- الإعلانات -

سیلفی ماسٹر

اس وقت ملک کے سیاسی حالات آئے دن ایک نئی کروٹ لے رہے ہیں ۔کبھی دھمکیاں ،کبھی درخواستیں ،کبھی ضمنی انتخابات ،کبھی الزامات،کبھی تسلیمات،عجیب چوں چوںکا مربہ بنا ہوا ہے ۔نہ جانے اس زمین پربسنے والے نا خدا کیا چاہتے ہیں ۔عوام تو بے چاری تباہ حال ہے ۔مہنگائی کی چکی میں اس بری طرح پِس رہی ہے کہ اسے دو وقت کی روٹی کا بھی نصیب ہونا بڑا مشکل نظر آرہا ہے ۔مگر وقت صدا ایک سا نہیں رہتا ۔ماضی میں جھانکا جائے تو اوپربیان کیے گئے حالات بالکل آئینہ دار ہیں ۔جب سے وزیراعظم نے عنان اقتدار سنبھالا پھر عوام سے جو وعدے وعید کیے ان میں خاصی حد تک عمل نظر آرہا ہے ۔چونکہ اس دور حکومت میں حکومت کی سب سے بڑا حاصل اقتصادی راہداری ہے جس نے دشمنوں کی نیندوں کو حرام کردیا ہے اورخاص کر پڑوس میں بسنے والا ”سیلفی ماسٹر“جو کبھی پیلے رنگ کے کرتے میں ہوتا ہے ،کبھی نیلے میں ہوتا ہے ،کبھی عینک لگاتا ہے ،کبھی ایسا لباس پہنتا ہے جس پر مودی مودی مودی ہی تحریر ہوتا ہے ۔ایک غریب تخریب کار بلکہ اگر یہ کہا جائے کہ دہشتگرد ہے تو غلط نہ ہوگا ۔اس کو اقتدار کیا ملا ایسے محسوس ہوا کہ جیسے بندر کے ہاتھ ادرک چڑھ گئی ۔اس کا اس نے خوب ستیاناس مارنا شروع کیا ۔اگر یہ کہا جائے تو غلط نہ ہوگا کہ بھارت کے اقتدار کامودی نے سوا ستیاناس کردیا ہے ۔انتہا پسندی اس حد تک پہنچ چکی ہے کہ اگر کوئی پاکستان کا فنکار بھی وہاںچلا جائے تو اس کیخلاف وسیع پیمانے پر ہنگامے شروع ہوجاتے ہیں اورپھر مودی بعد میں آکر دکھاوا شروع کردیتا ہے کہ ایسا نہیں ہونا چاہیے تھا ۔بات صرف یہاں تک نہیں گائے کا معاملہ اس وقت اتنی اہمیت حاصل کرچکا ہے کہ اس کو بہانہ بنا کر ہندو انتہا پسندوں نے مسلمانوںکاقتل عام شروع کررکھا ہے ۔مودی نے پورے بھارت کو گجرات بنا لیا ہے ۔وہاں پر مسلمانوں پر ظلم کی انتہا ہوچکی ہے مگر پوری دنیا کو یوں محسوس ہوتا ہے جیسے سانپ سونگھ گیا ہو۔کوئی آواز نہیں اٹھا رہا،مقبوضہ کشمیر میں تو نہتے کشمیریوں پر قیامت ڈھائی جارہی ہے اب تو وہاں کی عدالت نے بھی فیصلہ صادر فرما دیا ہے کہ مقبوضہ کشمیر بھارت کا حصہ نہیں اور اس کی خود مختاری کو تبدیل نہیںکیا جاسکتا ۔مگر سیلفی ماسٹر کو کون سمجھائے ۔اس کے دماغ میں صرف پاکستان کی دشمنی اٹکی ہوئی ہے اور وہ اس کو ہر قیمت پر نبھانا چاہتا ہے ۔حالانکہ وزیراعظم نوازشریف کی بھارت کے حوالے سے پالیسی نے اس کو گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کردیا ہے ۔