- الإعلانات -

6 لاکھ ڈالر تنخواہ لیکن کوئی بھی بندہ کام کرنے نہ آیا۔

لندن: اچھی نوکری اور بہترین تنخواہ کے لیے شہری دربدر کے دھکے کھاتے ہیں لیکن دنیا میں ایک نوکری ایسی بھی ہے جس میں تنخواہ اس قدر زیادہ ہے کہ کسی کو یقین نہ آئے لیکن پھر بھی لوگ یہ نوکری کرنے سے گھبراتے ہیں اور یہ کام مرغیوں کے چوزوں کی جنس دیکھنے کا ہے۔ اس نوکری میں کام کرنے والے کو سال میں تقریباً 6 لاکھ ڈالر ماہانہ ملتے ہیں اور اسے ہر چوزے کو اٹھا کر اس کے جنسی اعضاءکو دیکھ کر یہ اندازہ لگانا ہوتا ہے کہ وہ چوزہ نر ہے یا مادہ۔اس وقت برطانیہ میں پولٹری فارم مالکان کو اس نوکری کے لئے افراد کی اشد ضرورت ہے جس کی وجہ یہ بتائی جاتی ہے کہ لوگ کسی بھی طرح یہ کام کرنے کے لئے تیار نہیں ہورہے۔ دیکھنے میں یہ کام انتہائی معمولی لگتا ہے لیکن اس کام کو کرنے میں بہت مہارت اور صبر کی ضرورت ہوتی ہے۔ ہر چوزے کو اٹھا کر اسے الٹا کرنا اور پھر اس کے اعضاءمخصوصہ کو غور سے دیکھ کر یہ اندازہ لگانا کہ وہ چوزہ نر ہے یا مادہ۔ اس کام کو کرنے والے افراد کا کہنا ہے کہ جب وہیہ کام کرتے ہیں تو انہیں بہت احتیاط سے اور تمام تر توجہ کے ساتھ یہ کام سرانجام دینا ہوتا ہے۔ ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ جب وہ یہ کام تمام کرکے گھروں کو جاتے ہیں تو تب بھی ان کے سر پر یہ منظر سوار رہتے ہیں اور انہیں ہر طرف چوزے اور ان کے مخصوص اعضاءنظر آتے ہیں۔ یہ کام کرنے والے افراد کو ہر روز 800 سے 1200 چوزے دیکھنے ہوتے ہیں اور غلطی کا چانس صرف 2فیصد تک قابل قبول ہوتا ہے اور اس سے زیادہ غلطی کرنے پر تنخواہ کٹ جاتی ہے۔ اس وقت برطانیہ میں 100 سے 150 افراد ایسے ہیں جو یہ کام کرتے ہیں اور گزشتہ سال کس نے بھی اس کام میں دلچسپی نہیں لی اور کوئی بھی نیا بندہ یہ کام کرنے نہ آیا۔