- الإعلانات -

ٹرمپ کو دنیا کے مفادات کومدنظررکھناہوگا

نئے امریکی صدرڈونلڈٹرمپ نے اپنے صدارتی خطاب میں کہاہے کہ اسلامی دہشت گردی دنیا سے مٹادینگے۔ہم وہی کرینگے جس سے امریکہ اور امریکی عوام کا مفاد وابستہ ہوگا انہوں نے کہاکہ اپنے مفادات کا تحفظ کرتے ہوئے تمام ممالک سے دوستی کرینگے باتیں کر نے کا وقت ختم ہو چکا ہے اب کام کا وقت آگیا ہے میں ان سیاستدانوں میں سے نہیں ہوں جو صرف باتیں کر تے ہیں جو کام نہیں کرتے ۔ ہمارا عزم سب سے پہلے امریکہ ہے اسی عزم کی حکمرانی ہوگی ۔ دنیا سے انتہا پسندی کا خاتمہ کیا جائیگا اور دہشتگردی کے خلاف کام کرینگے ۔انتہا پسندی کے خلاف نیا اتحاد بنائینگے ۔اپنی مدد آپ کے تحت اپنے ملک کی تعمیر نو کرینگے کالے یا سفید سب کو سوچنا ہوگا کہ ہم سب کا خون سرخ ہے ۔ امیگریشن ٗ ٹیکس ٗ تجارت اور خارجہ امور کو ایسا بنائیں گے کہ امریکہ کو فائدہ پہنچے ہم سب ملکر امریکہ کو محفوظ اور عظیم بنا سکتے ہیں انہوں نے کہاکہ ماضی گزر چکا ہے اوراب مستقبل کی طرف دیکھنے کا وقت ہے۔ آخری سانس تک عوام کیلئے لڑونگا ۔ دوسری جانب ڈونلڈ ٹرمپ کی حلف برداری کے موقع پرواشنگٹن سمیت امریکہ بھر میں احتجاجی مظاہرے کئے گئے صبح سے جاری احتجاج میں اس وقت شدت آگئی جب ڈونلڈ ٹرمپ وائٹ ہاؤس پہنچے ٗ اس موقع پر مخالفین بے قابو ہوگئے اور توڑ پھوڑ کی ٗبہت سے لوگوں نے اپنے چہرے چھپا رکھے تھے۔ ڈنڈے اور جھنڈے اٹھائے مظاہرین نے دکانوں کے شیشے توڑ دئیے جس کے بعد پولیس حرکت میں آئی اور مظاہرین کو منتشر کیا۔ کئی علاقوں میں پولیس اور مظاہرین کے درمیان آنکھ مچولی کا سلسلہ کئی گھنٹے جاری رہاواشنگٹن میں ٹرمپ کے مخالفین کی ٹولیاں جگہ جگہ احتجاج میں مصروف تھیں۔ مظاہرین سے خطاب میں رہنماؤں کا کہنا تھا کہ وہ خواتین، تارکین وطن اور مسلمانوں کے نمائندے ہیں۔ کچھ شہریوں کا کہنا تھا کہ ٹرمپ کے خلاف مظاہرہ کرکے انہیں صدر بننے سے نہیں روکا جاسکتا۔ادھر ڈونلڈ ٹرمپ کی حلف برادری کے موقع پر امریکا کے ساتھ برطانیہ، جاپان اور جرمنی اور فلسطین کے دارالحکومتوں میں بھی مظاہرے کیے گئے۔ٗ امریکا کے علاوہ جرمنی میں بھی احتجاج کیا گیا، دریائے ٹیمز پر لندن کے ایک احتجاجی گروپ نے ڈونلڈ ٹرمپ کی صدارت کے خلاف احتجاج کیا۔ادھر کینیڈا کے شہر مونٹریال میں امریکی قونصل خانے نے امریکی شہریوں کو شہر میں منعقد ہونے والے احتجاجی مظاہروں کے دوران محتاط رہنے کا سکیورٹی پیغام جاری کیا ہے۔ قونصل خانے کی جانب سے جاری کر دہ پیغام میں کہا گیا کہ اگرچہ یہ مظاہرے پرامن رہنے کی توقع لیکن یہ پرتشدد شکل بھی اختیار کر سکتے ہیں۔ پیغام میں امریکی شہریوں کو مظاہرے کے مقامات سے دور رہنے کی ہدایت کی گئی ۔نومنتخب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی تقریب حلف برداری کے موقع پر واشنگٹن میں ہزاروں افراد نے شدید احتجاج کیا ۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے عہد کیا ہے کہ وہ اقتدار میں آ کر امریکہ کو متحد کر دیں گے اور وہ ملک میں تبدیلی لے کر آئیں گے۔امریکی صدر نے دہشتگردی کے خلاف جس عزم کااظہار کیا ہے وہ وقت کی ضرورت ہے ۔دہشتگردی عالمی مسئلہ بن چکا ہے جس کے خلاف مشترکہ جدوجہد کی ضرورت ہے۔ پاکستان پہلے ہی دہشت گردی کے خلاف فیصلہ کن جنگ لڑ رہا ہے اور اس کاکردار دنیا کیلئے قابل تقلید ہے عالمی سطح پر پاکستان کے کردار کو سراہاجارہا ہے۔