اب بیرونی دنیا سے بھی کچھ ایسی آوازیں اٹھنا شروع ہوگئی ہیں جس پر مودی کو سبکی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔وہاں پر کوئی بھی اقلیت کسی طرح محفوظ نہیں ۔گذشتہ دنوں ہندوﺅں نے سکھوں کی مذہبی کتاب کی بیحرمتی کی جس پر پورا پنجاب مظاہروں کی لپیٹ میں آگیا اوراب سکھوں نے دنیا بھر میں کال دی ہے کہ وہ اقوام متحدہ کے سامنے بھارت کا مکروہ چہرہ بے نقاب کرنے کیلئے مظاہروں میں شریک ہوں تاکہ دنیا کو پتہ چل سکے کہ اس کا اصل کردار کیا ہے ۔خود کو دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کہلانے والا بھارت اقلیتوں کا قتل عام کررہا ہے ۔اس کی ان تمام حرکات وسکنات کے پیچھے مغربی قوتیں موجود ہیں اورخاص طور پر جہاں مسلمانوں کے مسائل درپیش آتے ہیں وہاں پر تو کفار متحد ہوجاتے ہیں ۔گائے کا گوشت کھانے کی بات تو دور کی ہے ،گائے لے جانے والوں پربھی زندگی تنگ کردی گئی ہے ۔اب ہندوﺅں نے سکھوں کی کتاب کی بے حرمتی کرکے بہت بڑی غلطی کی ہے ۔وہ دن دور نہیں کہ جب جلد ہی بھارت میں ایک خالصتان بنے گا اوریقینی طور پر اس وقت بھارت کو سمجھ آئیگا کہ اس نے مودی کے دور میں کیا کیا غلطیاں کی ہیں ۔پاکستان کے سرحدی حالات کو بھی غیر محفوظ بنا دیا ہے ۔آئے دن کی فائرنگ ان کا وطیرہ بن چکا ہے ۔نوازشریف حکومت نے واضح طور پر کہہ دیا ہے کہ وہ بھارت کے ساتھ غیر مشروط مذاکرات کیلئے تیار ہے لیکن اس ایجنڈے میں کشمیر کا شامل ہونا بہت ضروری ہے ۔گذشتہ روز بھی مقبوضہ کشمیر میں سبز ہلالی پرچم کے ہمراہ احتجاج کیا گیا مگر شاید رنگ برنگی شخصیت کے مالک مودی اپنے ہی حصار میں کھویا ہوا ہے اور اس کو یہ واضح پیغام سمجھ نہیں آرہا کہ وہاں کے عوام کس کے ساتھ ہیں ۔انہیں حق خود ارادیت دلوانا اقوام متحدہ کی ذمہ داری ہے اور اس پر فرض عائد ہوتا ہے کہ وہ ترجیحی بنیادوں پر مسئلہ کشمیر کے حل کرائے ۔اقوام متحدہ سے خطاب کے دوران بھی وزیراعظم نے واضح سنگنل دیدئیے تھے کہ اس مسئلے کو حل کرانے میں کس کی زیادہ ذمہ داری ہے ۔بین الاقوامی قوتوں نے آنکھیں بند کررکھی ہیں مگر وہاں جو آزادی کا الاﺅ جل رہا ہے اس کو بجھانا ناممکن بات ہے ۔کشمیری بھارتی ظلم وستم سے آزادی لیکر رہیں گے ۔بھارت تقسیم ہوکر رہے گا اور بھارت کو شکست وریخت کرنے میں مودی اہم کردار ادا کرے گا ۔کیونکہ اس کے آنے کے بعد پورے خطے کا امن خطرے کا شکار ہوچکا ہے ۔یہاں پر ذرا سی بھی چنگاری کوئی بہت بڑا واقعہ رونما کرسکتی ہے ۔وزیراعظم نوازشریف کی کشمیر کے حوالے سے بہترین پالیسی کی وجہ سے بھارت کو دنیا بھر میں شکست کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔۔