- الإعلانات -

ناردرن بائی پاس پر مرنے والے دہشتگرد ایم کیوایم کے سیف ہاﺅس میں چھپے ہوئے تھے.ترجمان رینجرز

کراچی: ترجمان رینجرز نے کہاہے کہ رینجرز پر ایم کیوایم کا چار کارکنان کے ماورائے قتل کا الزام گمراہ کن پراپیگنڈہ ہے ،کراچی میں نئے آپریشن کا آغاز کر دیاگیاہے ،گرفتاری پر مزاحمت کرنے والے سے طاقت سے نمٹا جائے گا ۔ تفصیلات کے مطابق ترجمان رینجرز کا کہناتھا کہ ناردرن بائی پاس پر مارے جانے والے چاروں دہشتگرد ایم کیوایم کے سیف ہاﺅس میں چھپے ہوئے تھے اور وہ حسین بخاری کے قتل میں ملوث تھے ۔ترجمان رینجرز کاکہناتھا کہ جس میں کراچی کا امن خراب کرنے والے کسی بھی شخص کو نہیں چھوڑ اجائے گا سخت کارروائی کی جائے گی ،دہشتگردوں کے مالی مددگار اور ہمدردوں کا بھی یہ حشر ہو گا جو ناردرن بائی پاس پر چاروں دہشتگردوں کا ہواہے ۔ ترجمان رینجرز کا کہناتھا کہ متحدہ کے تمام لاپتہ کارکنان ان کے اپنے پاس ہیں ،نائن زیرو پر چھاپے کے بعد انہیں نائن زیر و اطراف سے نکال کر سیف ہاﺅسز میں منتقل کر دیاگیاتھا ،سیف ہاﺅس کا استعمال ’را‘کا مخصوص طریقہ ہے ۔ان کا کہناتھا کہ کراچی کو تمام ٹارگٹ کلرز سے پاک کیا جائے گا ،کسی بھی ٹارگٹ کلر کومعاف نہیں کیاجائے گا۔