- الإعلانات -

بھارت کا جنگی جنون اور پاکستان کی للکار

بھارت کا جنگی جنون سب کے سامنے ہے،اس نے خطے کا امن برباد کرکے رکھا ہوا ہے، اب فرانس سے رافیل طیارے خریدنے کے بعد سمجھ رہا ہے کہ وہ خطے میں سب سے زیادہ بالادست ہوگیا ہے لیکن اسکی خام خیالی ہے پاکستان نے اسے دو ٹوک انداز میں متنبہ کردیا ہے کہ چاہے وہ 500رافیل طیارے خرید لے پاک فوج جواب دینے کیلئے ہمہ وقت تیار ہیں ،نیز جنگیں اسلحے کے زور پر نہیں حوصلے سے بھی لڑی جاتی ہیں ، ابھی نندن کو بھارت یاد رکھیں یہ پاکستان کے شاہینوں نے بھارتی گیدڑوں کے طیارے کس طرح مار بھگائے اور بھارت کو جاکر یہ واضح پیغام دیا کہ پاکستان چاہے تو پورے بھارت کو تباہ و برباد کرسکتا ہے،دشمن کو پاک فوج کی صلاحیتوں کا علم ہونا چاہیے پاکستان کی کروڑوں عوام پاک فوج کے شانہ بشانہ کھڑی ہیں اور اگر بھارت نے جنگی جنون کے تحت کوئی بھی غلطی کرنے کی کوشش کی تو اسے صفحہ ہستی سے مٹادیا جائیگاجب بھی اس نے ایل او سی پر بلا اشتعال فائرنگ اور گولہ باری کی تو پاک فوج نے ہمیشہ دندان شکن جواب دیکر دشمن کی طوپیں نہ صرف خاموش کرادیں بلکہ اسے بھاری جانی ومالی نقصان پہنچایا لیکن بھارتی بنیا اپنی مذموم حرکتوں سے باز نہیں آتا ۔ پاک فوج کے ترجمان نے اسی وجہ سے بھارت کو متنبہ کیا ہے ۔ ترجمان پاک فوج میجر جنرل بابر افتخار نے میڈیا کو پریس بریفنگ دیتے ہوئے بتایاہے کہ بھارت نے فرانس سے 5 رافیل طیارے خریدے،500 بھی خرید لے، ہم تیار ہیں ۔ بھارت اسلحہ خریدنے والے ممالک میں سرفہرست ہے، جو اس کے توسیع پسندانہ عزائم کی نشاندہی ہے ۔ ہم واضح کرتے ہیں کہ جنگیں صرف اسلحے کے زور پر نہیں لڑی جاتیں ، پاکستانی فوج اپنے عوام کے ساتھ مل کر مادر وطن کے دفاع کےلئے باصلاحیت ہے ۔ بھارت کے مقابلے میں پاکستان کے دفاعی اخراجات مسلسل کمی کی طرف جا رہے ہیں لیکن کم وسائل کے باوجود پاکستانی افواج دشمن کا مقابلہ کرنے کےلئے مکمل تیار ہے ۔ مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں جاری ہیں ۔ وہاں گزشتہ ایک سال سے کرفیو نافذ ہے اخبار آگے چل کر لکھتا ہے کہ دنیا کا ہر ظلم کشمیریوں پر آزمایا جا رہا ہے ۔ پیلٹ گنز کا استعمال معمول بن گیا ہے لیکن تمام مظالم کے باوجود کشمیری آزادی کیلئے ڈٹے ہوئے ہیں ۔ حکومت نے ہر فورم پر کشمیر کے مسائل کو اجاگر کیا ۔ ایک سال میں تین بار مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ میں زیر بحث آیا جبکہ عالمی میڈیا نے بھی مقبوضہ کشمیر میں جاری بھارتی ظلم بے نقاب کئے ۔ بھارت لائن آف کنٹرول پربھاری ہتھیاروں کا استعمال کرتا ہے جس کا پاک فوج کی جانب سے موثر جواب دیا جاتا ہے ۔ بھارت اندرونی ناکامیوں پر پردہ ڈالنے کےلئے ایل او سی کی خلاف ورزیاں کرتا ہے ایک اور موقر اخبار نے اپنے اداریے میں لکھا ہے کہ اس خطے پر آزاد و خودمختار مملکت کی حیثیت سے پاکستان کی تشکیل بلاشبہ بانیانِ پاکستان قائد و اقبال کا کارنامہ اور انکی سوچ کا مظہر ہے ۔ خدا کے فضل و کرم سے‘ قوم کے جوش و جذبے اور عساکر پاکستان کی دفاع وطن کیلئے بے پایاں صلاحیتوں اور مشاقی کی بدولت اس ملک خداداد نے رہتی دنیا تک قائم رہنا ہے اور اسکی طرف میلی آنکھ سے دیکھنے کی جرات کرنیوالے دشمن کا نیست و نابود ہونا اسکے مقدر میں لکھا ہے ۔ ہمارا مکار دشمن بھارت تو قیام پاکستان کے وقت سے ہی اسکی سلامتی کمزور کرنے کی گھناءونی سازشوں میں مصروف ہے اور وہ ملک کی سرحدوں پر ہی نہیں ‘ پاکستان کے اندر بھی وحشی پن پر اتری ہوئی دہشت گردی‘ آبی جارحیت اور پاکستان کے اندر پھیلائے اپنے ایجنٹوں کے ذریعے عدم استحکام سے دوچار کرنے کی سازشوں میں مگن رہتا ہے مگر اسے ہر محاذ پر منہ کی کھانا پڑتی ہے ۔ یہ حقیقت ہے کہ پاکستان کی سلامتی کمزور کرنے کے جتن میں بھارت خود کو ایٹمی ٹیکنالوجی اور ہر قسم کے جدید‘ روایتی‘ ایٹمی اسلحہ اور گولہ بارود سے لیس کرکے پاکستان ہی نہیں ‘ اس پورے خطہ اور پورے کرہ ارض کا امن و سلامتی داءو پر لگا چکا ہے جس کا اقوام عالم بالخصوص عالمی قیادتوں اور نمائندہ عالمی اداروں کو ادراک ہونا چاہیے ۔ عساکر پاکستان بہرصورت دفاع وطن کا ہر تقاضا نبھانے کیلئے مکمل یکسو اور ہمہ وقت تیار و چوکس ہیں اور دشمن کی سازشوں ‘ جارحیت کے ارتکاب اور جارحانہ عزائم پر اسے فوری اور منہ توڑ جواب دیتی بھی رہتی ہیں جس کیلئے عساکر پاکستان کو قوم کی مکمل تائید و حمایت حاصل ہے اور قوم بذات خود عساکر پاکستان کے کندھے سے کندھا ملا کر کھڑی ہے جو دفاع وطن پر کوئی آنچ نہیں آنے دیگی ۔ قوم نے 14 اگست کو کرونا کی نازل ہوئی آفت کے باوجود ملک کا 73واں جشن آزادی روایتی جوش و جذبے کے ساتھ منایا اور ملک کی سرحدوں کی محافظ افواج پاکستان کے ساتھ دفاع وطن کیلئے یکسو ہونے کا تجدید عہد کیا ۔ یہی قوم کا وہ بے پایاں جذبہ ہے جو دفاع وطن کا ضامن ہے اور عساکر پاکستان قوم کے اسی جذبے کی اپنی خداداد عسکری صلاحیتوں سے نمائندگی کرتی ہیں ۔ ہمارے مکار دشمن نے ہم پر تین جنگیں مسلط کیں ‘ کشمیر کے غالب حصے پر تسلط جمایا‘ اس وطن عزیز کو سانحہ سقوط ڈھاکہ سے دوچار کیا اور کشمیر سے پاکستان آنیوالے پانی پر تسلط جما کر اسے پاکستان کوبھوکا پیاسا مارنے اور سیلاب میں ڈبونے کیلئے استعمال کیا مگر وہ جری و بہادر قوم کے دفاع وطن کے جذبے کو مات نہیں دے سکا عساکر پاکستان کی ان صلاحیتوں سے خوفزدہ ہو کر ہی دشمن نے ملک کے اندر دہشت گردی پھیلا کر پاکستان کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی سازش کی مگر عساکر پاکستان نے اس محاذ پر بھی دشمن کے گھناءونے عزائم ناکام بنائے‘ دہشت گردی کی جنگ کے حوالے سے ڈائریکٹر جنرل آئی ایس پی آر نے جو تفصیلات بتائی ہیں ‘ وہ دشمن کیلئے چشم کشا اور ہماری کامرانیوں کا کھلا ثبوت ہیں ۔ انہوں نے دوٹوک انداز میں باور کرایا کہ قوم نے کامیابی سے دہشت گردوں کیخلاف جنگ لڑی ہے ۔ بے شک عساکر پاکستان نے دفاع وطن پر اپنی جانیں تک نچھاور کی ہیں اور ہماری سکیورٹی فورسز کے دس ہزار سے زائد جوان اور افسران دہشت گردوں اور انکے ٹھکانوں کو نیست و نابود کرتے ہوئے شہادت سے سرفراز ہوئے ہیں جس پر قوم کا سر فخر سے بلند ہے ۔ بھارتی توسیع پسندانہ عزائم اب اقوام عالم میں کسی سے ڈھکے چھپے نہیں رہے اور کرونا کی افتاد میں بھی جس طرح بھارتی فوجوں نے مقبوضہ وادی کا لاک ڈاءون کیا جو گزشتہ ایک سال سے زائد عرصہ سے جاری ہے‘ یہ بھارتی سفاکیت کا منہ بولتا ثبوت ہے ۔ بھارت کے یہ سارے عزائم درحقیقت پاکستان کی سلامتی کمزور کرنے کے ہیں اور اسی تناظر میں عساکر پاکستان کے عزم و ہمت کے ساتھ پاکستان نے اپنا دفاعی حصار مضبوط بنایا ہے چنانچہ چند روزقبل پاک فضائیہ کے سربراہ ایئرچیف مارشل مجاہد انور خان نے بھی دوٹوک انداز میں دشمن کو باور کرایا ہے کہ ہم ہر خطرے کا جواب دینے کیلئے تیار ہیں ۔ یہ عساکر پاکستان کی جانب سے دشمن کو واضح جواب ہے کہ یہ معرکہ حق و باطل ہے ۔ ہم سے ٹکراءو گے تو پاش پاش ہو جاءو گے ۔