- الإعلانات -

چین کاون چائلڈپالیسی تبدیل کرنے کا اعلان

بیجنگ: چین نے’ون چائلڈپالیسی‘ تبدیل کردی ، اب والدین کو دوسرا بچہ پیداکرنے کی بھی اجازت ہوگی جس کا اطلاق ابتدائی طورپر تین صوبوں میں کردیاگیاجبکہ دیگرصوبوں نے بھی محکمہ صحت سے رابطے شروع کردیے تاہم ابتدائی طورپر یہ واضح نہیں ہوسکاکہ کتنے وقفے کے بعد وہ دوسرا بچہ پیداکرسکتے ہیں۔چینی میڈ یا کے مطابق نیشنل پیپلز کانگریس کی مجلس قائمہ نے ون چائلڈ پالیسی میں تبدیلی کے لیے اصلاحات نافذ کرنے کا اعلان کردیا ہے، پالیسی میں تبدیلی کے لیے قائمہ کمیٹی میں چھ روز تک بحث جاری رہی۔بتایاگیاہے کہ کمیٹی نے بالآخر پالیسی کو مرحلہ وار ختم یا اس میں ترمیم کا فیصلہ کیا اور خاندانی منصوبہ بندی سے متعلق نئی پالیسی کو ابتدائی طور پر تین صوبوں میں نافذ کردیاگیا۔چین کے قومی ادارے برائے صحت اور خاندانی منصوبہ بندی کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ملک میں خاندانی منصوبہ بندی سے متعلق نئی پالیسی کا اطلاق تین صوبوں، ڑی جیانگ، آنہوئی اور جیانگ شی میں کردیا گیا ہے، نئی پالیسی کے تحت اب ہر وہ خاندان جس میں میاں یا بیوی میں سے ایک اپنے والدین کی اکلوتی اولاد ہو تو وہ دو بچے پیدا کرسکیں گے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ مزید 9 صوبوں نے بھی نئی پالیسی کے اطلاق کیلئے اپنے پلان کو جمع کرادیا ہے۔یادرہے کہ چین میں 1979ئ سے ون چائلڈ پالیسی نافذ تھی جس کی وجہ سے 400 ملین بچوں کی پیدائش متاثرہوئی اور ملک کو انسانی وسائل کا بھی سامنا کرنا پڑرہاتھا،نوجوانوں کی آبادی میں اضافے کیلئے حکومت نے آخرکار آبادی پر کنٹرول کرنے کی پالیسی کو نرم کردیااورپالیسی میں اصلاحات لاتے ہوئے دو بچوں کے رکھنے کی اجازت دے دی گئی ہے، نئی پالیسی آئندہ چھ سال تک جاری رہے گی جبکہ اس سے ملک کی آبادی میں مزید ایک کروڑ تیس لاکھ بچوں کی آمد متوقع ہے۔