- الإعلانات -

ووٹر لسٹوں میں گھپلے نہ ہوتے تو ووٹوں میں تین ہزار کا فرق بھی باقی نہیں رہنا تھا۔ علیم خان

لاہور : تحریک انصاف نے این اے 122سے انتخابی شکست تسلیم کر لی۔ انتخاب کے غیر سرکاری نتائج کے بعد پریس کانفرنس میں این اے 122سے تحریک انصاف کے امیدوار علیم خان نے کہا ہے کہ وہ دن دور نہیں جب این اے 122تحریک انصاف کے پاس ہو گی، ووٹر لسٹوں میں گھپلے نہ ہوتے تو ووٹوں میں تین ہزار کا فرق بھی باقی نہیں رہنا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ضمنی الیکشن دو سیٹوں پر تھا جن میں سے ایک تحریک انصاف نے جیت لی ہے ۔تخت لاہور کے چار پائیوں میں دو انہوں نے نکال دیے ہیں۔ تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی نے ثابت کر دیا ہے کہ لاہور ن لیگ کا قلعہ نہیں ، ن لیگ نے تمام تر ریاستی طاقت کے استعمال کرکے ضمنی انتخاب جیتا، اس کے باوجود اُن کے ووٹ کم ہوئے ۔ انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کے سیکڑوں ووٹ دوسرے شہروں میں منتقل کر دیے گئے ، اُن کے کارکنوں نے ہر مرحلے پر انتخابی بے ضابطگیاں روکنے کی کوشش کی۔ انتخابی ہار کے باوجود اُن کے حوصلے بلند ہیں،شعیب صدیقی کی کامیابی نے تحریک انصاف کی اخلاقی فتح پر مہر ثبت کر دی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اگلے الیکشن میں پورا الیکشن جیت کر دکھائیں گے ۔تحریک انصاف کے رہنما چوہدری محمد سرور نے کہا ہے کہ تحفظات کے باوجود تحریک انصاف این اے 122کے نتائج تسلیم کرتی ہے ، چند ہزار سے شکست ہار نہیں ہوتی،علیم خان کی ہار کو وہ شکست نہیں ، فتح مانتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ شعیب صدیقی کو کامیابی پر مبارکباد پیش کرتے ہیں، 2013ء کا انتخاب ابھی تک سوالیہ نشان ہے ، وہ جمہوریت پر یقین رکھتے ہیں اور اسے مضبوط دیکھنا چاہتے ہیں ، ڈی ریل کرنا نہیں چاہتے ۔ انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کا اگلا چیلنج بلدیاتی انتخابات ہیں، ن لیگ نے تمام ریاستی مشینری استعمال کرکے ضمنی الیکشن جیتا ، انہیں سوچنا چاہیے کہ پاکستان میں اُن کا مستقبل کیا ہے