- الإعلانات -

بھارتی دہشتگردی ، خطے میں عدم استحکام کا باعث

دنیا جانتی ہے کہ بھارت اپنے پڑوسی ممالک کو عدم استحکام کا شکار کرنے کے لیے دہشت گردی کو ریاستی پالیسی کے طور پر استعمال کررہا ہے ۔ اقوام متحدہ کی اینالیٹیکل سپورٹ اینڈ سینکشنز مانیٹرنگ ٹیم (ایم ٹی) کی پاکستان کے موقف کی توثیق کرتی ہے کہ تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) افغانستان سے بھارتی تعاون سے چلائی جارہی ہے کو پاکستان اور خطے کے دیگر ممالک کے لیے خطرہ ہے ۔ ایم ٹی نے آزادانہ پر اندازہ لگایا کہ بھارت سے غیر ملکی دہشت گرد جنگجو آئی ایس آئی ایل;245;خراسان (آئی ایس آئی ایل;245;کے) میں شمولیت کے لیے افغانستان جارہے ہیں ۔ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی جانب سے منظور کردہ قراردادیں بھارت سے دہشت گردوں کو افغانستان جانے سے روکنے کا مطالبہ کرتی ہیں ۔ اس سے قبل اقوام متحدہ کی مانیٹرنگ ٹیم کی رپورٹس میں بھارت میں داعش دولت اسلامیہ اور عراق(آئی ایس آئی ایل) کی بڑھتی طاقت اور 2019 میں سری لنکا میں ایسٹر سنڈے پر ہونے والے حملوں کو بھی اجاگر کیا تھا ۔ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے بھی پریس کانفرنس میں کہا کہ اطلاعات ہیں کہ بھارت ریاستی دہشت گردی کو ہوا دے رہا ہے ۔ بھارت نے پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کا منصوبہ تیار کیا ہے ۔ چونکہ بھارت ایک بدمعاش ریاست کا روپ دھارنے جا رہا ہے لہذا مزید خاموش رہنا پاکستان اور خطے کے امن کے مفاد میں نہیں ۔ پاکستان کی دہشت گردی کےخلاف نمایاں کامیابیوں کو بھارت ہضم نہیں کر پا رہا ۔ 9الیون کے بعد پاکستان نے بہت بڑی قیمت ادا کی ۔ پاکستان میں دہشت گرد حملوں میں 32 ہزار شہادتیں اور83 ہزارشہری زخمی ہوئے ۔ ہم پر مسلط کی گئی دہشت گرد ی سے پاکستان کو 126 ارب ڈالرز سے زیادہ معاشی نقصان پہنچا ۔ بھارت پاکستان کے گرد دہشت گردی کا جال بن رہا ہے جس کےلئے اپنی اور افغانی سرزمین استعمال کر رہا ہے ۔ ہمارے پاس ناقابل تردید شواہد ہیں جو دنیا کے سامنے پیش کررہے ہیں ۔ ہمارے پاس مزید تفصیلات بھی ہیں جو بوقت ضرورت سامنے لائی جاسکتی ہیں ۔ پاکستان میں دہشت گردی کو پھر سے ہوا دینے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ حالیہ دہشت گرد حملے بھارت کے گرینڈ منصوبے کی عکاسی کرتے ہیں ۔ پاکستان نے ٹی ٹی پی اور بی ایل اے اور دیگر کالعدم تنظیموں کو شکست دی ۔ آج ان کالعدم تنظیموں میں پھر روح پھونکنے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ دہشت گرد تنظیموں کو پاکستان میں کارروائیوں کیلئے اکسایا جارہا ہے ۔ دہشت گرد تنظیموں سے علما اور سیکیورٹی فورسز کو نشانہ بنانے کو کہا جارہا ہے ۔ بھارت نومبر اور دسمبر میں پاکستان میں دہشت گرد کارروائیوں کو اپ سکیل کرنے کا ارادہ رکھتا ہے ۔ اطلاعات کے مطابق بھارتی حکام 4 بار دہشت گرد تنظیموں سے ملاقاتیں کرچکے ہیں ۔ کراچی ۔ لاہور اور پشاور دیگر شہر دہشت گردوں کا نشانہ ہوسکتے ہیں ۔ را اور دیگر بھارتی ایجنسیز پاکستان کے خلاف دہشت گردوں کو فنڈنگ کررہی ہیں ۔ پاکستان میں صرف افغان سرحدی علاقے ہی نہیں بلکہ بھارت کافی عرصے سے گلگت بلتستان میں بدامنی پیدا کرنے کی کوشش کررہا ہے ۔ را نے قبائلی علاقوں میں بدامنی کیلئے آئی ای ڈیز اور اسلحہ تقسیم کیا ۔ بھارت دہشت گرد تنظیموں کا کنسورشیم بنا کر دہشت گردوں کو تربیت اور اسلحہ فراہم کر رہا ہے ۔ بھارتی خفیہ ایجنسی پاکستان طالبان کی طرز پر داعش پاکستان بنانے کی سازش کررہی ہے ۔ بھارت کالعدم تنظیموں کی مالی معاونت کررہا ہے ۔ آر ایس ایس کے تعصب ۔ تنگ نظری ۔ فرقہ پرستی اور ہوس ملک گیری کے فلسفے پر استوار مودی سرکار کا مکروہ چہرہ عالمی برادری پر کھلنا شروع ہوگیا ہے ۔ فارن پالیسی نامی ممتاز امریکی جریدے کی تازہ ترین رپورٹ کے مطابق بین الاقوامی سطح پر دہشت گرد سرگرمیوں میں ملوث ملکوں میں بھارت سرفہرست ہے اور ادارہ اقوام متحدہ بھی کیرالہ اور کرناٹکا میں دہشت گرد گروپوں کی موجودگی کا انکشاف کرکے اس امرواقعہ کو سامنے لاچکا ہے ۔ بھارتی حکومت بڑے پیمانے پر بدامنی و خوں ریزی کے فروغ کیلئے ‘بدنام زمانہ دہشت گرد تنظیم داعش کی سرپرستی کررہی ہے اور یہ گٹھ جوڑ عالمی امن کےلئے ایک واضح خطرہ ہے ۔ بھارت کی سیاسی، معاشی اور اقتصادی دہشت گردی سے پورا جنوبی ایشیا اور بھارت کے تمام پڑوسی سخت مشکل میں ہیں ۔ بھارت پاکستان سے چار جنگیں لڑ چکا ہے ۔ چین کے ساتھ اس کی جنگ ہوچکی ہے اور اگر اس جنگ میں چین نے بھارت کو ہزیمت سے دوچار نہ کیا ہوتا تو بھارت چین سے بھی اب تک کئی جنگیں لڑ چکا ہوتا ۔ بھارت سری لنکا کی خانہ جنگی میں ملوث رہا ہے، اسی لیے ایک تامل عورت نے بھارتی وزیراعظم راجیو گاندھی کو قتل کیا تھا ۔ بھارت مالدیپ میں فوج اتار چکا ہے ۔ نیپال ہندو ریاست ہے مگر بھارت کبھی اس کا پیٹرول بند کردیتا ہے، کبھی کھانے پینے کی اشیا کی فراہمی روک دیتا ہے ۔ نیپال نے نیا آئین بنایا تو بھارت نے کہا کہ آئین بھارت کی مرضی سے بنے گا ۔ نیپال نے اس کا برا منایا تو بھارت نے نیپال کی ناکہ بندی کردی ۔ بھارت بھوٹان کو اپنا صوبہ سمجھتا ہے ۔ بنگلہ دیش کی تخلیق میں بھارت کا کردار فیصلہ کن ہے، مگر بھارت نے کبھی بنگلہ دیش کو آزاد نہ ہونے دیا ۔ وہ آج بھی بنگلہ دیش کو اپنی کالونی بنائے ہوئے ہے ۔ مودی بتائے کہ پاکستان سے اس کے کتنے پڑوسی پریشان ہیں ;238; اور پاکستان نے اپنے کتنے پڑوسیوں کو اپنا صوبہ یا اپنی کالونی بنایا ہوا ہے;238; بھارت جنوبی ایشیا میں دہشت گردی کی ماں اور سرپرست اعلیٰ ریاست ہے ۔ دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت سب سے بڑی منافقت ہے ۔ کشمیر پر بھارتی قبضہ غیر قانونی ہے اور وادی میں بھارتی جرائم کی تحقیقات ہونی چاہئے ۔ کشمیر کے حوالے سے اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عمل سے انکار دھوکا اور کھلی جارحیت ہے ۔ بھارت دہشت گردی کو ریاستی ہتھکنڈے کے طور پر استعمال کرتا ہے اور بلوچستان میں پکڑے گئے بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو نے بھی پاکستان میں دہشت گردی کروانے اوراسکی معاونت اور جاسوسی کا اعتراف کیا تھا ۔ بھارت کے جارحانہ عزائم خطے کی امن و سلامتی کیلئے خطرہ ہیں ۔