- الإعلانات -

سال 2016 : اہل کراچی کئی بیماروں کے رحم و کرم پر

سال 2016 میں کراچی سمیت اندرون سندھ میں ڈینگی،کانگو ،نگلیریا سمیت دیگر امراض نے عوام پر تابڑ توڑ حملے کئے۔ ہزاروں کو طویل عرصے کیلئے پلنگ سے لگا دیا تو کئی کو ابدی نیند ہی سلادیا۔

ڈینگی نے کراچی سمیت سندھ کے تمام اضلاع کے 2500 سے زائد افراد کو اپنا نشانہ بنایا اور 3 کی جانیں لیں ۔بین الاقوامی دباؤ کے باعث پولیو کے خلاف کارکردگی خاصی متاثر کن رہی جس کی واضح مثال کراچی میں 2016 میں پولیو کا ایک کیس سامنے آیا جبکہ سندھ کے دیگر اضلاع میں کل آٹھ کیسز سامنے آئے۔

حکام کہتے ہیں ساری توجہ پولیو پر رکھنے کے باعث روٹین کی ایمونائزیشن بری طرح متاثر ہورہی ہے جب تک حفاظتی ٹیکوں کو بہتر نہیں کیا جائے گا پولیو سمیت دیگر قابل اعلاج بیماریوں پر قابو پانا مشکل ہوگا۔

عید الاضحی کے موقع پر کانگو نے عوام کو پریشان کیا اور نو افراد کی زندگیوں کے چراغ گل کردیے۔ہولناک موت کی علامت نگلیریا وائرس نے بھی موسم گرما میں 7 افراد کو اپنا نشا نہ بنایا اور سال کے آخر میں چکن گنیا نے 35 ہزارسے زائد افراد کو متاثر کیا خوش قسمتی سے کوئی ہلاکت سامنے نہیں آئی۔