمجموعی طور پر17 کروڑ 28 لاکھ 62 ہزار 800 حصص کے سودے ہوئے جب کہ کاروباری سرگرمیوں کا دائرہ کار 357 کمپنیوں کے حصص تک محدود رہا جن میں 68 کے بھاؤ میں اضافہ 274 کے داموں میں کمی اور15 کی قیمتوں میں استحکام رہا۔

جن کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں نمایاں اضافہ ہوا ان میں اوساکا پاکستان کے بھاؤ4 روپے86 پیسے بڑھ کر 146 روپے 98 پیسے اور کلوور پاکستان کے بھاؤ4 روپے 28 پیسے بڑھ کر 140 روپے66 پیسے ہوگئے، جب کہ یونی لیورفوڈز کے بھاؤ 299 روپے کم ہوکر6500 روپے اور نیسلے پاکستان کے بھاؤ 296 روپے 50 پیسے کم ہوکر7602 روپے 50 پیسے ہوگئے۔

بھارتی بحریہ کا جنگی ہیلی کاپٹر سمندر میں گر کر تباہ

نئی دلی: بھارتی بحریہ کا ایک جنگی ہیلی کاپٹر سمندر میں گر کر تباہ ہو گیا تاہم ہیلی کاپٹر میں سوار تینوں اہلکاروں نے چھلانگ لگا کر اپنی جانیں بچائیں۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق بھارتی بحریہ کا ہیلی کاپٹر بحیرہ عرب میں گر کر تباہ ہوگیا، ہیلی کاپٹر میں موجود پائلٹ نے عملے کے دو اراکین کے ساتھ پیرا شوٹ کی مدد سے چھلانگ لگا کر اپنی جان بچائی جنہیں سمندر سے بحفاظت نکال لیا گیا۔

بھارتی بحریہ کے ترجمان کا کہنا ہے کہ جنگی ہیلی کاپٹر بحریہ عرب میں تعینات تھا جس میں معمول کی پرواز کے دوران فنی خرابی پیدا ہوگئی، تینوں اہلکار بروقت چھلانگ لگا کر خود کو بچانے میں کامیاب رہے۔ ہیلی کاپٹر حادثے کی وجہ کا تعین کرنے کے لیے تفتیشی کمیٹی تشکیل دے دی گئی ہے۔

واضح رہے کہ بھارت کے فضائی اور بحری بیڑوں میں موجود طیاروں اور ہیلی کاپٹرز کی مسلسل گرتی کارکردگی اور پائلٹس کے غیر پیشہ ورانہ رویے کے باعث حادثات میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ مگ طیاروں کے گرنے کے بعد اب ہیلی کاپٹر بھی حادثے کا شکار ہو رہے ہیں۔

Google Analytics Alternative