- الإعلانات -

وائٹ ہاؤس کا نیا مکین کون؟ ووٹنگ کا عمل جاری

واشنگٹن: امریکا میں 58 ویں صدارتی انتخاب کے لیے پولنگ کا عمل شروع ہوچکا ہے جس میں ڈیموکریٹک صدارتی امیدوار ہلیری کلنٹن اور ریپبلکن پارٹی کے امیدوار ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان کانٹے کا مقابلہ متوقع ہے۔

امریکی عوام آج اپنے 58 ویں صدر کو منتخب کرنے جارہے ہیں جس کے لیے مختلف ریاستوں میں پولنگ کا عمل شروع ہوچکا ہے، پولنگ کا آغاز روایتی طور پر ریاست نیو ہیمپشائر کے 3 قصبوں سے ہوا، جہاں ووٹر اجتماعی طور پر پولنگ اسٹیشنز پہنچے اور انہوں نے اپنا حق رائے دہی استعمال کیا۔ جس کے بعد مختلف ریاستوں میں بتدریج پولنگ شروع ہوتی جارہی ہے۔ ڈیموکریٹک صدارتی امیدوار ہیلری کلنٹن نے اپنے شوہربل کلنٹن کے ہمراہ نیویارک میں اپنا ووٹ کاسٹ کیا۔

ہیلری کلنٹن اپنی رہائشگاہ کے قریب واقع ایلیمنٹری اسکول میں ووٹ کاسٹ کرنے پہنچیں تو وہاں کھڑے لوگوں کی بڑی تعداد جمع ہوگئیں اور انہیں خوش آمدید میڈیم صدر کہہ کر پکارنے لگے جس کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ملک کے سب سے بڑے آفس کے لئے خود کو ووٹ دے کر بہت خوشی محسوس ہورہی ہے جب کہ لاکھوں لوگ اس ملک کے مستقبل کا فیصلہ کرنے نکلیں ہیں اور میں اپنی ذمہ داریاں پوری طرح سے جانتی ہوں۔

صدارتی انتخاب میں ہیلری کلنٹن اور ٹرمپ میں کانٹے کا مقابلہ متوقع ہے اور دونوں ہی اپنی کامیابی کے لیے ایڑی چوٹی کا زور لگا رہے ہیں۔ بلوم برگ کی طرف سے جاری نئے سروے میں ہلیری کو 44 اور ٹرمپ کو41 فیصد عوام کی حمایت حاصل ہے، فوکس نیوز کے سروے کے مطابق 48 فیصد لوگ ہیلری اور 44 فیصد ٹرمپ کے حمایتی ہیں جب کہ سی این این کے سروے  میں ریاست پنسلوینیا اور نیوہیمپشائر میں بھی ہیلری  آگے ہیں۔

ہیلری کلنٹن  نے عوام سے ووٹ دینے کی بھرپور اپیل کی ہے جب کہ امریکی خاتون اول مشل اوباما نے ہیلری کو صدر کےلئے بہترین انتخاب قراردیا، امریکی صدر اوباما نے بھی  ہیلری کا ساتھ دینے پرزور دیتے ہوئے کہا کہ ہم تفریق نہیں بلکہ ایک متحد امریکا چاہتے ہیں۔

امریکی ریپبلکن صدارتی امیدوار ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ صدر منتخب ہو کر وہ ملک سے مذہبی انتہاپسندی کا خاتمہ کر دیں گے اور شامی پناہ گزینوں کی آمد روک دی جائے گی جب کہ انہوں نے ایک بار پھر میکسیکو کی سرحد پر دیوار بنانے کا اعلان کیا ہے۔

امریکی صدر کا انتخاب الیکٹورل کالج کے ذریعے بالواسطہ طور پر ہوتا ہے اور جیتنے والے صدارتی امیدوار کو حتمی کامیابی کے لیے 538  الیکٹورل ووٹوں میں سےکم از کم 270  ووٹ حاصل کرنا ہوں گے۔