- الإعلانات -

رینجرزمعاملہ۔۔۔اب سندھ میں کیاہونے جارہاہے؟

azam-azim-azam

چلیں…! آخرکار دس بار ہ دن تک ٹال مٹول کے بعد سندھ حکومت آئین کی شق 147کے تحت رینجرز کے اختیارات کا معاملہ ایک مشکوک اور اپنی مرضی کی مشروط قرارداد سندھ اسمبلی میں لانے میں کامیاب ہوہی گئی جسے صوبائی وزیرداخلہ سہیل انو رسیال نے پیش کی اور حیرت انگیز طور پراِس قرارداد کو آناََ فاناََ بغیر کسی بحث ومباحثہ کے سندھ اسمبلی سے رینجرز کے اختیارات میں 12ماہ کے لئے توسیع کی منظور بھی کرلی گئی خام اور قوی خیال یہی تھا کہ اِس مرتبہ سندھ حکومت رینجرز کے اختیارات میں آنکھ بند کرکے توسیع نہیں کرے گے بلکہ ڈاکٹر عاصم حسین کی گرفتاری کے بعد اپنے لوگوں کے گرد گھیراتنگ ہوتے دیکھ کر سندھ حکومت اِس معاملے کو اُس حد تک لے جائے گی جہاں تک یہ لے جانا چاہئے گی اور اِس نے ایسا ہی کیا اور اِس معاملے کو اِس حد تک لے گئی جہاںیہ گمان ہونے لگاتھاکہ سندھ حکومت نہ صرف وفاق بلکہ خود اپنے ہی صوبے میں تنہارہ گئی ہے اور اسمبلی میں تمام اپوزیشن جماعتیں رینجرز اختیارات کے معاملے پر ایک پیچ پر ہیں مگر ایک سندھ حکومت اکیلی کھڑی ہے جبکہ سندھ حکومت نے سندھ اسمبلی میں اپنی مرضی کی جو قرارداد پیش کی ہے وہ بیشک اِس کی سوچی سمجھی منصوبہ بند ی کے تحت پیش کی گئی ہے اور جس پر اپوزیشن کی جانب سے شدید مخالفت بھی کی گئی اور ایجنڈے کی کاپیاں بھی پھاڑ ی گئیں مگر اِس کے باوجود بھی سندھ حکومت اپنے مقاصد حاصل کرنے میں کامیاب ہوگئی۔مگر یہاں حیرت انگیز اور کئی سوالات کو جنم دینے والے نکات کے ساتھ مشکوک قرارداد کو سندھ اسمبلی سے کثریت رائے سے منظور کیا جانا اِس بات کی غماز ہے کہ سندھ حکومت نے اپنی مرضی کی مشرو ط قرار داد پیش کرکے اپنی سیاسست چمکالی ہے اور سندھ میں اپنے سیاسی کرپٹ عناصر اور سندھ کے صوبائی اداروں میں قابض لوگوں کو بچانے کے لئے اُس حد تک پہنچ چکی ہے اَب جہاں سے آپریشن ضرب عضب اور کرپٹ عناصر کے خاتمے کے لئے کراچی میں جاری آپریشن سے متعلق خود سندھ حکومت کا اپنا کردار مشکوک ہوگیاہے اور ساتھ ہی وہ سب پردے بے نقاب ہوگئے ہیں جو اَبتک سندھ حکومت نے اپنا اُوپر چڑھایا ہواتھا صرف ایک شخص کے ذریعے اپنے دوسرے کرپٹ لوگوں کو بچانے کے لئے سندھ حکومت اِس حد تک بھی جاسکتی ہے ایسا تو کسی نے سوچابھی نہیں تھا کہ سندھ حکومت رینجرز اختیارات کو محدود کرکے یہ ثابت کرے گی کہ و ہ سندھ سے کرپٹ عناصر کے خاتمے کے لئے سنجیدہ نہیں ہے بس سندھ حکومت نے رینجرز کے اختیارات کو جرائم پیشہ عناصر، دہشت گردی، ٹارگٹ کلنگ، بھتہ خوری ، اغوابرائے تاوان اور فرقہ واریت جیسے جرائم میں ملو ث عناصر تک محدود کرکے یہ ثابت کردیاہے کہ وہ صوبے سے کسی بھی صورت میں کرپٹ عناصر کا قلع قمع کرنے کے لئے رینجرز کو کلی اختیارات نہیں دے گی اگرچہ سندھ حکومت میں رینجرز اختیارات کے معاملے میں پیش کی جانے والی قرارد میں یہ بھی کہاگیاہے کہ جرائم پیشہ اور دہشت گردی میں ملوث عناصر پر یہ شق لاگو نہیں ہوگی اِنہیں رینجرز اپنے اختیارات کو استعمال کرتے ہوئے حراست میں لے سکے گی البتہ…!!کسی بھی جرائم پیشہ شخص کو مالی معاونت یا طبی سہولت کارکو شک کی بنیاد پر حراست میں لینے سے قبل رینجرز کو سندھ حکومت یا وزیراعلیٰ سندھ سے پیشگی اجازت لازمی لینی ہوگی یہ وہ مشروط اور مشکوک قرارداد ہے جو سندھ حکومت نے رینجرزاختیارات کومحدود کرنے کے لئے سندھ اسمبلی نے دس بارہ دن تک ہچر میچر کرنے کے بعد پیش کی اور پھر خود ہی منظوربھی کرلی۔ اِس منظر اور پس منظر میں اِس تو اچھاتھاکہ یہ قرارداد پیش ہی نہ کی جاتی جیسا تھا ویسا ہی رہنے دیاجاتا.. سندھ میں رینجرز اختیارات کے معاملے میں سندھ حکومت کی جانب سے اِس مشکوک اور مشروط قرارداد کو پیش کرنے سے بہتر تھاکہ حکومتِ سندھ وفاق کے چاراُوپشنز میں سے کسی ایک کے اطلاق کا انتظار کرتی تو سندھ حکومت مظلوم بن جاتی …اور پھر قانونی چارہ چوئی کے بعد اپنی مرضی کی یہی قرارداد پیش کرکے خود ہی منوالیتی تو پھر کوئی اِسے مشکوک اور مشروط قرارداد قرارنہ دیتاجیسا کہ اَب سندھ میں رینجرز اختیارات کے حوالے سے سندھ حکومت کا اپنا کردار مشکوک بن کر سامنے آگیاہے۔اگرچہ آج یہ سوچنے اور تشویش کی بات نہیں ہے کہ سندھ میں رینجرز کو محدود اختیارات نہ دیئے جانے کی وجہ سے کیا ہونے جارہاہے..؟ اَب کیا سندھ میں محدود رینجرزاختیارات کے معاملے پر وفا ق بھی بے بس ہوگیاہے یا پھر…؟ وفاق سندھ اسمبلی میں سندھ حکومت کی مرضی کی قرارداد کو چیلنج کرکے کچھ بہتر کرنے کا ارادہ رکھتاہے…؟یہ وہ سوالات ہیں جنہوں نے ایک عام پاکستانی کو پریشان کررکھاہے اور اَب وہ یہ سوچ رہاہے کہ اگر سندھ میں جاری وفاق اور سندھ حکومتوں کی لڑائی کی وجہ سے کچھ ایسا ویسا ہوگیاتو اِس کی ذمہ داری کس کے کاندھے پر جائے گی…؟ اور کون کھلے دل سے یہ قبول کرے گا کہ جو کچھ بھی ہواہے اِس کا یہ ذمہ دارہے یا ہمیشہ کی طرح لفظوں کی جنگ اِتنی طویل ہوتی چلی جائے گی کہ اصل حقائق گٹمڈہوجائیں گے اور بس یوں ہی سب ایک دوسرے کو موردِ الزام ٹھیراتے رہیں گے اور تاریخ کے اوراق پر دھول چڑھاتے چلے جائیں گے۔