- الإعلانات -

پاکستانی خاندان کو ممبئی کے ریلوے سٹیشن پر رات گزارنا پڑی۔

ممبئی: چھ افراد پر مشتمل ایک خاندان بدھ کو دن بھر ممبئی میں قیام کیلئے ہوٹل کی تلاش کرتا رہا لیکن اپنی بہترین کوششوں کے باوجود اسے ہر ہوٹل سے انکار سننے کو ملا، جس کی وجہ ان کا مبینہ طور پر پاکستانی ہونا تھا۔ این ڈی ٹی وی کی ایک رپورٹ میں بتایا گیا کہ ہر جانب سے انکار سننے کے بعد متاثرہ خاندان کو ممبئی کے مرکزی ریلوے سٹیشن پر رات گزارنا پڑی۔ یہ خاندان بڑی امیدوں کےساتھ اپنے بیمار بیٹے کی صحت یابی کی دعا کرنے حاجی علی درگاہ آیا تھا لیکن جب انہوں نے شہر میں قیام کیلئے کوششیں کیں تو انہیں ہر ہوٹل سے نہ سننے کو ملی۔ تین خواتین، ایک بارہ سالہ بچہ اور دو مردوں پر مشتمل اس خاندان کے سربراہ عنایت علی نے بتایا ’ ہوٹل کے عملے نے بتایا کہ ہم پاکستانی ہیں اور ان کے پاس ہمیں ٹھہرانے کی اجازت نہیں‘۔ ’انہوں نے ہمیں یہ بھی بتایا کہ ان کے پاس فارم سی دستیاب نہیں اور یہ کہ ہمیں پولیس سے یہ فارم حاصل کرنا چاہیے‘۔ تھر ایکسپریس کے ذریعے کراچی سے جودھ پور پہنچنے کے بعد بدھ کو ممبئی آنے والے خاندان کو، ویزے ہونے کے باوجود، قیام کیلئے مشکلات کا سامنا ہے کیونکہ کوئی بھی ہوٹل انہیں فارم سی دینے پر آمادہ نظر نہیں آتا۔ ریاستی قوانین کے تحت غیر ملکیوں کو اپنے یہاں ٹھہرانے والے ہوٹلوں کیلئے ضروری ہے کہ وہ مہمانوں کی تفصیلات پر مبنی فارم سی 24 گھنٹوں کے اند ر اندر رجسٹریشن حکام تک پہنچائیں۔ قانون کے تحت فارم سی پُر کرنا اور اسے بھجوانا متعلقہ ہوٹل کی ذمہ داری ہے۔ بدھ کی رات میڈیا کے کچھ لوگوں کی مداخلت کے بعد ریلوے پروٹیکشن فورس نے متاثرہ خاندان کو پناہ فراہم کی۔