- الإعلانات -

ذخیرہ اندوزی اورسمگلنگ کے خلاف موثراقدامات کی ہدایت

اس وقت ملک میں سب سے اہم ترین ایشو مہنگائی کو کنٹرول کرنا ہے اس حوالے سے وزیراعظم عمران خان نے ذاتی دلچسپی لیتے ہوئے ہدایات جاری کی ہیں کہ ذخیرہ اندوزوں اور گرانفروشوں کیخلاف آپریشن کیا جائے ۔ نیز انہوں نے یہ بھی واضح کیا کہ جو افسران ان کیخلاف کارروائی نہیں کرینگے ان کیخلاف کارروائی کی جائےگی کیونکہ ماضی میں یہ چیز دیکھنے میں آئی ہے کہ ذخیرہ اندوزوں کیخلاف کوئی خاطر خواہ کارروائی نہیں کی گئی جس کی وجہ سے ملک کو مہنگائی نے گھیرے میں لے لیا، بات دراصل یہ ہے کہ جب بھی کسی بھی چیز کا ذخیرہ کرلیا جائے تو وہ مارکیٹ سے غائب ہو جاتی ہے اس کی طلب بڑھنے پر جب رسد کی جاتی ہے تو ذخیرہ اندوز منہ مانگے دام وصول کرتا ہے ۔ اسی وجہ سے اشیاء خوردونوش کی قیمتیں آسمان سے جالگتی ہیں ۔ چونکہ وزیراعظم عمران خان ایک کھلے ذہن اور دل کے مالک وزیراعظم ہیں انہوں نے یہ بات بھی واضح طورپر کہی تھی کہ آٹے جیسے بحران میں کچھ غلطیاں حکومت کی بھی ہیں انہی اقدامات پر کام کرتے ہوئے وزیراعظم نے سخت ایکشن لیا ہے ۔ ملک میں اگر وزیراعظم کی ہدایات کے مطابق ذخیرہ اندوزوں کیخلاف گھیرا تنگ کردیا جاتا ہے تو پھر آٹا، چینی سمیت ہر چیز نہ صرف ارزاں قیمت پر ملے گی بلکہ وافر مقدار میں بھی موجود ہوگی ۔ اس سلسلے میں متعلقہ ادارے متحرک ہوچکے ہیں ۔ ہم یہاں حکومت کو یہ بھی کہیں گے کہ صرف ذخیرہ اندوزوں سے مال ہی نہ برآمد کیا جائے بلکہ انہیں انصاف کے کٹہرے میں بھی لاکر کھڑا کیا جائے تاکہ آئندہ کوئی ذخیرہ اندوزی نہ کرسکے ۔ چونکہ یہ حکومت کا بنیادی فرض ہے کہ وہ عوام کو سہولیات فراہم کرے ۔ مہنگائی کو کنٹرول اور امن و امان قائم کرے ۔ اس سلسلے میں اب حکومت متحرک ہوچکی ہے ۔ وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت اجلاس ہوا جس میں اشیا ضروریہ سمیت دیگر اشیا کی اسمگلنگ کےخلاف فوری کارروائی اور کریک ڈاون کا حکم دیتے ہوئے ;200;ئندہ 48 گھنٹوں میں اقدامات اور جامع لاءحہ عمل پر مبنی رپورٹ طلب کرلی گئی ہے ۔ وزیراعظم نے وزارتِ داخلہ، قانون نافذ کرنے والے صوبائی، وفاقی اداروں اور ایف بی ;200;ر کو ہدایت جاری کرتے ہوئے کہا کہ صوبائی حکومتیں مشترکہ طور پر اسمگلنگ کے خلاف فوری کارروائی کریں ، اسمگلنگ قیمتوں میں اضافے کی بڑی وجہ ہے، عام ;200;دمی تکالیف کا شکار ہوتا ہے جو کسی صورت قبول نہیں ۔ وزیر اعظم نے وزارت داخلہ کو ہدایت جاری کی ہیں کہ قلیل المدت، میڈیم ٹرم اور طویل المدت اقدامات شروع کریں ۔ وزیراعظم نے کہا کہ ;200;ئی بی، ;200;ئی ایس ;200;ئی اور ایف ;200;ئی اے اسمگلنگ کے خلاف موثر کریک ڈاون کی مانیٹرنگ کرے، اداروں کو رپورٹ باقاعدگی سے وزیراعظم کو پیش کرنے کی ہدایت بھی کی گئی ہے ۔ وزیر اعظم کو مغربی سرحدوں پر بارڈر مارکیٹس کے قیام میں پیش رفت کی رپورٹ پربریفنگ بھی دی گئی ۔ اس موقع پر وزیراعظم نے کہا کہ بلوچستان میں بارڈر مارکیٹس کے قیام پر پیشرفت کی رفتار کو تیز کیا جائے، اسمگلنگ کی وجہ سے ملکی معیشت کو اربوں روپے کا نقصان پہنچ رہا ہے، اسمگلنگ کی موثر روک تھام قومی مفاد کا معاملہ ہے، کسی قسم کی غفلت برداشت نہیں کی جائیگی، ایرانی تیل کے حوالے سے جامع پالیسی تشکیل دی جائے اور اسمگلنگ کی روک تھام کےلئے ٹیکنالوجی کو بروئے کار لایا جائے ۔ وزیراعظم نے بالکل درست کہا کہ اسمگلنگ ایک ایسی لعنت ہے جس کی وجہ سے ان تمام حالات کا سامنا کرنا پڑتا ہے اس کو روکنے کیلئے بھی اقدامات کیے جارہے ہیں ۔ سرحدوں پر اس حوالے سے سخت چیکنگ کا نظام بھی راءج کیا جارہا ہے ۔ نیز بہتر یہ ہے کہ سمگل شدہ مال کو وہاں ہی روک دیا جائے جہاں سے اس کا سفر شروع ہوتا ہے ۔ یعنی کہ بڑے بڑے گودام جہاں پر لاکھوں ٹنوں من آٹا، چینی اور دیگر اشیاء ڈمپ کرکے رکھی ہوئی ہیں وہاں چھاپے مار کر وہ مال برآمد کیا جائے ۔ نیز ایرانی تیل کے حوالے سے جو بات کی گئی ہے اس میں بھی کوئی دوسری رائے نہیں خصوصی طورپر بلوچستان اور گوادر میں یہ سرعام فروخت ہورہا ہے ۔ اندرون ملک بھی اس کی ترسیل جاری ہے اس کو بھی روکنے کی ضرورت ہے کیونکہ غیر قانونی منی پٹرول پمپ جو سمگل شدہ ایرانی تیل فروخت کرتے ہیں وہ کسی وقت بھی خدانخواستہ کسی بڑے سانحے کا سبب بن سکتے ہیں ۔

