- الإعلانات -

’’اکیلے تو مرغی انڈا نہیں دے سکتی لیکن۔۔۔‘‘ فیاض الحسن چوہان نےپرویز مشرف کے حق میں لنگوٹ کس لیا

صوبائی وزیر اطلاعات پنجاب فیاض الحسن چوہان نے کہاہےکہ جنرل پرویز مشرف کے متعلق فیصلے کے قانونی اور معاشرتی پہلو ہیں جنہیں دیکھنا ضروری ہے،قوم حیران ہے کہ 2010 ء کے قانون کا اطلاق 2007 ء کے ایکٹ پر ہو رہا ہے،افواج پاکستان کو اس فیصلے سے ایک جھٹکا لگا، مشرف نے سعودی عرب میں آپریشن کرکے اللہ کے گھر کو دہشت گردوں سے محفوظ بنایا، پرویز مشرف نے بھارتی ایجنٹوں کو بھی منہ توڑ جواب د یے، بھارتی میڈیا پر بھی انہوں نےمحب وطنی کافیصلہ کیا،معاشی دہشت گردضمانت لےکرباہرآرہے ہیں،اکیلے تومرغی انڈا نہیں دےسکتی لیکن یہ کیسےہوسکتاہے کہ ایک شخص  آئین کو معطل کرے؟آج پورے پاکستان میں سوشل میڈیا اور دیگر پر لوگ مشرف کے حق میں بات کرتے ہیں،اگلے تین سے چار روز میں لوگ سڑکوں پر مشرف کے حق میں نکلیں گے۔

نجی ٹی وی کے  مطابق  پنجاب اسمبلی کے احاطے میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئےصوبائی وزیر اطلاعات فیاض الحسن  چوہان نے کہاکہ افواج پاکستان نے پچھلے 12 برسوں میں جو قربانیاں دیں ہیں وہ کسی سے ڈھکی چھپی نہیں،پر ویز مشرف کے خلاف آرٹیکل 6 کے تحت فیصلہ کیا گیا جبکہ آرٹیکل 6 میں منسوخی کی شق 18 ویں ترمیم کے ذریعے شامل کی گئی اور اس وقت پوری پاکستانی قوم حیران و پریشان ہے کہ 2010 ء کے قانون کا اطلاق 2007 ء کے ایکٹ پر ہو رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ اکیلے تو مرغی انڈا نہیں دے سکتی لیکن یہ کیسے ہو سکتا ہے کہ ایک شخص آئین کو معطل کرے،جو بھی شامل ہوگا مدد و تعاون میں وہ بھی ویسے ہی آرٹیکل 6 کی کارروائی میں شامل ہو گا لیکن سب اس بات پر حیران ہیں کہ ایک فرد کا انتخاب کیا گیا،افواج پاکستان کو اس فیصلے سے ایک جھٹکا لگا‘زاہد حامد اس وقت کے وزیر قانون نواز شریف حکومت میں شامل رہے۔ فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ پچھلے 12 برسوں میں میمو گیٹ سکینڈل کے علاوہ کئی کیس آئے جس سے لوگ سمجھتے تھے کہ ابھی مارشل لاء لگے گا لیکن ایسا کچھ نہ ہوا، جس ملک میں کرپشن عام ہو جائے اس ملک کی سیکورٹی خدشات کا شکار ہو جاتی ہے۔صوبائی وزیر نے کہا کہ معاشی دہشت گرد ضمانت لے کر باہر آرہے ہیں، معاشی دہشت گرد، نواز شریف، شہباز شریف، آصف زرداری، خورشید شاہ اور دیگر نے کرپشن سے ملک کی سیکورٹی کو نقصان پہنچایا،پاکستان کی عدالتیں اور ادارے پاکستان میں اتحاد و اتفاق کی بات پر گامزن ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم نے کہا تھا فل فلیج کیس چلاتے جس میں سیاستدان و بیورو کریٹس اور کابینہ کے لوگ بھی شامل ہوتے تو فیصلہ کے وقت فل فلیج پیکج چلتا۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ یہ نیا پاکستان ہے جہاں حسان نیازی کے خلاف ایف آئی آر کٹی اور گرفتاری کے لیے چھاپے مارے جا رہے ہیں،سانحہ ماڈل ٹاون میں حکمرانوں نے اپنی مرضی کی ایف آئی آر کٹوائی۔انہوں نے کہا کہ بلاول بھٹو زرداری آپ کو علم نہیں 12 اکتوبر 1999 ء کو اصل مارشل لاء لگاتھا،اُس وقت آپ بچے تھے۔