- الإعلانات -

عمران خان! آپ کے گرد گھیرا تنگ ہو رہا ہے

گزشتہ سے پیوستہ

نون لیگ نے عام لوگوں کی فلاح و بہبود کی بجائے اور ملک میں انڈسٹری کو فعال کرنے کے بجائے میگا پروجیکٹس پر روپیہ خرچ کیا ۔ جس سے واپس منافع حاصل نہیں ہوا ۔ صرف شہر کے کچھ طبقات کو سہولت اور آرام ملا ۔ میگا پروجیکٹس کی بجائے ملک کی انڈسٹری کو فعال کیا جاتا تو زر مبادلہ ملتا ۔ جب تک ملک کی ایکسپورٹ نہیں بڑھتی ملک کے اندر زر مبادلہ یعنی سونا نہیں آتا ۔ جب تک آپ اپنے ملک کی اشیاء باہر ملکوں کو ایکسپورٹ نہیں کرتے ہیں تو آپ کو زر مبادلہ نہیں ملتا ہے ۔ جب انڈسٹری کام کرتی ہے تو ملک میں بے روزگاری ختم ہوتی ہے ۔ عوام میں قوت خرید بڑھتی ہے ۔ لوگ خوش حال ہوتے ہیں ۔ جب ملک میں قرضے میگا پروجیکٹس کی بجائے ترقیاتی پرجیکٹس پر خرچ ہوتے ہیں تو ملک ترقی کرتا ہے ۔ نواز شریف دور میں پاکستان میں ترقیاتی کاموں کے بجائے ایسے میگاپروجیکٹس لگائے گئے جس سے چند لوگوں کو تو آرام ضرور ہوا،ملک کی کثیر آبادی تک ان پروجیکٹس کے فوائد نہیں پہنچے ۔ نہ ہی ان پروجیکٹس سے واپس آمدنی ہوئی ۔ جس کی وجہ سے ملک کا خزانہ نہیں بھرا کہ جس سے قرضے واپس کیے جاتے ۔ ملک کی کپڑے کی انڈسٹری جو پاکستان کی بنیادی انڈسٹری ہے بیٹھ گئی ۔ پاکستان زرعی ملک ہے مگر زراعت پر دھیان نہیں دیا گیا ۔ صرف نمائشی کام کیے گئے یا اپنی مشہوری کے لیے صرف اعلانات کیے ۔ زرعی اشیاء ضرورت بھارت سے امپورٹ کی گئیں ۔ اس سے ملک کی زرعی اشیاء بھارت کی اشیاء کا مقابلہ نہیں کر سکیں ۔ اس سے کاشت کار بدحال ہوا ۔ آئی آئی ایم ایف اگر ایسی انڈسٹری کے لیے قرضے دیتی جس سے ملٹی پلایئیر کام کرتا واپس منافع ملتا ۔ ملک میں اشیا ء تیارکر کے باہر ایکسپورٹ کی جاتیں تو زر مبادلہ ملتا ۔ جس سے قرض اُترتا ۔ مگرمیٹرو بس اور گرین ٹرین اور موٹر وایز سے لوگ سفر تو کر رہے ہیں ۔ لوگوں کے لیے آسانیاں تو پیدا ہوگئیں ، مگر ملک کے خزانے میں کچھ بھی جمع نہیں ہوا ۔ یہ ہے کمال آئی ایم ایف کا ،کہ عوام کا معیار زندگی تو بڑھ گیا مگر ملک مقروض سے مقروض تر ہوتا گیا، بلکہ دیوالیہ ہونے کے قریب پہنچ گیا ۔ وزیر اعظم بننے سے پہلے آپ کے دماغ میں تھا کہ کرپشن کا پیسہ جو بیرون ملک پڑا ہوا ہے ۔ اسے واپس لا کر ملک کے خزانے میں جمع کریں گے اورسارے قرضے ادا ہو جائیں گے ۔ مگر کرپشن کا پیسہ واپس لینے والے اداروں کی قانونی پروسیجر کی وجہ سے دیر لگ رہی ہے ۔ اس لیے ابھی تک پیسہ ریکور نہیں ہوسکا ۔ آپ کے اسلامی ذہن اور ملک کو آگے بڑھانے کی سوچ کے خلاف گریٹ گیم کے اہلکار، جو پاکستان کو نہ ایٹمی اور نہ ہی اسلامی اور نہ ہی ترقی کرتا ہوا دیکھانا چاہتے ہیں ، یہ لوگ آپ کو کامیاب نہیں ہونے دیں ۔ آپ کو معلوم ہونا چاہیے کہ مقامی اوع اسلام دشمن بیرونی طاقتوں نے بھی آپ کے گرد گیرا تنگ کر دیا ہے ۔ اس لئے آپ کو انقلابی قدم اُٹھانے پڑیں گے ۔ سب سے پہلے ملک سے لوٹا ہوا پیسہ واپس لانے کےلئے ملک میں کوئی خاص انتظام کریں ۔ یہ چائنا ٹاءپ یا سعودی ٹاءپ نظام بھی ہو سکتا ہے ۔ اپنے اِرد گرد سے پیپلز پارٹی اور نون لیگ کے لوگوں کو ہٹا کرپیٰ ٹی آئی کے نظریاتی لوگ جو آپ کے نظریات کے قریب ترین ہیں ،کو لگانے چاہیے ۔ آئی ایم ایف سے آئے ہوئے لوگوں کو فوراً ہٹا کر ملک میں موجود ایسے ٹیکنوکریٹ کو لگائیں جو پاکستان سے مخلص ہیں ۔ اخباری خبرکے مطابق آپ کے چین کے دورے پر کڑوروں روپے خرچ ہوئے ہیں ۔ اگر یہ خبر صحیح ہے تو اس کی اصلاح ہونی چاہیے ۔ ملک کے صدر صاحب کے لیے خبر لگی کہ مشاعرے پر لاکھوں خرچ کیے ،کیا یہ کفایت شعاری میں آتا ہے ۔ اخبار نے فوٹو کے ساتھ خبر لگائی کہ پابندی کے باوجود پنجاب حکومت کے اہلکاروں نے حکومتی خرچے پر افطار ڈنر کا انتظام کیا ۔ ہر حکومتی ذمہ دار کو کفایت شعاری سے کام لینا چاہیے ۔ ملک میں کوئی بھی میگا پروجیکٹ شروع کرنے سے پہلے تحقیق کرنی چاہیے کہ اس سے عوام کوکتنا فاہدہ ہو گا ۔ جیسے سستی بجلی اور آبی ذخاہر کے لیے ڈیم کا بننا ۔ ملک میں انڈسٹری کو فوراً اپنے پیروں پر کھڑا کرنے کے اقدامات کیے جائیں تاکہ انڈسٹری کی پیداوار باہر ملکوں کو ایکسپورٹ کی جائیں اور ملک کو زر مبادلہ ملے ۔ ملک کے سارے سیاسی لیڈروں ، فوج کے آفیسروں ، بیوروکریٹس ، سرمایہ داروں ، جاگیرداروں اور کھاتے پیتے لوگوں سے ملک کے لیے قربانی مانگنی چاہیے ۔ آئی ایم ایف سے مزید قرضے لینے کے بجائے پرانے قرضے ادا کرنے کے لیے مناسب وقت مانگنا چاہیے اور کرپٹ لوگوں سے کرپشن کا پیسا واپس لے کر قرضے ادا کرنا چاہیے ۔ جماعت اسلامی کی طرف سے سپریم کورٹ میں ۶۳۴ آف شور کمپنیوں میں نام آنے والوں کے خلاف درخواست داہر ہے ۔ اس پر فوراً کاروائی شروع کر کے سب سے ناجائز دولت واپس لے کر قرضے ادا کیے جائیں ۔ صاحبو!ویسے تو نظر آتا ہے کہ ملک کی دو بڑی پارٹیوں ،جو چالیس سال سے بدل بدل کے حکمرانی کرتی رہی ہیں ملک کےلئے کچھ بھی نہیں کیا ۔ عوام کے حالات ویسے کے ویسے ہی ہیں ۔ عوام پریشانی، مہنگائی ، بے روز گاری ، لا اینڈ آڈر،بجلی گیس کی لوڈ شیدنگ اور دہشت گردی سے تنگ ہیں ۔ دکھوں کے مارے لوگوں نے پی ٹی آئی کے منشور کو سامنے رکھتے ہوئے تبدیلی کے لیے ووٹ دیا تھا ۔ نئی پارٹی اقتدار میں آئی ہے حالات پہلے سے زیادہ خراب ہو گئے ۔ عمران خان ذاتی طور پر تو ٹھیک ہیں ۔ مگر پیپلز پارٹی اور نون لیگ کے لوگ اپنے ساتھ ملا کر مدینہ کی اسلامی فلاحی ریاست بنانا چاہتے ہیں جو ناممکن ہے ۔ پہلے دو پارٹیوں کی طرح تبدیلی لانے اور نیا پاکستان بنانے کی نوید سنانے والی ،پی ٹی آئی بھی عوام کے مسائل حل نہیں کر سکے گی ۔ لہٰذا اب آنے والے الیکشن میں عوام کوایسی پارٹی کو سامنے لانا چاہیے جو پارٹی اپنے آپ کو کرپشن فری ثابت کر چکی ہے جس کی سند سپریم کورٹ نے بھی دی ۔ جس کے اندر پڑھے لکھے ، ایثار سے لبریز،کفایت شعار لوگ کثیر تعداد میں موجودہیں ۔ اس پارٹی کے لوگ سیاست کو عبادت سمجھتے ہیں ۔ اس پارٹی کے لیڈروں کو عوام کی خدمت کا اجر اپنے رب سے چاہیے ۔ جو صحیح معنوں میں مدینہ کی فلاحی اسلامی ریاست قائم کرنے کے قابل بھی ہیں ۔ یہ پارٹی اسلامی کی فلاحی ریاست قائم کرنے کےلئے پچھلی پون صدی سے تیاری کر رہی ہے ۔ یہ پارٹی حقیقی معنوں میں علامہ اقبال;231; کے خوابوں اور قائد اعظم;231; کے اسلامی وژن اور دو قومی نظریہ کی جان نشین ہے ۔ اس نے اس کام کےلئے ہوم ورک بھی مکمل کیا ہوا ہے،بس عوام کی رائے کی منتظر ہے ۔ دیکھتے ہیں کہ آنے والے الیکشن میں پاکستان کے عوام ایسی پارٹی کو اپنی فلاح کےلئے منتخب کرتی ہے;238;اللہ ہمارے ملک کا حامی و ناصر ہو ۔ آمین ۔