- الإعلانات -

پیف کے بجٹ میں 5 ارب روپے کا اضافہ

یکم مئی کو پاکستان سمیت دنیا بھر میں مزدوروں کا عالمی دن بڑے جوش و خروش سے منایا گیا۔ مسلم لیگ (ن) لیبر ونگ پنجاب کے زیراہتمام یوم مئی کے سلسلے میں جلسہ منعقد ہوا جس کی صدارت وزیر محنت پنجاب راجہ اشفاق سرور اور صوبائی صدر لیبر ونگ پنجاب سید مشتاق شاہ نے مشترکہ طور پر کی۔ حکومت پاکستان نے محنت کشوں کا ماہانہ مشاہرہ کم از کم 13 ہزار روپے ماہانہ مقرر کر رکھا ہے جس میں اس برس مزید اضافہ کردیا جائیگا۔ وفاقی وزیر کامران مائیکل نے کہا کہ آج مزدوروں کا عالمی دن ہے، حکومت پاکستان مزدوروں کے حالات کار بہتر بنانے کیلئے کوشاں ہے۔ مزدوروں کو انکے مکمل حقوق دلانا اور انکی تنخواہوں میں خاطر خواہ اضافہ کرنے کا کریڈٹ مسلم لیگ (ن) کی حکومت کو جاتا ہے۔ صوبائی وزیر ملک ندیم کامران نے کہا کہ مزدوروں کو یکجا کرکے حقوق کے حصول کیلئے لیبر ونگ کے پلیٹ فارم پر لانا میاں نوازشریف کا بڑا کارنامہ ہے۔ وزیراعلیٰ شہبازشریف کی حکومت نے محنت کشوں کو عزت دیکر اور لیبر قوانین پر عمل کرکے جو کارہائے نمایاں سرانجام دئیے ہیں اس پر قوم انکو خراج تحسین پیش کرتی ہے۔ پنجاب ورکرز ویلفیئر بورڈ صوبہ کے صنعتی کارکنان کیلئے بہت سی سہولیات فراہم کر رہا ہے۔ جن میں صنعتی کارکنان کے تمام بچوں کی ورکرز ویلفیئر سکولز میں مفت تعلیم، صنعتی کارکنان کے تمام بچوں کیلئے وظائف، انٹرمیڈیٹ لیول 1600 روپے ماہانہ، گرایجوایشن لیول 2500 روپے ماہانہ اور ماسٹر لیول کےئے 3500 روپے ماہانہ وظیفہ دیا جاتا ہے۔صنعتی کارکنان کی تمام بچیوں کیلئے 100000 روپے فی کس کی فراہمی، صنعتی کارکنان کی بیوہ اور قانونی ورثاء کو ڈیتھ گرانٹ 500000 روپے دینا ہے۔ وزیر اعلیٰ شہباز شریف مصروفیت کی وجہ سے شریک ہونے سے قاصر رہے مگر انہوں یکم مئی کے حوالے سے کہا ہے کہ سیاست عوام کی بے لوث خدمت کا نام ہے اور عوام کی خدمت میں جو اطمینان اور سکون ملتاہے، اس کا اندازہ الزام تراشیاں کرنے والے عناصر کر ہی نہیں سکتے۔وزیراعظم محمد نوازشریف کی قیادت میں مسلم لیگ(ن) کی حکومت مزدوروں کی حالت زار کو بہتر بنانے کیلئے پرعزم ہے اور محنت کش طبقے کی حالت بہتر بنانے کیلئے بھرپور توجہ دے رہی ہے اور محنت کشوں کی خوشحالی کیلئے بے مثال اقدامات کرکے حکومت نے مزدور کو اس کاحق دیا ہے۔وزیر اعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف نے کہا ہے کہ محنت کش کا معیشت میں کردار ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتا ہے اورمحنت کش کو بااختیاربنائے بغیر ترقی کے اہداف حاصل نہیں کئے جا سکتے۔ اینٹوں کے بھٹوں پر کام کرنیوالے 87ہزار بچوں کو سکولوں میں داخل کر اکے انکا حق دیاگیاہے اورجن معصوم ہاتھوں میں پہلے گارامٹی تھا،اب ان ہاتھوں میں قلم وکتاب تھما دی گئی ہے اوران 87ہزار بھٹہ مزدوربچوں کو مفت تعلیم کیساتھ34 کروڑ روپے سے زائد کی مالی معاونت بھی فراہم کی گئی ہے۔ محنت کشوں کے بچوں کیلئے معیاری تعلیمی اداروں ، سوشل سکیورٹی ہسپتالوں اور لیبر کالونیوں کا قیام حکومت پنجاب کی مزدور دوست پالیسی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ 50 ارب کی لاگت سے 4سال کے قلیل عرصہ میں مزدوروں کی خوشحالی کے خصوصی اقدامات کئے گئے ہیں۔ مزدوروں کو پنجاب سوشل سکیورٹی ہسپتالوں میں24ارب 14کروڑ کی خطیر رقم سے علاج معالجے کی سہولت فراہم کی جارہی ہے۔ محنت کشوں کے بچوں میں 3ارب 12کروڑ روپے کے ٹیلنٹ سکالر شپ تقسیم کئے جاچکے ہیں۔ ورکرز کے لئے میرج گرانٹ کی مدمیں 2ارب 55کروڑ روپے کی ادائیگیاں کی جا چکی ہیں اور ڈیتھ گرانٹ کی مدمیں 2ارب 74کروڑ روپے کی فراہم کئے گئے ہیں۔ پنجاب ورکرز ویلفیئر بورڈ کے سکولوں میں مزدوروں کے 47ہزار بچوں کو مفت تعلیم فراہم کی جارہی ہے۔ لاہور، ملتان او رننکانہ صاحب میں مزدوروں کیلئے 12ارب روپے کی خطیر رقم سے رہائشی کالونیوں کی تعمیر کی گئی ہیں۔ چائلڈ لیبر اور جبری مشقت کے خاتمے کیلئے 5 ارب روپے مختص کئے گئے ہیں۔ بھٹوں پر بچوں کی مشقت کی ممانعت کا قانون بھی پنجاب حکومت کا کارنامہ ہے۔ پنجاب حکومت نے محنت کشوں کی فلاح وبہبود کے لئے جوبے مثال اقدامات کئے ہیں ،اس کی نظیر نہیں ملتی اور محنت کشوں کیلئے فلاحی اقدامات کا سلسلہ آئندہ بھی جاری رہے گاکیونکہ محنت کش خوشحال ہوگا تو پاکستان خوشحال ہوگا۔
****