سانحہ کیماڑی پرحکومتی بے حسی

کراچی کے علاقے کیماڑی میں زہریلی گیس سے مزید 6 افراد جاں بحق ہوگئے جسکے بعد ہلا کتوں کی تعداد 14 تک پہنچ گئی ہے،جبکہ گیس متاثرہ افراد کی تعداد 500 سے تجاویز کر گئی ہے ۔ زہریلی گیس سے دیگر قریبی علاقے بھی متاثر ہو رہے ہیں ۔ وزیر اعظم کی سائنس اینڈ ٹیکنالوجی ٹاسک فورس کے سربراہ ڈاکٹر عطا الرحمان نے تصدیق کی ہے کہ کیماڑی میں کئی لوگوں کی موت سویا بین کے مرکبات سے پھیلنے والی گیس سے ہوئی ۔ ہوا میں آلودگی کراچی بندرگاہ پر لنگر انداز بحری جہاز سے سویابین کی آف لوڈنگ سے پیدا ہورہی تھی اور یہ اپ لوڈنگ اب رکوادی گئی ہے ۔ متاثرہ علاقے میں لوگ ماسک استعمال کریں ،متاثرہ علاقے میں ہواکو صاف ہونے میں چار پانچ دن لگیں گے ۔ اطلاعات یہ بھی ہیں کہ امریکی بحری جہاز کووہاں کردیاگیاہے تاہم حکومتی سطح پر علاقوں میں کوئی اسپرے کیا گیا اور نہ ہی مکینوں کو احتیاطی تدابیر سے آگاہ کیا گیا ۔ متاثرہ علاقوں میں کاروباربھی بندہے جسکی وجہ سے کروڑ وں روپے کا نقصان ہورہاہے ۔ متاثرہ علاقوں میں اسکولز بند پڑے ہیں ، مکین خوف و ہراس کی وجہ سے گھروں میں قید ہوگئے ہیں ۔ کیماڑی میں گیس کے پراسرار اخراج سے کئی قیمتی جانوں کے ضیاع پر تشویش ظاہر کی جارہی ہے، گیس اخراج سے اموات نے پورے شہرکو ہلا کر رکھ دیا ہے، متاثرین کے گھروں میں قیامت برپا ہے ۔ گیس کا اثر کیماڑی سے نکل کر پورے شہر تک پھیل گیا ۔ گیس اخراج کی روک تھام کیلئے وفاقی اورصوبائی حکومتوں نے تاحال کچھ نہیں کیا جس سے صورتحال بد سے بدترہوتی گئی ۔ افسوس کامقام ہے کہ حکومت پتہ نہیں لگاسکی ہے کہ گیس کہاں سے خارج ہو ئی ۔ حفاظتی انتظامات میں وفاقی اورصوبائی حکومتیں مکمل طورپر ناکام رہیں ۔ عوام کا کوئی پرسان حال نہیں ہے ۔ لہٰذاوفاقی اورصوبائی حکومتیں فی الفورمتاثرہ خاندانوں کو مالی امداد کے ساتھ ساتھ صورتحال کو کنٹرول کرنے کیلئے جنگی بنیادوں پر حفاظتی انتظامات کو یقینی بنائیں تاکہ مزید اموات سے بچاجاسکے ۔