چلیں جبکہ یہاں ایک بڑی دلچسپ بات اور نقطہ یہ بھی ہے کہ سندھ حکومت نے رینجرز اختیارات کے حوالے سے جو مشکوک قرارداد خود پیش کی اور خود ہی بغیرکسی بحث و مباحثہ کے آناََ فاناََ منظور بھی کرلی ہے اِس کے سارے کے سارے نکات یہ ظاہر کررہے ہیں کہ سندھ حکومت نے محض اپنے لوگوں کی جانب کراچی آپریشن کا رخ موڑے جانے پر سارے کراچی آپریشن کو مشکوک بنانے کے لئے اپنی مرضی کی قرارداد پیش کرکے سارے آپریشن کو نیم مردہ گھوڑابنادیاہے جس سے کرپٹ عناصر کو تقویت ملے گی اور سندھ میں کرپشن کا بازار گرم سے گرم تر ہوتاچلاجائے گا جو کہ سندھ حکومت کی اپنی کارکردگی پر بھی کلنگ کا ٹیکہ ثابت ہوگا یہ ہے کہ جب تک حکومتِ سندھ یا وزیراعلیٰ سندھ کو رینجرز کسی سیاسی یا مشکوک شخص کی گرفتاری سے قبل پیشگی اجازت طلب نہیں کرے گی رینجرز اُسے ہرگز حراست میں نہیں لے سکے گی اور کسی بھی سرکاری ادارے میں چھاپے سے قبل سندھ حکومت اور وزیراعلیٰ سے اجازت لئے بغیرکسی شخص کو حراست میں لینے کی مجاز نہیں ہوگی حتیٰ کہ سندھ حکومت نے اپنی اِس مشکوک قرارداد کے ذریعے رینجرز کو اِس کا بھی پابند کردیاہے کہ وہ کسی بھی جرم یا کرپشن میں ملوث شخص کی سہولت کار کی صورت میں مالی یا طبی مددفراہم کرنے والے شخص کو شک کی بنیاد پر بھی حراست میں نہیں لے سکے گی جب تک کہ رینجرز سندھ حکومت یا وزیراعلیٰ سندھ کو اعتماد میں نہ لے یہ اُس وقت تک کسی بھی سہولت کار کو حراست میں لینے کی مجاز نہیں ہے..اِن نکتے کے بعد کیا اَب ایسانہیں لگ رہاہے کہ سندھ حکومت کرپٹ عناصر کو سپورٹ کریگی اور جس سے جرائم میں معاونت کرنے والے تو بچ سکیں گے اور صوبے میں جرائم و کرائم کی شرح میں مزید اضاضہ ہوگا…؟اگرآج بھی وفاق کو سندھ سے جرائم و کرائم اور دہشت گردی ، کرپشن ، ٹاگٹ کلنگ، بھتہ خوری ، اغوابرائے تاوان اور فرقہ واریت کو واقعی جڑ سے خاتمہ کرناہی مقصود ہے تو پھر سندھ حکومت کی جانب سے سندھ اسمبلی میں رینجرزاختیارات کو محدود کرنے کی اِس کی مرضی کی مشروط قرارداد کی منظورکو کالعدم قراردے کر وفا ق کو سندھ کو کرپٹ عناصر سے پاک کرنے کے لئے اپنے وہ چار کے چار یا چاروں میں کوئی دو یا تین اُوپشنز فی الفور سندھ میں لاگو کرنے ہوں گے جو ابھی تک وفاق نے سندھ میں لاگو نہیں کئے ہیں یقینی طور پر جس سے سندھ میں حقیقی معنوں میں رینجرز کو مکمل طور پر ایسے تمام اختیارات حاصل ہوسکیں گے جن کے بیدریغ استعمال سے رینجرز سندھ سے جرائم و کرائم اور دہشت گردی ، کرپشن ، ٹاگٹ کلنگ، بھتہ خوری ، اغوابرائے تاوان اور فرقہ واریت کو واقعی جڑ سے خاتمہ کرنے میں کامیاب ہوکر نیشنل ایکشن پلان میں حقیقی سُرخرو ہوجائے گی ۔