- الإعلانات -

جرمنی ، شامی مہاجرین , عربی گائیڈ بن گئے

برلن ۔  جنگ زدہ شام اور عراق سے بے گھر ہوکر جرمنی پہنچنے والے بعض مہاجرین اب عجائب گھروں میں عربی کے گائیڈ بن گئے ہیں اور وہ وہاں آنے والے عرب زائرین کی ان کی اپنی زبان میں رہ نمائی کررہے ہیں۔اس طرح انھیں وقتی روزگار مل گیا ہے اور جرمنی میں سیاحت کو فروغ مل رہا ہے۔شام کے مغربی صوبے ادلب سے تعلق رکھنے والے محمد الصبیح ایسے ہی ایک مہاجر ہیں جو برلن کے ایک بڑے عجائب گھر میں گائیڈ کے فرائض انجام دے رہے ہیں۔وہ ادلب کے شہر معر النعمان میں واقع مشہور عجائب گھر میں ملازم تھے جب جنگ کی آگ ان کے صوبے اور شہر تک پہنچ گئی تو وہ گذشتہ سال اگست میں مہاجرت کی زندگی اختیار کرنے پر مجبور ہوگئے۔برلن کے اس مشہور عجائب گھر نے جب مہاجرین کے لیے عربی زبان کے گائیڈ مقرر کرنے کا منصوبہ بنایا تو صبیح نے بھی اس کے لیے درخواست دی اور انھیں منتخب کر لیا گیا۔انھوں نے بتایا کہ انھیں شام میں اپنے کام سے بہت محبت تھی۔اب آج برلن میں عجائب گھر میں گائیڈ بن کر ایسے محسوس ہورہا ہے۔جیسے میری زندگی لوٹ آئی ہے۔صبیح بوڈے میوزیم میں آنے والے شامی،عراقی اور عربی زبان بولنے والے دوسرے مہاجرین کو سیر کراتے ہیں