- الإعلانات -

وفاق سے صوبہ سندھ تک کورونا سیاست

چھلے کئی ماہ سے امریکاو یورپ سمیت طاقتورین اور مشرقی وسطی وایشیائی بہت سے کمزور اورقریب لاغردنیا کے 199سے زائد ممالک میں تباہی و برباد ی کے پنجے گاڑتا تیزی سے آگے بڑھتا کرونا وائرس زمین کے زروں اور اِنسانوں کے عصاب پر محورقص ہے ۔ اِس ناگہانی آفت کے نازل ہوتے ہی دنیا کا سارا کاروبارزندگی ٹھپ ہوگیاہے ۔ عالمِ اِنسانیت اپنے اَن دیکھے اِس دُشمن سے چھپتی پھررہی ہے ۔ جبکہ ایسے میں ہمارے یہاں کرونا وبا سے ہونے والی اموات اور تباہی کو جانتے ہوئے عوام تو عوام بلکہ وفاق سے صوبوں اور بالخصوص صوبے سندھ تک حکمران اور سیاستدان کوئی بھی سنجیدگی کا اُس طرح سے مظاہر ہ نہیں کررہاہے ۔ آج جس طرح دنیا کے دیگر ممالک میں کیا جارہاہے ۔ افسوس کا مقام ہے کہ ہمارے یہاں جہاں ایک طرف لاک ڈاوَن سے خاءف اینٹی کرونا عوام، مذہبی پیشوا ، تاجر،مزدور،سیاستدان اور وفاقی حکومت ہے ۔ تو وہیں دوسری جانب پروکرونا پر جاری لاک ڈاوَن کے عمل پر سختی سے طول دیتاہماراصوبہ سندھ اور سندھ حکومت بھی ہے ۔ فی الحال جو وفاق کی سُنے بغیر صوبے میں آنے والے دِنوں میں کرونا وبا کی سنگینی سے عوام کو بچانے کے لئے لاک ڈاوَن میں نہ نرمی کو تیار ہے اور نہ ہی کئی ماہ تک لاک ڈاوَن کو ختم کرنے کا کوئی ادارہ رکھتی ہے ۔ جیسا کہ نظر آرہاہے کہ سندھ حکومت اپنے کئی سیاسی مقاصد کے حصول کے ساتھ ساتھ کراچی سمیت سندھ کے عوام کو بھی کرونا وبا سے محفوظ رکھنا چاہتی ہے ۔ مگرآج اِس کے اِس عمل کو بھی بہت سے ناراض سیاست دان کچھ اور انداز سے دیکھ رہے ہیں ۔ !!گویا کہ موجودہ منظر میں اینٹی کرونا وبا او رپروکرونا وباسوچ کے حامل دوگرپس بن گئے ہیں ۔ آج اِس لحاظ سے ہماری حکومتوں میں وفاق سے صوبے سندھ تک کرونا سیاست عروج پر دیکھی جاسکتی ہے ۔ اَب دیکھتے ہیں کہ کرونا وبا سے موجودہ گھمبیرہوتی صُورتِ حال میں وفاق اور صوبہ سندھ کے درمیان ایڑیوں پر سیاسی قد اُونچاکرنے والی کھینچاتانی کا سیاسی رن کہاں جاکر ختم ہوگا ;238; یہی نہیں بلکہ قبل ازوقت یہ اندازہ بھی نہیں لگایا جاسکتا ہے کہ کرونا وبا کے تھمنے یا گزرنے کے بعد وفاق اور صوبے میں کرونا وائرس کی تباہی سے زیادہ ہونے والی سماجی، مذہبی ،سیاسی ، معاشی اور اخلاقی تباہ کاریاں کیا رنگ لائیں گی;238; ابھی شاید بعد کے المناک نتاءج اور اِن سے پیدا ہونے والے مسائل و پریشانیوں سے متعلق کسی نے نہیں سوچا ہے ۔ آج جس نیت سے بھی سندھ حکومت نے صوبے میں 26 فروری 2020 کو نمودار ہونے والے پہلے کیس کے بعد اول روز سے ہی کراچی سمیت سندھ بھر میں لاک ڈاوَن کی حکمتِ عملی کا مظاہرہ کیا ۔ جس میں وقتاََفوقتاََ سختی اور نرمی دونوں ہی رویئے اپنائے رکھے ۔ اِس سے اِسے اور صوبے کے عوام کو کتنا اور کیا ;238; اور کیسے مقاصد حاصل ہوئے ;238; ابھی ہ میں بس اپنے دل پر ہاتھ رکھ کر انتظار کرنا ہوگا ۔ کیوں کہ آنے والے دِنوں ، ہفتوں ، مہینوں اور سالوں میں سب کچھ سامنے آجائے گا ۔ دودھ کا دودھ پانی کا پانی عوام الناس کے کشکول میں ہوگا ۔ تب لگ پتہ جائے گا کہ سندھ حکومت نے کرونا وائرس کے حوالوں سے اپنے کن سیاسی مقاصد کے حصول یا خالصتاََ عوامی ہمدردی کی بنیاد پر اپنی تمام فورسزکے ساتھ طویل و سخت لاک ڈاوَن کا سلسلہ کیوں جاری رکھا تھا;238;مگرابھی صرف اِتنا ہی کہہ اورسمجھ کر کراچی اور سندھ کے ہر طبقے سے تعلق رکھنے والے متاثرین لاک ڈاوَن اپنے لب رفوکئے رکھیں کہ آج سندھ حکومت کراچی سمیت صوبے بھر میں نظر آنے والے خونخوار آوارہ کتوں کو مارنے سے تو قاصر ہے ۔ جن کی وجہ سے صوبے کے عوام کی زندگیاں اجیرن ہوگئیں ہیں ۔ مگرکیسے آج یہی سندھ حکومت اور وزیراعلیٰ سندھ دنیا کی ناک میں دم کردینے اور نظر نہ آنے والے دُشمن کروناوائرس سے مقابلہ کرنے کےلئے کمربستہ ہیں ۔ ;238;جو صوبے میں سخت اور طویل لاک ڈاوَن کا سہارا لے کرکرونا وائرس سے عوام کو بچانے کےلئے عوامی فلاح اور بہبود کےلئے سخت ترین اقدامات کررہے ہیں ۔ جن کاکروناوبا کو للکارتے ہوئے جارحانہ عزم ہے کہ سندھ حکومت کرونا وائرس اور نظرآنے اور نہ دکھائی دینے والی کئی طاقتوں کو صرف اور صرف لاک ڈاوَن سے ہی شکست دے سکتی ہے ۔ جیسا اِنہوں نے کہاہے ۔ کیا یہ ایساکرکے بھی دنیا کو دکھا ئیں گے ۔ ;238;سندھ حکومت کرونا وبا سے سندھ کے عوام اور بہت سے اپنے پیاروں کو لاک ڈاوَن سے بچالے گی ۔ بیشک ، سندھ حکومت کروناوبا اور بہت سے سیاسی معاملات سے اپنے پیاروں کے ساتھ سندھ کے عوام کو بھی بچانے میں کامیاب ہوگی ۔ بس عوام صبرو تحمل کا مظاہرہ کریں اور کروناوبا سے ہونے والے لاک ڈاوَن میں حکومتی احکامات اور اقدامات پر سختی سے عمل پیرارہیں ۔ یقینا اِس عمل سے عوام الناس کو کرونا سے بچانے کے ساتھ ساتھ سندھ حکومت کو بھی اپنے بہت سے ظاہر اور باطن سیاسی اور معاشی و معاشرتی اور اخلاقی فوائد حاصل ہوں گے ۔ بہر حال،بدھ کوسندھ کی صوبائی وزیرصحت ڈاکٹرعذرا پیچو ہونے اپنے ایک ویڈیوبیان میں اِن خدشات کا اظہار کیا ہے کہ مئی کے آخر میں کرونا کیسز کی تعداد اپنے عروج پر ہوگی اَبھی کرونا کے مثبت کیسز کی تعداد 10فی صد ہے ۔ سندھ میں کرونا کیسز میں شرح اموات 2;46;2 فیصدہے ۔ اُن کاکہناتھا کہ آنے والے دِنوں میں صُورتِ حال زیادہ خطرناک ہوگی ۔ جب کہ انڈس اسپتال کے سی ای او ڈاکٹر عبدالباری، پاکستان اسلامک میڈیکل ایسوسی ایشن (پیما) کے صدر ڈاکٹرعظیم الدین، پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن کے جنرل سیکریٹری ڈاکٹر قیصرسجاد، ڈاکٹرعاطف حفیظ صدیقی، ڈاکٹرسعد خالد نیاز اور دیگر نامور ڈاکٹرز پر مشتمل کراچی پریس کلب میں ہونے والی اپنی نوعیت کی ایک طویل پریس کانفرنس میں متفقہ طور پرڈاکٹرز حضرات کا کہنا تھا اگرچہ سندھ حکومت نے آغاز میں لاک ڈاوَن پر سختی کی اِس کی دیکھا دیکھی مُلک کے دیگر صوبوں میں بھی لاک ڈاوَن ہوئے لیکن آہستہ آہستہ لاک ڈاوَن پورے ملک میں مذاق بن گیا ۔ اِن ڈاکٹرز کا یہ بھی کہناتھا کہ اگر لاک ڈاوَن کو سخت نہ کیا گیاتو مشکل بڑھ جائے گی ، مریض تعداد سے زیادہ آگئے تو حالات سنگین ہو جائیں گے، جنہوں نے اِس کا بھی خدشہ ظاہر کیا کہ کہیں ایسانہ ہو کہ ہ میں سڑکوں پر مریضوں کا علاج کرنا پڑے ، کراچی میں اسپتالوں میں 80فیصدجگہ بھر چکی ہے ۔ اگلے تین چار ہفتے بہت اہم ہیں ،اِ س موقع پر جیسے ڈاکٹرزنے التماس اور التجایہ انداز سے یہ بھی کہا کہ حکومت سنجیدگی کا مظاہر ہ کرے ،جبکہ لگے ہاتھوں اُنہوں نے تاجر برادری اورعلماکرام سے بھی درخواست کی کہ وہ مساجد میں نماز ادائیگی کا فیصلہ واپس لیں اور عوام کو نماز تروایح گھروں پر پڑھنے کی تلقین کریں ‘‘یہاں سوال یہ پیدا ہوتاہے اَب جب کہ ڈاکٹرزنے بھی کروناوبا کی آئندہ دِنوں میں مُلک میں پیداہونے والی سنگین صُورتِ حال کا خدشہ ظاہر کرچکے ہیں اِسے میں کیا وفاق ،صوبے اور دیگر سنجیدگی کا مظاہرہ کریں گے;238;بالخصوص صوبہ سندھ کا ہاتھ تھام کروفاق مددکرے گا ;238;یا سندھ حکومت کے لاک ڈاوَن پر شک و شبہات کی سیاست کرتارہے گا ۔