- الإعلانات -

اندرونی دشمنوں کا ناطقہ بند کیا جائے

قوم متحداوریکسو کب نہیں تھی، کل بھی متحد تھی، آج بھی متحد ہے، یکسو ہے ، اور انشا اللہ ہمیشہ اپنے وطن کی تیز رفتار ترقی، سالمیت اور استحکام کو برقرار رکھنے کے عزم سے سرشار بڑے سے بڑے کسی بھی طوفان سے مقابلہ کرنے کےلئے اپنے سروں سے کفن باندھ کر اپنی مسلح افواج کے قدم بہ قدم سیسہ پلائی دیوار بنی کھڑی رہے گی، یہی نہیں بلکہ آزاد وخود مختار سرزمین کی اہمیت وافادیت کے زندہ و جاوید شعوری فکرکی انتہائی قیمتی اور بیش بہا الہیٰ نعمتوں کا شکر ادا کرتے ہوئے پاکستانی قوم کا ہر فرد پاکستان کے ازلی وابدی دشمنوں کے ہاتھوں میں کٹھ پتلی بنے ہوئے اْن بدخواہ عناصرکے چہروں کو پہلے سے بہترانداز میں شناخت کرنے میں کوتاہی کی مرتکب بالکل نہیں ہورہی جنہوں نے کالعدم دہشت گرد تنظیم’’ٹی ٹی پی‘‘کےاپنے ماضی کے انسانیت کش سفاکانہ خونریزجرائم کیئے اوربھولے بیٹھے جنہوں نے اپنی ہی نسل کے معصوم بےگناہ پشتونوں کولہولہان کرنے میں اْن ظالموں نے پشتونوں پر رحم تک نہیں کیا آٹھ نوبرسوں تک آج کی پشتون تحریک موومینٹ (پی ٹی ایم) اپنے غیرملکی آقاؤں بھارتی خفیہ ایجنسی ’’را‘‘ اور افغان حکام کی ملی بھگت سے قبائلی علاقوں میں انسانی لہو کی ہولیاں کھیلیں جہنم واصل ملاریڈیو اور اْن کے انسان دشمن ساتھی کیا شہید ہونے والے پشتونوں کے ہمدرد تھے;238; اْس کڑے پْرآزمائش کٹھن لمحوں میں جب سخت اور پکے ایماندار پشتونوں کے جواں سال بچوں کو بہلاپھسلا کر اْنہیں بمبار بنایا جارہا تھا تو پاکستانی پشتونوں کی عملی مدواعانت کے لئے افواج پاکستان نے اپنے سروں سے کفن باندھ کر قبائلی علاقوں میں میدان عمل میں اتر کر اْن سرکش آئین پاکستان کے غداروں کے سرکچلے نہتے پشتون خاندانوں کو اْن ظالم وسفاک دہشت گردوں کے شکنجوں سے نکالنے میں جوتاریخ ساز کارنامہ انجام دئیے وہ صرف اور صرف اللہ تبارک وتعالیٰ کی خوشنودی کے حصول کےلئے اور اپنے وطن پاکستان کے آئین کے حلف کی پاسداری کےلئے قومی تاریخ میں رقم کیئے تھے پاکستان نے فرنٹ لائن پر یہ بے مثال قربانیاں دیں دنیا اِن لازوال قربانیوں کی آج بھی معترف ہے سینکڑوں دہشت گردوں کو اْن کے گرووں سمیت پاکستانی فوج نے جہنم واصل کیا کئی گرفتار ہوئے کئی گروہ مفرور ہوئے افغانستان میں قائم بھارتی کونصل خانوں میں آج بھی وہاں بیٹھے ہیں ، پاکستان اور افواج پاکستان کے خلاف اپنی بدترین معاندانہ سرگرمیوں میں اندھے بیلوں کی مانند جتے بھارتی اور افغانیوں کے اشاروں پر تنگی کا ناچ ناچ رہے ہیں کالعدم ٹی ٹی پی نے اب اپنا نیا نام’پی ٹی ایم‘‘رکھ لیا پگڑیاں اتاردیں اور ٹوپیاں پہن لیں کسی عام بھی ذرا سی سیاسی سوجھ بوجھ رکھنے والے عام پشتون سے معلوم کریں تو وہ فوراً بتادے گا کہ’’عارف وزیر کے خاندان کے 7 لوگ سال 2007 میں وانا میں عسکریت پسندوں کے ساتھ جھڑپ میں ہلاک ہوئے تھے‘‘مطلب یہی نکلا کہ’’محسن داوڑ ہو، منظور پشتین ہویا پھر علی وزیراور اْن کے ہمنوا ساتھی ہوں یہ سبھی کے سبھی چند برس بیشتر افواج پاکستان کے بہادرجوان اور دلیر افسرز جب قبائلی علاقوں میں نہتے اورپْرامن پاکستانی پشتونوں کو ان لٹیرے دہشت گردوں کے خونی پنجوں سے آزاد کرانے کی عملی جنگ لڑرہے