- الإعلانات -

گولہ بارود کے جنون میں مبتلا بھارت کا اپنے اسلحہ کے انبار میں مزید اضافے کا فیصلہ.

نئی دہلی: جنوبی کوریائی حکومت 2016ء میں ٹینکوں کے ضروری پرزے بھارت بھجوائے گی، مقامی پارٹنر لارسن اینڈ اوبرو کے ساتھ مل کر پونے شہر میں ٹینک تیار کئے جائیں گے، ٹینکوں کی خریداری پر تقریباً 80 کروڑ امریکی ڈالر خرچ آئے گا،رپورٹ. گولہ بارود کے جنون میں مبتلا بھارت نے اپنے اسلحہ کے انبار میں مزید اضافہ کرنے کیلئے سام سنگ کمپنی کے بنائے ہوئے 100 ٹینک خریدنے کا فیصلہ کرلیا ۔ دفاعی جریدے ’’جینز ڈیفنس ویکلی‘‘ کا کہنا ہے کہ بھارتی فوج ایک طویل عرصے سے نئے ٹینک خریدنے کی منتظر تھی اور اب روس کے ٹینکوں کو رد کرتے ہوئے سام سنگ کمپنی کے بنائے ہوئے ٹینک خریدنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔جریدے نے ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ 2013ء اور 2014ء کے دوران بھارت نے صحرائی علاقے میں دونوں قسم کے ٹینکوں کے تجربات کئے جن میں روس کے MSTA۔Tٹینک کو رد کرکے سام سنگ ٹیک ون کے کے 9 تھنڈر ٹینک کو منتخب کیا گیا۔ بھارتی دفاعی حکام کا کہنا ہے کہ کے 9 ٹینک روسی ٹینکوں سے گن، آپریشن موبیلٹی، سپیڈ، نشانے کی درستی اور فائر ریٹ کے لحاظ سے بہتر قرار پائے۔بھارتی وزارت دفاع توقع کررہی ہے کہ جنوبی کوریائی حکومت 2016ء میں ان ٹینکوں کے ضروری پرزے بھارت بھجوائے گی جس کے بعد اس کے مقامی پارٹنر لارسن اینڈ اوبرو کے ساتھ مل کر پونے شہر میں یہ ٹینک تیار کئے جائیں گے۔ ان ٹینکوں کی خریداری پر بھارت تقریباً 80 کروڑ امریکی ڈالر (تقریباً 80 ارب پاکستانی روپے) خرچ کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