- الإعلانات -

پنجاب کے 5 اضلاع میں ڈولفن فورس تعینات

جرائم اور دہشت گردی کے خلاف پنجاب پولیس کے علاوہ ایلیٹ فورس، انسداد دہشت گردی پولیس، کوئیک ریسپانس فورس، پنجاب ہائی وے پیٹرولنگ اور محافظ فورس کام کر رہی تھیں جبکہ ضرورت پڑنے پر قومی رضا کار فورس کی خدمات بھی حاصل کی جاتی ہیں۔ ماضی میں سٹریٹ کرائمز کی روک تھام کیلئے شاہین فورس اورمجاہد سکواڈ بھی قائم کی گئی تھیں لیکن شاہین فورس ختم ہوگئی ہے جب کہ ڈولفن فورس اب مجاہد سکواڈ کی جگہ لے گی۔گزشتہ روز ڈولفن فورس کی پاسنگ آؤٹ پریڈ سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے کہا کہ پنجاب پولیس صوبے میں امن کے قیام کیلئے پرعزم ہے۔جوانوں نے دہشتگردوں کے خاتمے کیلئے جانوں کا نذرانہ پیش کیا۔ لاہورمیں ڈولفن فورس کی لانچنگ ہو چکی۔ اب باقی شہروں میں جانا ہے۔ لاہور میں ڈولفن فورس پہلے ہی میدان عمل میں موجود ہے اور لاہور میں کامیابی کے بعد دوسرے مرحلے میں فیصل آباد، راولپنڈی، گوجرانوالہ، ملتان اور بہاولپور میں ڈولفن فورس کا قیام عمل میں لایا گیا ہے۔ تربیت مکمل کرنے والے 696 جوان ان اضلاع میں فرائض سرانجام دینے کیلئے تیار ہیں۔پاس آؤٹ ہونے والی696 اہلکار فیصل آباد، راولپنڈی، گوجرانوالہ، ملتان اور بہاولپور میں ڈولفن فورس کا حصہ بنیں گے ۔ ڈولفن فورس خودکواہل ثابت کرے اورحسن سلوک سے عوام کا دل جیتے۔ وزیراعلیٰ شہباز شریف کاکہنا تھا کہ عوام کی نظریں ڈولفن فورس پر ہیں۔ڈولفن فورس کے جوان جرائم پرقابو پانے کیلئے مثالیں قائم کریں گے۔ڈولفن فورس کا آئیڈیا ترکی سے لیا اوراس کیلئے ترک حکومت نے بھرپور مدد کی۔ امیدہے ڈولفن فورس پنجاب پولیس کاامیج بہتراورترک ڈولفن فورس جیسا معیار یہاں بھی قائم کریں گے ۔ پنجاب پولیس میں ہزاروں اہلکاروں کو بھرتی کرکے تربیت دی گئی اوراہلکاروں پر اربوں روپے خرچ کئے گئے۔ عوام کے جان ومال کی حفاظت کرناحکومت کی ذمہ داری ہے۔ پنجاب پولیس شہداء کی فورس ہے۔ پولیس افسروں اور جوانوں نے دہشت گردی کے خلاف جنگ اور عوام کو شرپسندوں سے محفوظ رکھنے کیلئے اپنے خون کا نذرانہ دیا ہے۔ پنجاب میں جاری سی پیک کے منصوبوں پر کام کرنے والوں کی حفاظت کے لئے ہزاوں جوانوں پر مشتمل نئی فورس تشکیل دی گئی ہے۔ ڈولفن فورس سٹریٹ کرائمز سے پاک پنجاب کے مشن کی تکمیل کے حوالے سے معاون ثابت ہوگی۔میرٹ پر بھرتی کی گئی ڈولفن فورس کو جو اعلیٰ معیار کی جدید تربیت دی گئی ہے اب اسے اس کا اہل ثابت کرنا ہے اور اپنی ذمہ داریاں انتھک محنت سے سرانجام دینا ہیں۔ دیانتداری، صلاحیت، انتھک محنت، انصاف، جرات اور پیشہ ورانہ مہارت ڈولفن فورس کیلئے سنہری اصول ہیں اور اس فورس کو ان اصولوں کو اپنا کر اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئے ہمت اور جرات سے آگے بڑھنا ہے اور صوبے کے 11 کروڑ عوام کی توقعات پر پورا اترنا ہے۔ وزیراعلیٰ نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں پاسنگ آؤٹ پریڈ میں حصہ لینے والے ان جوانوں کو شاندار کارکردگی پر دل کی اتھاہ گہرائیوں سے مبارکباد دیتا ہوں اور ان کے ٹرینرز کو بھی مبارکباد دیتا ہوں جنہوں نے انہیں لیکچرز دیئے اور اس قابل بنایا کہ وہ آج اس ڈولفن فورس کا ہراول دستہ بن گئے ہیں جس نے صوبے کے عوام کے جان و مال کی حفاظت کرنی ہے۔ عوام کو امن، تحفظ اور انصاف کی فراہمی کے حوالے سے اپنا کردار ادا کرنا ہے۔وزیراعلیٰ نے ڈولفن فورس کے اہلکاروں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ کو جس مقصد کیلئے اعلیٰ معیار کی تربیت فراہم کی گئی ہے، اسے آپ نے پورا کرنا ہے۔ فرض کی ادائیگی میں شاندار مثالیں قائم کرتے ہوئے آگے بڑھنا ہے۔ مجھے امید اور یقین کامل ہے کہ آپ کی تربیت کیلئے پنجاب حکومت نے جو وسائل فراہم کئے ہیں انشاء اللہ آپ عوام کی توقعات پر پورا اتریں گے اور پنجاب پولیس کا امیج بہتر کرنے میں اپنی ذمہ داریوں کی ادائیگی کا اعلیٰ معیار قائم کریں گے اور دوسرے کیلئے قابل تقلید بنیں گے جس سے آپ کیلئے عوام میں محبت کے بے پناہ جذبات پیدا ہوں گے۔عوام کی جان و مال کا تحفظ ریاست کی بنیادی ذمہ داری ہے اور اسی مقصد کے پیش نظر پولیس اور سکیورٹی اداروں پر دل کھول کر وسائل خرچ کئے گئے ہیں تاکہ صوبے کے عوام کو امن اور سکون ملے اور پنجاب دہشت گردوں اور شرپسندوں سے پاک ہو۔ پنجاب حکومت نے انسداد دہشت گردی کے لئے انسداد دہشت گردی محکمہ قائم کیا ہے جو شاندار کام کر رہا ہے۔اسی طرح پنجاب میں جاری سی پیک کے منصوبوں پر کام کرنے والوں کی حفاظت کیلئے ہزاوں جوانوں پر مشتمل نئی فورس تشکیل دی گئی ہے جبکہ سٹریٹ کرائمز کی روک تھام کیلئے ڈولفن فورس کا آغاز لاہور سے کیا گیا تھا اور اب پاس آؤٹ ہونے والے 696 جوانوں کو پنجاب کے دیگر شہروں میں بھجوایا جا رہا ہے۔ ڈولفن فورس کے قیام میں وزارت خزانہ اور حکومت پنجاب نے وسائل فراہم کئے جس کی بدولت یہ شاندار فورس قائم ہوئی۔ 13 لاکھ روپے مالیت کی 500 سی سی موٹرسائیکل پر گشت کرنے والے اہلکاروں کی یونیفارم بھی خصوصی طور پر تیار کی گئی ہے، انھیں جدید اسلحہ اور جدید یورپی سکیورٹی آلات سے لیس کیا گیا ہے۔ ان کے ہیلمٹوں میں جدید مواصلاتی نظام اور کیمرے نصب کیے گئے ہیں جبکہ ان کی نقل و حرکت کی بھی خصوصی مانیٹرنگ کی جائے گی۔ ڈولفن فورس کا ریسپانس ٹائم پانچ منٹ ہوگا اور یہ پولیس ایمرجنسی کے فون پر جائے واردات پر پہنچے گی تاہم بعد میں اس کا الگ ایمرجنسی نمبر متعارف کرایا جائے گا۔ ڈولفن فورس شہر کے مختلف علاقوں میں صرف سٹریٹ کرائمز پر اپنی توجہ مرکوز رکھے گی۔ یہ کسی تھانے کے ماتحت نہیں ہوں گی اور نہ ہی ان کو کسی جلسے، جلوس یا کسی کی سکیورٹی پر مامور کیا جا سکے گا اور نہ ہی دیگر لا اینڈ آرڈر کے لیے استعمال میں لایا جائے گا۔ انسپکٹر جنرل پولیس کیپٹن (ر) عارف نواز نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعلیٰ محمد شہبازشریف نے پنجاب پولیس کو جدید خطوط پر استوار کرنے کرنے کیلئے ہر طرح کے وسائل دیئے ہیں اور پنجاب پولیس کے مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کئے ہیں۔ ڈولفن فورس کے باعث لاہور میں سٹریٹ کرائمز میں کمی واقع ہوئی ہے جبکہ پنجاب کے دیگر شہروں میں ڈولفن فورس کی تعیناتی سے وہاں بھی سٹریٹ کرائمز کم ہوں گے۔ کمانڈنٹ پولیس ٹریننگ کالج لاہور ڈی آئی جی فیاض احمد نے خطبہ استقبالیہ پیش کیا۔ سپیکر پنجاب اسمبلی رانا محمد اقبال خان، صوبائی وزیر قانون رانا ثناء اللہ، صوبائی وزراء ، اراکین اسمبلی اور پولیس حکام تقریب میں موجود تھے۔