- الإعلانات -

چکری کے چوہدری کا حلف ،پنجاب میں ہلچل

چوہدری نثار علی خان نے حلف لے لیا ہر طرف چر چا تھا ;200;ج یہ ہدف بھی پورا ہو گیا، ابھی بھی بہت سی باتیں چل رہی ہیں ،وزیر اعلیٰ یا کچھ اہم ذمہ داری دی جانے کی امید،ان میں سے کچھ بھی ہو سکتا ہے ۔ شاید کچھ بھی نہ ہو لیکن اس وقت سب سے بڑی بات جو میڈیا،سوشل میڈ یا کی زینت بنی ہوئی ہے ۔ کسی بھی نیوز چینل کی ہیڈلائن اٹھا کے دیکھ لیں کسی ٹاک شو کو دیکھ لیں تذکرہ ایک ہی ہے ۔ نثار علی خان کیا منصب سنبھالنے جا رہے ہیں اور کون سی پارٹی میں شمولیت اختیار کر رہے ہیں ، فیصلہ چوہدری نثار علی خان نے کرنا ہے لیکن ;200;ج ایک چیز تو ثا بت ہوتی ہے کہ نثار علی خان کے چاہنے والے بہت زیادہ ہیں چاہے وہ پاکستان کے کسی کونے پر بھی چلے جائیں ۔ اپنا نام بنانے اور اپنی پہچان بنانے میں انسان کو بہت عرصہ لگتا ہے اللہ پاک کی جانب سے کچھ وقت ;200;زمائش کا بھی ہوتا ہے ثابت قدم رہنے والے لوگوں پر اللہ تعالیٰ خوش بھی ہوتا ہے یہی مثال نثار علی خان کی ہے حکومت میں رہے تو ایسے رہے کی انکے کامو ں کی مثالیں ;200;ج بھی دی جاتی ہیں حکومت کے وزیروں نے تین سالوں میں کیا کام کیے اپنے حلقے میں ۔ ایک دفعہ ایک وزیر کے پولیٹیکل سیکریٹری سے بات ہوئی ان کا کہنا ہے کہ ہم چکری کی طرف رواں دواں تھے، راستے میں نماز کا وقت ;200;یا نماز ادا کی گئی، وزیر موصوف کہتے ہیں چودھری نثار علی خان نے کام تو واقعی بہت کروائے ہیں ،رات کے اس پہر میں پنڈی سے چکری ;200;نا ممکن کام تھا ،ہر طرح چھوٹے چھوٹے گاؤں میں بھی سڑکیں بن گئیں ۔ ہ میں کمپین کرنے بھی ;200;سانی ہوئی اور ساتھ یہ کہنے لگے کہ کیا ہم بھی اتنے کام کروا سکیں گے سیکرٹری صاحب بولے، میں دل ہی دل میں ہنس پڑا ۔ یہ ہوتے ہیں کام جو مخالفین بھی یاد رکھیں لیکن کاش جستجو بھی کرے کہ ان جیسے کام بھی کروا سکیں وہ کردار کشی کرتے ر ہے ۔ چودھری نثار علی خان خاموش رہے لیکن کسی کی کردار کشی نہیں کی صرف چپ کر کے دیکھتے رہے ان کے ساتھ چلنے والے ساتھیوں نے بھی ان کے ساتھ وفاداری کا حق ادا کیا ۔ ;200;ج رات کے اس پہر ایک اور مشیر اور ایم پی اے سے بات ہوئی انہوں نے چودھری نثار علی خان کو حکومتی پارٹی میں ہونے کی خواہش ظاہر کی ۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ نثار علی خان سے ملاقات ہوئی بہت اچھا لگا لیکن ساتھ یہ بھی کہا ایک سینئر منسٹر نے اس پر غصے کا اظہار کیا لیکن جواب میں ان کا یہ کہنا تھا کہ نثار علی خان اچھے لیڈر ہیں اور مجھے پسند ہیں اس وجہ سے ملا ۔ ;200;خر میں بات کروں گا چودھری نثار علی خان کی پارٹی میں شمولیت کے حوالے سے ۔ چوہدری نثار علی خان نے مسلم لیگ نواز کے ساتھ وفاداری کا حق نبھایا، جب بھی ان سے کسی رفقا کی بات ہوتی ان کا یہ کہنا تھا کہ میں میاں محمد نواز شریف کے حوالے سے حکومتی بینچ پر بیٹھ کر ان کے خلاف بات نہیں سن سکتا، ضمیر اجازت نہیں دیتا دوسری جانب حکومت کی جانب سے بھی ان کو بہت پیشکش کی گئی ۔ اس سے زیادہ وفاداری کیا ہوسکتی ہے کہ بندہ گھر میں بیٹھ جائے جب پارٹی نے اس کی بات نہ سنی جائے ۔ دوسری جانب مریم نواز اور شاہد خاقان عباسی اور پرویز رشید کے کچھ بیانات سامنے ;200; رہے ہیں لیکن بڑوں کے بیانات ابھی تک سامنے نہیں ہے ۔ میرے خیال میں مریم نواز میں بہت جلدی کی، ایک بات واضح ہے چودھری نثار علی خان اپنی قابلیت کے حوالے سے جانے جاتے ہیں ، یہی وجہ ہے کہ سیاسی مخالفین بھی ان سے خاءف ہیں کہ شاید کچھ بھی نہ ہونے کے باوجود نثار علی خان ان کی جگہ لے لیں گے ۔ مسلم لیگ وفاداری کے حوالے سے بات تو ہو گی کیا پارٹی میں حق کی بات کرنا بغاوت ہے پھر نثار علی خان نے واقعی ہی بغاوت کی ، دوسری جانب سب سے بڑی با ت یہ ہے کہ ان کے بارے میں ابھی تک کو ئی کرپشن کا سکینڈل سامنے نہیں ہے اور سب سے بڑی بات یہ ہے کہ وہ حق کی بات کرتے ہوئے رکتے نہیں ہیں ۔ ورکر حوالے سے اگر بات کی جائے اگر نثار علی خان مسلم لیگ نواز میں رہیں گے تو ورکر کو اپنی جگہ ملے گی کیونکہ نہ تو انہوں نے اپنی کسی بیٹے نہ کسی رشتہ دار کو ووٹ دینا ہے اگر انہوں نے ٹکٹ دیے اور ماضی میں دیتے رہے تو ورکروں کو ہی نوازتے رہے ۔ گزشتہ 2018کے الیکشن کے حوالے سے ;200;پ راولپنڈی کا رزلٹ خود ہی دیکھتے ہیں جہاں پر اپنے بچوں بھتیجوں اور رشتے داروں کو کو ٹکٹ نوازے گئے لیکن رزلٹ کیا سامنے ;200;یا وہ ;200;پ کے سامنے ہی ہے ۔ مسلم لیگ نواز کی اعلی قیادت کو چاہیے کے وہ ہوش کے ناخن لیں اور اپنے قیمتی سرمائے کو ضائع مت کریں ، دوسری بات مسلم لیگ نواز میں بھی کچھ ایسا گروپ موجود ہے جو چاہتا ہے کہ نثار علی خان مسلم لیگ نواز میں واپس ;200;جائیں تاکہ پارٹی مضبوط ہو سکے ۔ دیکھنا یہ ہے نثار علی خان حکومت بینچ پر بیٹھنا مناسب سمجھیں گے یا اپوزیشن بینچ پر لیکن کھیل دلچسپ ہوگا ۔ پنجاب اسمبلی جونیئر ایم پی ایز کو کو ایک سینئر سیاستدان سے بہت کچھ سیکھنے کو ملے گا اگر نثار علی خان نے پنجاب اسمبلی میں اپنا کردار ادا کیا اس کا بہت فائدہ سیاسی پارٹی کے ساتھ ساتھ پنجاب اور پاکستان پاکستان کو ہوگا اگر تو نثار علی خان چیف منسٹر بنتے ہیں تو شہباز شریف کے ساتھ کے چیف منسٹر ہوں گے جو کسی کی ڈکٹیشن نہیں لیں گے اور دبنگ فیصلے کریں گے انتظامیہ پر کنٹرو ل ہو گا کرپشن ختم ہو جائے گی دیکھنا یہ ہے کہ ;200;ئندہ چند دنوں میں کیا ہوگا ۔ موجودہ ملکی صورتحال کے پیش نظر حکومتی ایوانوں میں بھی یہ جو جستجو پائی جاتی ہے، چودھری نثار علی خان حکومتی ایوانوں میں بیٹھ کر حکومت کی نمائندگی کریں اس وقت حکومت کو وسیم اکرم سے زیادہ فاسٹ بولر کی ضرورت ہے جو اچھی کارکردگی دکھا سکے، ایک وجہ ہے حکومتی ایم این اے کی جانب سے نثار علی خان کا پرتکلف استقبال کیا گیا اور حکومتی لوگ کیسے ہو کر کے نثار علی خان نے حلف لیا ، بہتر صرف اللہ پاک کی ذات ہی جانتی ہے ہم تو صرف اندازہ لگا سکتے ہیں میری دعا ہے جو بھی ہو ملک پاکستان کے لیے بہتر ہو ۔