- الإعلانات -

دہشت گردی کے خلاف کومبنگ آپریشن وقت کی ضرورت

پنجاب ، بلوچستان سرحد پر کومبنگ آپریشن کے نتیجہ میں 8 دہشت گرد مارے گئے جبکہ ایک اہلکار نے جام شہادت نوش کیا ۔ سیکورٹی فورسز نے راجن پور کے علاقے بالگیاں، گند باری اورپڑکری میں انسانیت کے دشمنوں کو نشانہ بنایا اس آپریشن میں بھاری اور جدید خودکار ہتھیار استعمال کیے گئے اور ہیلی کاپٹر سے دہشت گردوں کے ٹھکانے تباہ کیے گئے اس آپرینش میں درجنوں دہشت گردوں کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔ پنجاب میں آپریشن کے شروع ہوتے ہی دہشت گردوں اور ان کے سہولت کاروں کے اوسان خطا ہوگئے اور وہ انتہائی ذہنی کوفت کا شکاردکھائی دیتے ہیں۔ کاش نیشنل ایکشن پروگرام پر کماحقہ عمل درآمد کیا جاتا تو آج ملک بھر سے دہشت گردی کا خاتمہ ہوچکا ہوتا لیکن ہماری سیاسی مصلحت پسندی نے اس میں بے اعتنائی کا مظاہرہ کیا حالانکہ عسکری قیادت ایک تواتر سے ملک بھر میں بلا امتیاز آپریشن پر زور دیتی آرہی ہے۔ آپریشن ضرب عضب کے نتیجہ میں اب تک سینکڑوں دہشت گردوں کو ہلاک کیا جاچکا ہے اور ان کے ٹھکانے بھی تباہ کیے جاچکے ہیں کئی علاقے ان کے تسلط سے واگزار کروائے جاچکے ہیں ۔ پاک فوج کی قربانیوں کے صلے میں امن کی فضا واپس لوٹتی دکھائی دینے لگی ہے۔ نیشنل ایکشن پروگرام پر اس کی روح کے مطابق عمل نہ کیا گیا تو ملک بھر سے دہشت گردی کے ناسور کو ختم کرنے کا خواب کبھی بھی شرمندہ تعبیر نہ ہو پائے گا ۔ پنجاب میں رینجرز کی تعیناتی سے دہشت گرد گروہوں کی سرگرمیوں کو روکا جاسکے گا ۔ دہشت گرد اور ان کے سہولت کار کسی بھی رعایت کے مستحق نہیں ۔ اسلام امن کا دین ہے اور سلامتی کی تعلیم دیتا یہ کیسے طالبان ہیں جو دھماکوں اور خودکش حملوں سے انسانیت کو بے جرم و بے خطا مارے جارہے ہیں ۔ اسلام ایک انسان کے قتل کو پوری انسانیت کا قتل قرا ردیتا ہے اور یہ اسلام کی ہی تعلیم ہے جس نے اقلیتوں کو بھی تحفظ دینے کا درس دیا ہے۔ پاک فوج کا یہ طرہ امتیاز ہے کہ دہشت گردوں کے خلاف دن رات لڑ رہی ہے اور ان کے مذموم عزائم کو خاک میں ملانے کیلئے جانوں کے نذرانے پیش کررہی ہے اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاک فوج کا کردار قابل صد تعریف ہے اور دنیا کیلئے قابل تقلید بھی ہے۔ دہشت گردی میں پڑوسی ملک بھارت کا ہاتھ ہے جو ”را“ کے ذریعے پاکستان کے اندر عدم استحکام پھیلانے کی کوشش کررہا ہے ۔ پاکستان کئی بار عالمی برادری کی توجہ اس طرف مبذول کرواچکا ہے لیکن کوئی ٹس سے مس نہ ہوا جو لمحہ فکریہ ہے پاک فوج کسی بھی اندرونی و بیرونی سازش کا مقابلہ کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے اس کی نظر سرحدوں کے علاوہ ہر سو ہے دہشت گردی کے خاتمہ کیلئے یہ پرعزم ہے اور عوام اس کی قربانیوں پر رشک کررہی ہے اور وہ ان قربانیوں کو کبھی بھی فراموش نہ کرپائے گی۔ کومبنگ آپریشن کے نتائج سامنے آنے شروع ہوگئے ہیں اس کے اہداف پورے کرکے ہی ملک کو امن کا گہوارہ بنایا جاسکتا ہے۔ ملک بھر میں آپریشن کے ذریعے دہشت گردوں اور ان کے سہولت کاروں کو ان کے منطقی انجام تک پہنچایا جاسکتا ہے ۔ پاکستان اس وقت دہشت گردی کے خلاف جو جنگ لڑ رہا ہے اس میں اسے کافی نقصان بھی اٹھانا پڑ رہا ہے لیکن اس کی عسکری و سیاسی قیادت نے یہ تہیہ کررکھا ہے کہ جب تک دہشت گردی کا ناسور پاک سرزمین سے ختم نہیں ہوتا اس وقت تک جنگ جاری رہے گی۔کومبنگ آپریشن وقت کی ضرورت اور تقاضا ہے اس کے ذریعہ مطلوبہ مقاصد اور اہداف پورے ہو پائیں گے۔
 نادرا اہلکاروں کیخلاف کریک ڈاﺅن
 وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان کے حکم پر جعلی شناختی کارڈز کے اجراءمیں ملوث نادرا ملازمین کے خلاف کریک ڈاﺅن کے نتیجہ میں 18 افراد کے خلاف مقدمہ درج کرکے ان میں سے 8 کو گرفتار کرلیا گیا ہے ۔ دس ملازمین کی گرفتاری کیلئے چھاپے مارے جارہے ہیں ۔ وزیر داخلہ کا کہنا ہے کہ نادرا کو جعل سازوں اور پاکستان کی شہریت بیچنے والوں سے پاک کردیا جائے گا اور اس کے راستے میں کوئی رکاوٹ یا سفارش قبول نہیں کی جائے گی۔ یہ انتہائی حساس اور قومی سلامتی کا مسئلہ ہے اس میں عوام اور میڈیا کی معاونت کا شکر گزار ہوں انہوں نے کہاکہ پاکستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ قانونی دباﺅ کے تحت 1700 افراد نے رضا کارانہ طورپر اپنے جعلی کارڈ واپس کیے اس سے پہلے اس قسم کی کوئی مثال نہیں اس عمل کو 6ماہ سے پہلے مکمل کرلیا جائے گا ۔ وفاقی وزیر داخلہ نے بجا فرمایا یہ قومی سلامتی کا مسئلہ ہے اور اس پر کسی قسم کی رو رعایت نہیں ہونی چاہیے ۔ جعلی شناختی کارڈ کی روک تھام کیلئے وزارت داخلہ نے جو اقدام اٹھایا ہے لائق تحسین ہے اس سے جہاں جعل سازی رکے گی وہاں دیگر قباحتیں بھی دم توڑیں گی۔ جعلی شناختی کارڈز کی بھرمار نے حکومت کیلئے مسائل پیدا کردئیے ہیں افغانیوں نے تو دھڑا دھڑ اس بہتی گنگا سے ہاتھ دھوئے نادرا کو کرپٹ اہلکاروں سے چھٹکارا دلوا کر ہی اس ادارے کی تطہیر کی جاسکتی ہے ۔ جعلی شناختی کے ذریعے پاکستان کی ساکھ اوروقار کو دھچکا لگا جس کا ازالہ اسی طرح ممکن ہے کہ بدعنوان اہلکاروں کو قانونی شکنجے میں لایا جائے اور ان کے خلاف سخت تادیبی کارروائی کی جائے تاکہ آئندہ اس مکروہ دھندے کی روک تھام ممکن ہو ۔ چوہدری نثار مبارکباد کے مستحق ہیں جنہوں نے نادرا کو کرپٹ اہلکاروں سے پاک کرنے کا عملی مظاہرہ کیا ہے۔
 الطاف حسین کیخلاف ریفرنس
 برطانوی حکومت نے ایم کیو ایم کے بانی الطاف حسین کے خلاف پاکستان کی جانب سے بھیجے گئے ریفرنس کا باضابطہ جواب دے دیا جس میں کہا گیا ہے کہ الطاف حسین کے خلاف ریفرنس میٹروپولیٹن پولیس اسکاٹ لینڈ یارڈ کو بھیج دیا گی ہے مزید ضرورت پڑی تو پاکستان سے رابطہ کیا جائے گا ۔برطانوی حکومتکا جوابی مراسلہ اس امر کا عکاس ہے کہ برطانوی حکومت پاکستان کی طرف سے بجھوائے گئے ریفرنس پر سنجیدگی کا مظاہرہ کررہی ہے ۔ الطاف حسین نے جس ہرزہ سرائی کا مظاہرہ کیا قابل گرفت ہے اس کے خلاف انضباطی کارروائی عمل میں لاکر ہی انصاف کے تقاضے پورے کیے جاسکتے ہیں ۔ پاکستان مخالف نعرہ نہ صرف قابل برداشت ہے بلکہ قابل جرم بھی حکومت اس معاملے کو منطقی انجام تک پہنچا کر ہی اپنی ذمہ داری سے عہدہ برآ ہوسکتی ہے الطاف حسین کی حب الوطنی کا پول کھل چکا ہے اس غدار کے خلاف سخت کارروائی کرکے اس کو عبرت کا نشان بنانے کی ضرورت ہے ۔ برطانوی حکومت پاکستان سے اس ضمن میں ہر ممکن تعاون کرے ۔ جو جماعت صحت مندانہ سرگرمیاں سے عاری ہو اس کیخلاف کارروائی ضروری ہوا کرتی ہے ۔ ایم کیو ایم کے بانی نے جس ہرزہ سرائی کا مظاہرہ کیا اس پر پوری قوم سراپا احتجاج ہے اور اس کی یاوہ گوئی پر ماتم کناں ہے ۔ الطاف کی اس طرح کی کارروائیاں اس کا معمول بن چکی ہیں ان کو لگام دینا ضروری ہے۔ پاکستان کی طرف سے بھیجا گیا ریفرنس پر برطانوی حکومت ایکشن لے اور چھان بین کے بعد ضروری کارروائی عمل میں لائے۔ الطاف چونکہ برطانوی شہریت کا حامل ہے اس لئے برطانوی حکومت کو اس کیخلاف ایکشن لینا چاہیے ۔اگر اس ضمن میں برطانوی حکومت نے کوئی کارروائی نہ کی تو یہ پاکستان کیلئے باعث تشویش ہوگی۔