- الإعلانات -

کیا امریکا خطرناک سول وار کی طرف بڑھ رہا ہے؟

نیویارک تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ امریکی حکومت ایک ارب ساٹھ کروڑ سے زیادہ مختلف قسم کے انتہائی خطرناک ہتھیار خرید چکی ہے. امریکی دفاعی تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ امریکی انتظامیہ کی جانب سے بھاری اسلحہ کے ذخائر کی خریداری نے اس خدشے کو تقویت دی ہے کہ ” کیا امریکہ کی داخلی صورتحال کسی خطرناک سول وار کی طرف بڑھ رہی ہے” ۔تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ امریکی حکومت ایک ارب ساٹھ کروڑ سے زیادہ مختلف قسم کے انتہائی خطرناک ہتھیار خرید چکی ہے اس کے علاوہ بھاری تعداد میں خریدے کے ایمونیشن راؤنڈ نے مختلف خدشات کو جنم دیا ہے کیونکہ ایمونیشن کو امریکی فوج غیر ملکی کارروائیوں میں تکنیکی طور پر استعمال نہیں کر سکتی ۔حیرانگی کی بات یہ ہے کہ یہ تمام خریداری ڈیپارٹمنٹ آف ہوم لینڈ سیکورٹی نے کی ہے جو ملک میں امن و امان کی ذمہ دار ہے جبکہ کسی ملک پر حملہ کرنے اور فوج کے استعمال کے لیے ہتھیاروں کی تمام خریداری پینٹاگون کرتی ہے اب چونکہ حالیہ دنوں میں جدید اسلحہ کی خریداری ڈیپارٹمنٹ آف ہوم لینڈ سیکورٹی نے کی ہے ۔ اس سے یہ تقویت ملتی ہے کہ امریکی خفیہ ایجنسیوں نے حکومت کو مستقبل میں کسی بڑے المیہ کے رونما ہونے کے خدشہ سے آگاہ کر دیا ہو گا ۔دفاعی تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ ساڑھے چار کروڑ راونڈر صرف پوائنٹ فور ہولو پوائنٹ پسٹل کے لیے خریدے گے ہیں اور جینوا کنونشن کے تحت ہولو پوائنٹ ہتھیار کو کسی ملک کے خلاف جنگ میں استعمال نہیں کیا جا سکتا اسکا استعمال صرف اندرون ملک ہی ہو سکتا ہے ۔یہ سوال انتہائی اہم ہے کہ اگر امریکہ افغانستان اور عراق سے آہستہ آہستہ واپسی کا عمل شروع کیے ہوئے ہے تو ایمونیشن کی اتنی بھاری مقدار کیوں خریدی گئی ؟ رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ امریکہ کی مختلف ریاستوں میں آئے روز اسلحہ کے استعمال کی وجہ سے کئی جانیں ضائع ہو رہی ہیں اور عوام کی جانب سے امریکی انتظامیہ پر یہ دباو بڑھ رہا ہے کہ عوام کے ہتھیار رکھنے پر پابندی عائد کی جائے ۔ ایک ایسے پس منظر میں جب عوام پر ہتھیار رکھنے کی پابندی کسی بھی وقت لگ سکتی ہے تو امریکی حکومت کی جانب سے ایک ارب ساٹھ کروڑ راونڈر کی خریداری یقیناً نہ صرف حیرت انگیز بلکہ مشکوک بھی ہے ۔ایک اور حیرت انگیز بات یہ ہے کہ ہوم لینڈ سیکورٹی نے ایک نیا ٹینڈر جاری کیا ہے جس میں اتنی ہی مقدار میں ایمونیشن کی مزید خریداری کی بات کی گئی ہے ۔ ایک طرف تو امریکی عوام کو نہتا کیا جارہا ہے تا کہ کسی بھی سول وار کی صورت میں مزاحمت کم سے کم رہے تو دوسری طرف ہوم لینڈ سیکورٹی کو ایمونیشن کے نئے ذخائر ، تابکاری سے نمٹنے کی گولیوں اور بُلٹ پروف جیکٹوں سے مسلح کیا جارہا ہے یہ صورتحال ایک خطرناک سمت کی طرف اشارہ دے رہی ہے ۔