- الإعلانات -

بھارت کا جنگی جنون،روس ،چین اور ایران کے صبر کا پیمانہ لبریز،باضابطہ موقف جاری،پاکستان کی ایک اور فتح

ماسکو/تہران/بیجنگ(این این آئی)روس ،چین اور ایران نے پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگی پراظہار تشویش کرتے ہوئے مشورہ دیاہے کہ دونوں ملک طاقت کے بجائے سیاسی اورسفارتی ذرائع استعما ل کرکے مسائل کا حل تلاش کریں، پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگی خطے کے لیے نقصان دہ ہے،اس سے دہشت گردوں کو فائدہ ہورہاہے دونوں ممالک کوامن خراب کرنے والے اقدامات سے پرہیز کرناچاہئیے اورباہمی اختلافات براہ راست رابطوں سے حل کرناچاہئیے۔ سارک جنوبی ایشیا میں ترقی کا ایک اہم فورم ہے، امید ہے علاقائی ترقی اور امن کے لیے سارک اپنا کام کرتی رہے گی۔میڈیارپورٹس کے مطابق چین نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کی صورت حال پر گہری نگاہ ہے اور پاکستان کا کشمیر پر موقف اہم اور سنجیدہ ہے۔چینی وزارت خارجہ نے مسئلہ کشمیر کو مشاورت اور مذاکرات کے ذریعے حل کرنے پر زوردیااور امیدظاہرکی کہ پاکستان اور بھارت باہمی اختلافات کو بات چیت سے حل کرلیں گے۔ایک سوال پرترجمان چینی وزارت خارجہ کا کہنا تھا کہ سارک جنوبی ایشیا میں ترقی کا ایک اہم فورم ہے، امید ہے علاقائی ترقی اور امن کے لیے سارک اپنا کام کرتی رہے گی۔ترجمان ایرانی وزارت خارجہ بہرام قاسمی کا کہنا تھا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگی خطے کے لیے نقصان دہ ہے،اس سے دہشت گردوں کو فائدہ ہورہاہے دونوں ممالک کوامن خراب کرنے والے اقدامات سے پرہیز کرناچاہئیے اورباہمی اختلافات براہ راست رابطوں سے حل کرناچاہئیے۔روسی وزارت خارجہ کے مطابق لائن آف کنٹرول پر پاک بھارت کشیدگی قابل تشویش ہے، دونوں ملک اختلافات کوبڑھاوادینے کے بجائے انہیں سیاسی اور سفارتی ذرائع سے حل کریں، روس دہشت گردی کے خلاف فیصلہ کن جنگ کے حق میں ہے اورتوقع ہے پاکستان تمام دہشت گرد گروپوں کے خلاف موثراقدامات کرے گا۔