- الإعلانات -

ستمبر، معرکہ حق وباطل

ڈی جی آئی اےس پی آر کی جانب سے 6ستمبر ےوم دفاع سے متعلق پرومو جاری کر دےا گےا ہے ۔ آئی اےس پی آر کی جانب سے سماجی رابطے کی وےب ساءٹ ٹوءٹر جس مےں لکھا گےا ہے کہ آئےں ہر شہےد کے گھر چلےں ،ہر شہےد کو ےاد رکھا جائے ٹوءٹر پر شئےر کئے گئے اس پرومو وےڈےو مےں آئی اےس پی آر کی جانب سے ’’آئےں چلےں شہےد کے گھر،اور کشمےر بنے گا پاکستان‘‘بےش ٹےگ بھی استعمال کئے گئے ہےں ۔ ترجمان پاک فوج ڈی جی اےس پی آر مےجر جنرل آصف غفور نے کہا ہے کہ ےوم دفاع6ستمبر منفرد انداز مےں مناےا جائے گا ۔ قوم کے نمائندے ہر شہےد کے گھر جائےں گے اور وطن کےلئے جانےں دےنے والے شہدا کے لواحقےن کو سلام پےش کرےں گے ۔ ےوم دفاع کو منفرد انداز مےں منانے کا فےصلہ ،ہر محب وطن پاکستانی کے دل کی آواز ہے اور وطن عزےز کی سالمےت کےلئے جان نچھاور کرنے والے بجا طور پر دلی خراج عقےدت کے حقدارہےں ۔ معرکہ ستمبر پاکستان کی تارےخ کا عدےم المثال ،روشن اور عہد آفرےں باب ہے ۔ زندہ قومےں ان واقعات کی ےاد تازہ کرنے کی تقارےب جنہوں نے انہےں حےات تازہ عطا کی ہو بڑے خلوص واحترام ،تزک و اختشام سے مناتی ہےں ۔ تارےخ پاکستان مےں دو واقعات اےسے گزرے ہےں جنہوں نے ہمےں فی الواقع حےات تازہ عطا کی تھی ۔ اےک ےوم آزادی اور دوسرا ستمبر1965ء کی پاک بھارت جنگ ،چونکہ آج پوری قوم ہی زندگی کی حرارت سے محروم ہو رہی ہے اس لئے ان حےات بخش واقعات کی ان کے شا ےان شان ےاد منانا تو رہا اےک طرف رفتہ رفتہ انہےں حافظے سے ہی محو کئے جا رہی ہے ۔ ان واقعات مےں مثالی جذبوں اور اتحاد و اخوت کی فضا کو دہرانے کا مقصد ان جذبوں کو بےدار کرنے کی سعی کرنا ہے جن کے زےر اثر پوری قوم اےک ہو گئی تھی جس نے وطن عزےز مےں امتےازات کی تخصےص کا خاتمہ کر دےا تھا ۔ زندہ قوموں کی اےک پہچان ےہ بھی ہے کہ وہ اپنے بہادروں کی قربانےوں کو اپنے لئے مشعل راہ قرار دے کر انہےں ہمےشہ ےاد اور زندہ رکھتی ہےں اور مستقبل کی نسل کےلئے ان کے نشانات اور راستوں کا تعےن کرنے کے ساتھ ساتھ ان مےں جذبہ حرےت و عسکرےت بےدار رکھتی ہےں ۔ آج ضرورت ہے ان شہدا کی قربانےوں کی ےاد منانے کی ،انہےں دہرانے کی جنہوں نے وطن عزےز کی سرزمےن کےلئے اپنا لہو بکھےر کر اسے دنےا مےں ہمےشہ کےلئے سر بلند رکھا اور پاکستان کی آن پر قربان ہو کر ہمےں آزاد وطن مےں آزادی کا سانس لےنے کے قابل بناےا ۔ 6ستمبر1965ء کا ہی اےک دن تھا جب پوری قوم وطن عزےز کی آن پر ا;203; کے نام پر ،فرد واحد کی طرح اےمان اور اپنے منصفانہ مقاصد کےلئے ےک جان ہو گئی ۔ 6ستمبر ہی وہ دن تھا جب بھارت نے اعلان جنگ کئے بغےر تےن اطراف سے لاہور پر حملہ کر دےا ۔ 