- الإعلانات -

ترکی میں 2خودکش حملے, حملہ آوروں کا تعلق کالعدم کردستان ورکرز پارٹی سے ہوسکتا ہے۔

انقرہ کے گورنر ارجان توپاجا کامیڈیا سے بات کرتے ہوئےکہناتھاکہ اس بات کا امکان ہے کہ حملہ آوروں کا تعلق کالعدم کردستان ورکرز پارٹی سے ہوسکتا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ خودکش حملے میں میں جو مواد استعمال کیا گیا،اس سے کردستان ورکرز پارٹی کی جانب ہی اشارہ ہوتا ہے۔

انقرہ کے گورنرکا کہناتھاایک حملہ آور مرد تھا، جس کی شناخت کی جاچکی ہے جبکہ ایک خاتون تھیں،جن کی شناخت نہیں کیا جاسکی

یاد رہے کہ رواں برس 15 جولائی کو ترک صدر طیب اردگان کی حکومت کا تختہ الٹنے کے لیے ہونے والی فوجی بغاوت میں ناکامی کے بعد سے ترکی میں ایمرجنسی نافذ ہے اور بغاوت کی سازش میں ملوث افراد کے خلاف کریک ڈاؤن کا سلسلہ جاری ہے۔

واضح رہے کہ دوسری جانب کرد باغیوں کی جماعت کردستان ورکرز پارٹی کی جانب سے حملوں میں بھی اضافہ ہوگیا ہے،جسے ترکی جانب سے دہشت گرد تنظیم قرار دیا جاتا ہے۔