امریکی صدر اپنے مفاد کاتحفظ کرے لیکن ان کوتمام ممالک کے ساتھ یکساں رویہ اپناناہوگا۔ٹرمپ نے جوکچھ کہا ہے اس پر وہ کہاں تک عمل کرپاتے ہیں اس کاتو آنے والے وقت میں ہی پتہ چل پائے گا۔ ٹرمپ نے اسلامی دہشت گردی کی بات کرکے جو تاثر دیاہے اس سے اتفاق نہیں کیاجاسکتا۔ اسلام امن کا دین ہے اور ایک انسان کے قتل کو پوری انسانیت کاقتل قرار دیتا ہے اور یہ اسلام کی ہی تعلیم ہے کہ یہ اقلیتوں کو بھی ان کے حقوق دینے کی تلقین کرتا ہے۔ٹرمپ پہلے اپنے حالات سازگار کریں جن کے خلاف پر تشدد مظاہرے ہورہے ہیں ۔ اسلام دہشت گردی کی مذمت کرتا ہے دنیا بھر میں جہاں بھی مسلمان ہیں وہ امن وسلامتی کے خواہاں ہیں دہشت گردوں کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں یہ انسانیت کے دشمن ہیں اور دنیا کے امن کو تباہ وبرباد کرناچاہتے ہیں جن کے خلاف مشترکہ جدوجہد کی ضرورت ہے۔ د نیا کو امن کاگہوارہ بنانے کیلئے دہشت گردوں کے خلاف موثر ترین اقدامات کرنے ہونگے۔ ٹرمپ کو ایسی پالیسی مرتب کرنا ہوگی جو دنیا کے مفاد میں ہو صرف امریکی مفاد کو کسی بھی لحاظ سے درست نہیں کہاجاسکے گا امریکہ کردارمساویانہ ہوگا تو اس پر انگلی نہیں اٹھ پائے گی۔ امریکی دوعملی کادور اب گزر چکا د نیا امریکی چالوں کو جان چکی ہے ۔امریکی صدر نے تمام ملکوں سے دوستی کا پیغام تو دے دیا ہے اب دیکھنا یہ ہے کہ وہ اس پر کہاں تک عمل کرپاتے ہیں امریکی صدر کو یہ بات ذہن نشین کرلینی چاہیے کہ اسلام دہشت گردی کی اجازت نہیں دیتا اسلام امن وسلامتی کی تعلیم دیتا ہے۔ دہشتگرد دنیا کے دشمن ہیں ان کے خلاف مل جل کر ہی کارروائی موثر ثابت ہوسکتی ہے۔
سلنڈرپھٹنے کاالمناک واقعہ
اسلام آباد کی پی ڈبلیو ڈی کالونی میں سلنڈر دھماکے کے نتیجے میں 3 افراد جاں بحق اور چار زخمی ہو گئے۔ اسلام آبادکی پی ڈبلیو ڈی کالونی میں رات گئے گھر میں گیس لیکج کے بعد سلنڈر دھماکے سے پھٹ گیا جس کے باعث گھر کی چھت گر گئی اور ملبے تلے دب کر 3 افراد جاں بحق اور 4 زخمی ہو گئے۔ پولیس کے مطابق جاں بحق ہونے والوں میں ماں بیٹی اور ملازمہ ٗ زخمیوں میں گھر کا سربراہ، اور ایک بیٹے سمیت 4 افراد شامل ہیں جنہیں قریبی ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔ دھماکا اس قدرشدید تھا کہ گھرکی چھت اڑ گئی ٗ اطراف کے مکانات کو بھی نقصان پہنچا، دھماکے کی آوازکے بعد قریبی گھروں کے لوگ خوفزدہ ہوکرگھروں سے باہرنکل آئے۔وزیر مملکت اطلاعات ونشریات مریم اورنگزیب نے پی ڈبلیو ڈی کالونی میں سلنڈر دھماکے میں انسانی جانوں کے ضیاع پر اظہار افسوس کرتے ہوئے متعلقہ حکام کو انفارمیشن گروپ کے متاثرہ افسر کو بہترین طبی سہولیات کی فراہمی کی ہدایت کر دی۔ سلنڈردھماکوں کا بڑھنا تشویشناک صورت اختیار کرتا جارہا ہے جس سے شہریوں میں خوف وہراس بڑھنے لگا ہے اور سلنڈر کااستعمال کرتے وقت موت کاخوف چھائے رہتا ہے ۔سلنڈرپھٹنے کے واقعات کی روک تھا کیلئے موثراقدامات کئے جائیں اورناقص سلنڈروں کی خریدوفروخت کو روکا جائے تاکہ لوگوں کی قیمتی جانوں کو بچایاجاسکے۔اسلام آباد پی ڈبلیو ڈی کا حالیہ جان لیوا واقعہ افسوسناک ہے۔خداوند کریم اس واقعہ میں جاں بحق افراد کو جواررحمت میں جگہ دے اور لواحقین اورپسماندگان کو یہ صدمہ جانکاہ برداشت کرنے کی ہمت دے۔آمین