8ستمبر کو بھارت نے جموں سےکٹر پر حملہ کر کے تےن محاذ کھول دئیے اس کے اچانک حملے کا مقصد لاہور اور سےالکوٹ پر قبضہ کرنا تھا لےکن پاک فوج کے جےالوں نے ا;203; کی نصرت اور عوام کی دعاءوں سے ان کے ےہ سارے منصوبے خاک مےں ملا دیے اور اسے عبرت ناک شکست سے دوچار کر کے جنگ کا پانسہ پلٹ دےا ۔ 12ستمبر کو سےالکوٹ چونڈہ کے محاذ پر ٹےنکوں کی زبردست لڑائی ہوئی جس نے دنےا بھر کے فوجی مبصروں کو دوسری جنگ عظےم کے زبردست معرکوں کی ےاد دلا دی ۔ بھارت کے پہلے معرکے مےں 45ٹےنک تباہ ہوئے اور 13ستمبر کو مزےد50ٹےنک تباہ کئے گئے ۔ اس اعتبار سے دنےا بھر کی اقوام نے پاکستان کی مسلح افوج کا لوہا مان لےا ۔ پاکستان کی بری،ہوائی اور بحری افواج نے عوام کے تعاون سے انتہائی جراَت اور بہادری کے ساتھ اپنے سے دس گنا بڑی طاقت کا مقابلہ کےا اور نہ صرف اس کے ہزاروں مربع مےل رقبے پر قبضہ کےا بلکہ اس کی عسکری طاقت کو بھی بہت نقصان سے دوچار کےا ۔ مضمون کی طوالت کے ڈر اور اختصار کو مد نظر رکھتے ہوئے غےر ملکی مبصرےن کے جنگ پر صرف دو تبصرے شامل کرنے پر اکتفا کےا ہے تاکہ قارئےن 65ء کی جنگ مےں پاک فوج کی برتری کا صحےح ادراک کر سکےں ۔ بی بی سی کے ممتاز مبصر چارلس ڈگلس ہوم نے کہا کہ ’’ اگر سپاہی اور ےونٹ سے مقابلے مےں ےونٹ رکھ کر موازنہ کےا جائے تو بھی ےہ ماننا پڑتا ہے کہ پاکستان کی فوج قلےل ہونے کے باوجود بھارتی فوج کے مقابلے مےں برطانےہ سے تربےت اور کارکردگی کا اعلیٰ معےار پےش کرتی ہے ‘‘ ۔ امرےکہ براڈ کاسٹنگ کارپورےشن کے آرتھر مالونی نے اپنی تقرےر مےں کہا ’’ بھارت اپنی ہمہ گےر فتوحات کے جو دعوے کر رہا ہے مجھے ان فتوحات کا کہےں سراغ نہےں ملا ،البتہ جو کچھ مےں دےکھ رہا ہوں وہ بس اتنا ہی ہے کہ بھارتی فوجوں ،ٹےنکوں اور دےگر جنگی سازوسامان کی اےک کثےر مقدار بڑی تےزی سے محاذ کی جانب بہتی جا رہی ہے ،اب سوال ےہ پےدا ہوتا ہے کہ اگر بھارتی فوج اےسی ہی سورما ہے تو وہ اپنے سازو سامان کے بل بوتے پر پاکستانی سرحدوں کی جانب تےز بہاءو روکنے سے کےوں قاصر ہے‘‘ ۔ معزز قارئےن 65ء کی جنگ کے معرکہ کارزار مےں دشمن کے مقابلے مےں تعداد کے لحاظ سے کم ہونے کے باوجود ہماری بہادر افواج نے بری، بحری اور فضائی معرکوں مےں حملہ آور کو نہ صرف دندان شکن جواب دیے بلکہ ذلت آمےز شکست سے دوچار کےا ۔ بقاء کی اس جنگ مےں اتحاد، قربانی ،اخوت اور اعلیٰ حوصلے کے وہ مظاہر دےکھنے کو ملے جنہوں نے ثابت کےا کہ جذبہ جہاد سے سرشار قوم کو بڑی سے بڑی قوت کے سامنے جھکاےا نہےں جا سکتا ۔ وہ کےا وجہ تھی کہ ہماری بہادر افواج نے اپنے سے کئی گنا بڑے دشمن کو شکست دےکر ہزےمت و شرمندگی سے دوچار کےا ۔ اس کی بڑی وجہ ہماری بہادر افواج کی عدےم المثال شجاعت ،جانبازی اور دس کروڑ عوام کی دعا کا شامل حال ہونا تھا اسیلیے نصرت خداوندی ہر محاذ پر ان کے ساتھ تھی ۔ ہماری افواج کا مقصد کشور کشائی نہےں وطن عزےز کی سرحدوں کی حفاظت کرنا تھا ۔ ےہی وجہ ہے کہ انہوں نے مےدانوں ،فضاءوں اور پانےوں مےں جراَت و شجاعت کی اےسی اےسی داستانےں رقم کی ہےں جن کا ذکر غےر ملکی فوجی مبصرےن نے بھی کےا ۔ ان کارناموں کا ےہ گلدستہ ہمےشہ کےلئے پاکستان کی مسلح افواج کے وقار ،اعلیٰ پےشہ وارانہ مہارت ،جوش شہادت سے سرشارجذبوں کے نقوش اور سنہری اعمال پر مشتمل اےک تارےخ ہے ۔ ےہ جانباز دشمن پر ساعقہ بن کر گرتے اور کاری ضرب لگاتے ۔ ہماری دلےر افواج نے بھارتی جارحےت کا سر کچل کر اس کے اپنے علاقے کو ہی مےدان جنگ مےں تبدےل کر دےا ۔ اس معرکے مےں وطن عزےز کے عام شہری سے لےکر تمام ادےب،شاعر،گلوکار،سےاسی قائدےن،موسےقار ،آرٹسٹ،اساتذہ،مزدور ،کسان صنعت کار ،شہری ڈےفنس کے رضا کاراور پولےس کے جوان اےثار اور قربانی کا پےکر بن گئے ۔ ےہ اتحاد و اتفاق کا وہ بے نظےر مظاہرہ تھا جس نے پوری قوم کے دل مےں جذبہ حب الوطنی کی نئی روح پھونک دی ۔ 6ستمبر کے دن ہم اپنے ان جانباز غازےوں ،شہےدوں کو عقےدت بھرا سلام پےش کرتے ہےں جنہوں نے اپنی جانوں کا نذرانہ پےش کر کے وطن عزےز کی جغرافےائی سرحدوں کی پاسبانی اور حفاظت کےلئے آنے والی نسلوں کےلئے درخشاں اور روشن مثالےں قائم کےں ۔ 6ستمبر ہماری قومی حمےت کے موثر دفاع کے عزم کا بھر پور اظہار ہے ۔ ےہ بجا ہے کہ جنگ تباہی و ہلاکت ہے ،کوئی صاحب ہوش جنگ کی حماءت نہےں کر سکتا ۔ ہر شخص اور ہر ملک امن کا خواہاں ہے ۔ بھارت کا وزےر اعظم نرےندر مودی راشٹرےہ سےوک سنگھ کا بنےادی ممبر اور اکھنڈ بھارت کا داعی ہے ۔ اےک طوےل مدت سے پاکستانی سرحدوں پر بغےر وجہ کے روزانہ گولہ باری اس کا معمول ہے جس سے ان گنت پاکستانی شہےد اور زخمی ہوتے ہےں ان کی املاک مکان تباہ اور موےشی ہلاک ہو جاتے ہےں ۔ ان کا ہدف پاک چےن راہداری منصوبے کا خاتمہ ہے ۔ دوسری طرف اس نے مقبوضہ کشمےر مےں کشمےروں کا قتل عام شروع کر رکھا ہے ۔ اس حوالے سے ہم آج بھی اپنے خارجی خطرات سے چشم پوشی نہےں کر سکتے ۔ گزشتہ چند دہائےوں سے وطن عزےز پاکستان دہشت گردی کی لپےٹ مےں ہے ۔ اس دوران لاکھوں قےمتی جانےں ضائع ہو چکی ہےں ۔ ا;203; تعالیٰ کا بے انتہا احسان ہے کہ پاکستانی افواج ان دہشت گردوں سے آہنی ہاتھوں سے نمٹ رہی ہےں اور دہشت گردوں کی کمر توڑ کر رکھ دی ہے ۔ ہم اس حوالے سے بھی پاک فوج کو 6ستمبر کے دن سلام عقےدت پےش کرتے ہےں ۔ بھارت کے تمام تر مذموم عزائم اور زبردست جنگی تےارےوں کے باوجود 6ستمبر کا دن ہماری قوم کے اس عزم کا آئےنہ دار ہے کہ قوم دفاع وطن کے مقدس فرےضے سے ہر گز غافل نہےں ہے ۔ بھارت جس پاکستان کو اپنے توسےع پسندانہ عزائم کی تکمےل مےں رکاوٹ سمجھتا ہے وہ اسے ختم کرنے مےں ہر گز کامےاب نہ ہو گا ۔ (انشاء ا;203;)