- الإعلانات -

جنرل راحیل شریف برطانیہ کے ہائی پروفائل سکیورٹی اجلاسوں میں شریک ہوں گے

لندن : پاکستان کے چیف آف آرمی سٹاف جنرل راحیل شریف برطانیہ کے دورے میں برطانوی حکام کے ساتھ ہائی پروفائل سکیورٹی اجلاسوں میں شریک ہوں گے، جن میں سکیورٹی کے ساتھ ساتھ جنوبی ایشیا کی صورتحال پر بھی تبادلہ خیال ہوگا۔رائل یونائیٹڈ سروسز انسٹیٹیوٹ نے تصدیق کی ہے کہ پاکستان کے آرمی چیف یکم اکتوبر کو ”پاکستان سکیورٹی کانفرنس 2015 ئ“ سے خطاب کریں گے، جس میں سرکردہ تھنکرز، پریکٹشنرز اور سرکاری حکام موجودہ سٹرٹیجک لیسی اور پاکستان کو درپیش ملکی اور علاقائی سکیورٹی کے مسائل پر بحث کریں گے۔ اس موقع پر جنرل راحیل شریف علاقائی تناظر میں سکیورٹی مسائل بشمول پاکستان کی ملکی سکیورٹی، دہشت گردی کے خلاف جنگ، پاکستان کی دہشت گردی کے خلاف مسلسل کارروائیاں اور کراچی آپریشن جیسے ضوعات کا احاطہ کریں گے۔ وہ اس امر پر بھی روشنی ڈالیں گے کہ پاک فوج ملکی و غیرملکی خطرات کو کس نظر سے دیکھتی ہے۔ اسی اجلاس میں پاک برطانیہ سکیورٹی ارینجمنٹس پر بھی تبادلہ خیال ہو گا۔ RUSI کے ریسرچ فیلو کمال عالم نے بتایا کہ موجودہ آرمی چیف، جو اپنے عہدے کی میعاد کے دو سال پورے کرچکے ہیں، نے پاک فوج کے سابق سربراہ جنرل اشفاق کیانی سے بالکل مختلف رویہ اپنایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جنرل کیانی متحرک نہیں تھے، وہ خاص طور پر کراچی کے ملے میں دیکھو اور انتظار کرو کی پالیسی پر عمل پیرا تھے۔ موجودہ فوجی قیادت اور ڈی جی آئی ایس آئی رضوان اختر کے لیے ملکی سکیورٹی ان کی اولین ترجیح ہے۔ کمال عالم نے کہا کہ رطانوی نقطہ نظر سے پاکستان انسداد دہشت گردی میں ایک اہم اتحادی ہے اور علاقائی سکیورٹی کے تناظر میں نہ صرف ہندوستان اور افغانستان بلکہ مغربی ایشیا اور مشرق وسطیٰ کے لیے بھی پاکستان ایک اہمیت خاص اہمیت رکھتا ہے۔