- الإعلانات -

پنجاب کو شدت پسند ان کے ہمدرد’ اور ‘ آمر کے دوست’ چلارہے ہیں. بلاول بھٹو زرداری

پاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے مسلم لیگ ن کی حکومت پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ پنجاب کو ‘ شدت پسند’، ‘ ان کے ہمدرد’ اور ‘ آمر کے دوست’ چلارہے ہیں، جن سے اب کوئی مفاہمت نہیں ہوگی۔لاہور میں پی پی پی کے کسان کنونشن سے خطاب کے دوران بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ لاہور کو دہشت گردوں کے یاروں کے حوالے کردیا گیا، مزدوروں کے دشمنوں ، کشمیر کی بات نہ کرنے والوں اور انتہا پسندوں کے ہمدردوں سے کوئی مفاہمت نہیں ہوسکتی، پیپلزپارٹی کی سیاست غریبوں کی سیاست ہے اب جاگیرادارانہ نظام نہیں چلے گا۔بلاول بھٹو زرداری نے دعویٰ کیا کہ مسلم لیگ ن کی حکومت نے اپنی کسان مخالف پالیسیوں سے کاشتکاروں اور عوام کے لیے جینا مشکل بنا دیا ہے۔انہوں نے سوال کیا کہ ن لیگ نے چھ ماہ میں لوڈشیڈنگ ختم نہ کرنے پر اپنا نام بدلنے کا اعلان کیا تھا اب حکمران بتائیں کہ انہیں کس نام سے پکاروں؟بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ حکومت کے ایجنڈے میں ترقی ہے نہ ہی مساوات، اس سے بڑا ظلم کیا ہوگا کہ ایک لیٹر پیٹرول پر 23اور ڈیزل پر 30روپے ٹیکس لیا جارہا ہے اور پیٹرول کی قیمت میں کمی کا فائدہ بھی عوام کو نہیں دیا جارہا۔ان کا کہنا تھا کہ ن لیگ کی ہر پالیسی کسان اور زراعت دشمن رہی ہے، پنجاب کے حکمران نہ تو خادم ہیں اور نہ ہی اعلیٰ۔انہوں نے مزید کہا کہ ملک کے اہم ادارے بغیر سربراہوں کے کام کررہے ہیں،انہوں نے سوال کیا کہ اداروں میں سربراہوں کی تعیناتی میں میرٹ کہاں گئی۔بلاول بھٹو نے کہا کہ کسان اور مزدور پس رہا ہے، جبکہ حکمراں میٹرو بس سے بے وقوف بنارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ میرا سوال ہے کہ اصغر خان کیس کا فیصلہ آخر کب آئے گا، ہمیں دہشت گردی سے نہ ملاؤ بلکہ انصاف کے تقاضے پورے کرو۔پی پی پی چیئرمین کا کہنا تھا کہ حکمرانو اپنی سمت درست کرلو، وقت بدل چکا ہے، پیپلز پارٹی کسانوں کے ساتھ کھڑی ہے۔