تھے تو اْن دہشت گردوں میں یہی ’’پی ٹی ایم‘‘کے نامی گرامی ہتھیار بند شامل تھے پاکستانی فوج کے خلاف اِن کے دلوں میں پائی جانے والی پینپنے والی نفرتوں سے یہ بخوبی اندازہ لگایا جاسکتا ہے ایک عام افغانی اتنے آسانی کے ساتھ افغانستان کی سرحد عبور نہیں کرسکتا جتنی آسانی کے ذراءع افغانستان جانے کے سلسلے میں پی ٹی ایم والوں کو حاصل ہیں ان کے رہنے سہنے کے انداز قبائلی علاقوں میں ان کی بودوباش کا شاہانہ طرزعمل صاف ظاہر کرتا ہے کہ اِنہیں کابل اور نئی دہلی کی مکمل آشیر باد ہر طرح کی سہولیات بہم پہنچتی ہیں صرف ان کا اب نام بھی بدل گیا ہے اور کام بھی، پہلے ہی خودکش بمبار تھے آج یہ ’’سوفٹ سیاستدان ‘‘لسانیت پرستی کے پرچم اْٹھائے پاکستان کے شہروں کے پریس کلبوں میں نجانے کون سے ’’پْرکشش ہتھکنڈے‘‘ استعمال کرکے اپنے پسند کے صحافیوں کا ہجوم اکٹھاکرنے میں کامیاب ہوجاتے ہیں سمارٹ فونز جیسی ڈیوائس پاکستان میں کس کے پاس نہیں ہے یہاں کتنی آزادی ہے جس کا دل چاہتا ہے اول فول بکواسیات پر مبنی ویڈیوز بناکر سوشل میڈیا پر وائرل کردیتا ہے کوئی پوچھنے والا نہیں ایک خاص بات یہ ہے کہ کسی نے کیا خوب کہا ہے اگر کوئی بھی فرد دنیا میں یکایک شہرت پانا چاہتا ہے تو وہ اور کچھ نہ کرئے ’’پاکستانی سیکورٹی اداروں کے خلاف جودل میں آئے بک دے پاکستانی ایٹمی ڈیٹرنس پر تنقید کرنا شروع کردے‘‘امریکا اور مغرب میں اْس کا یہ فرسودہ سودا ہاتھوں ہاتھ وائرل ہونا شروع ہوجائے گا،دیکھتے ہی دیکھتے اْس کے لاکھوں شئیرہوجائیں گے کروڑوں لائیکس ہو جائیں گے‘‘ لیکن ایک بات یہ سب کچھ کرنےوالے بھول بیٹھتے ہیں یہ سب کرنے کےلئے اْنہیں اْن ضمیرفروشوں کو پہلے اپنی’ماں ‘کا سوداکرنا پڑتا ہے کتنی تلخ حقیقت ہے یہ;238; ’مادروطن‘ پاکستان کی سرزمین ’’زمین‘‘اْس زمین پر رہنے والوں کےلئے’ماں ‘ کا عظیم درجہ رکھتی ہے کس کس نے اپنی سرزمین اس ’’ماں ‘‘کاسودا نہیں کیا ایک اور نام ہمارے ذہن میں آگیا’حسین حقانی‘ بے غیرتیوں کی حدوں کو جاچھونے والا سرزمین پاکستان کا محسن کش،پاکستان نے اْسے کیا نہیں دیا تھا اور کیا نہیں بنادیا تھا صلہ میں اْس بدنصیب نے پاکستان کو کیا دیا;238;لہذا کل کے دہشت گرد عارف وزیر کی ہلاکت کے نام پر لسانیت کے نام پر سیاست کی نئی دکان چمکانے والوں کے جعلی ہتھکنڈوں کے جعلی پروپیگنڈے کا پاکستانی قوم مقابلہ کرنے کی اپنے میں بھرپور قوت وہمت اورصلاحیت رکھتی ہے افواج پاکستان کیخلاف جعلی افواہیں پھیلانے والے بعض بیرونی عناصراپنے ہاتھوں میں ناچتی بے قابو کٹھ پتلیوں کی مدد سے ایک مضبوط ومستحکم اسلامی ریاست پاکستان کو کسی بھی خطرات سے دوچار نہیں کرسکتے جعلی باتوں پر ڈرامے رچائے جاسکتے ہیں مگر نہ تو مسلح افواج کی پیشہ ورانہ تنظیمی ڈھانچے کو کوئی نقصان پہنچایا جاسکتا ہے نہ پسوووَں کی مانند ہماری محکم نظریاتی جڑوں کو کمزورکرنے کی نیت سے ہمارے جمہوری اداروں کوکسی قسم کے جعلی آئینی بحران سے توڑنے کی کوشش کی جاسکتی ہے قوم کل سے زیادہ ہشیاراورچوکنا ہے قوم کو بخوبی علم اور آگہی ہے اْنہیں اپنے اندرونی دشمنوں کے ساتھ صف آرا ہونا ہے آج نہیں توکل قوم ہمہ وقت اپنے ان اندرونی دشمنوں کی شیطانی کار ستانیوں سے نمٹنے فیصلہ کرچکی ہے ۔