پاکستان کا کروز میزائل رعد ٹو کا کامیاب تجربہ

پاکستان نے فضا سے مارکر نے والے کروز میزائل رعد دوئم کا کامیاب تجربہ کیا ہے، جدیدٹیکنالوجی سے لیس یہ کروز میزائل 600کلومیٹر تک اپنے ہدف کو نشانہ بنا سکتا ہے، رعد دوئم زمین اور سمندر میں بھی ہدف بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے، ہتھیاروں کا نظام جدید ترین رہنمائی اور نیویگیشن سسٹم سے لیس ہے، کامیاب تجربہ سے پاکستان نے ایک اہم سنگ میل عبور کر لیا پاکستان کی دفاعی صلاحیت بڑھ گئی ہے ۔ پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ کے مطابق کروز میزائل رعد دوئم کے کامیاب تجربہ کا مشاہدہ ڈائریکٹر جنرل اسٹرٹیجک پلانز ڈویژن لیفٹیننٹ جنرل ندیم ذکی منج، چیئرمین نیسکام ڈاکٹر نبیل حیات ملک اسٹرٹیجک پلانز ڈویژن ، سٹرٹیجک فورسز اور اسٹرٹیجک آرگنائزیشن کے سینئر افسران نے کیا ۔ صدر، وزیراعظم ، چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی جنرل ندیم رضا، پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ، پاک فضائیہ کے سربراہ ایئر چیف مارشل مجاہد انور خان، پاک بحریہ کے سربراہ ایڈمرل ظفر محمود عباسی نے سائنسدانوں اور انجینئرز کو رعدم دوئم کے کروز میزائل کے کامیاب تجربہ پر مبارکباد پیش کی ۔ کروز میزائل رعد ٹو پاکستان کے دفاعی نظام میں ایک اور شاہکار کا اضافہ ہے ۔ پاکستان اسلحہ کے ڈھیر لگانے کے بجائے اسلحہ کے اعلیٰ معیار اور افواج کی بہترین تربیت ومہارت پر یقین رکھتا ہے ۔ پاکستان کبھی بھی اسلحہ کی دوڑ میں شامل نہیں رہا جبکہ بھارت دنیا میں جہاں سے بھی ممکن ہوا اسلحہ خرید کر انبار لگا رہا ہے ۔ پاکستان کو موذی دشمن کے باعث اپنے دفاع پر خصوصی توجہ مبذول کرنا پڑتی ہے ۔ کروز میزائل رعدٹو کے تجربے سے پاکستان کا دفاع مزید مضبوط ہوا ہے ۔ پاکستانی سائنسدانوں اور تکنیکی ماہرین نے ایک مرتبہ پھر اپنی بے مثال صلاحیتوں کا مظاہرہ کیا ۔ ہ میں پاکستان کے دفاع کو ناقابل تسخیر بنانے والے وطن کے بیٹوں پر فخر ہے ۔ پاکستان کا دفاع سلامتی ہر چیز پر مقدم ہے ۔