- الإعلانات -

”فیصلے میں طالبان کے الفاظ نظر آرہے ہیں ،ذہن میں رکھنا ہو گا موجودہ حکومت اس کیس میں مدعی ہے “سابق لیفٹیننٹ جنرل امجد شعیب حکومت کے خلاف ہی بول پڑے

سابق لیفٹیننٹ جنرل امجد شعیب نے کہا ہے کہ جس طرح جلدی جلدی میں یہ فیصلہ کیا گیا ،اس سے یہ لگ رہا تھا کہ یہ فیصلہ ادارے کو ٹارگٹ کرنے کے لیے کیا گیا ،آج اس فیصلے میں استعمال ہونے والے غیر مناسب الفا ظ سے ثابت ہو گیا کہ یہ کھیل کیوں کھیلا جا رہا ہے ۔ان کا کہنا تھا کہ ملٹر کورٹس نے 72طالبان کو سزا دی ،پشاور ہائی کورٹ نے انہیں بری کردیا ،آج کا فیصلہ بھی طالبان کے الفاظ کی طرح نظر آتا ہے ۔انہوں نے کہا اگرچہ حکومت اس معاملے میں فوج کے ساتھ ہے لیکن یہ ذہن میں رکھنا ہوگا کہ حکومت پاکستان اس کیس میں مدعی ہے ، خواہ وہ نواز شریف کی حکومت تھی یا اب والی ہے۔

ڈی جی آئی ایس پی آر کی میڈ یا ٹاک پر رد عمل دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اب یہ دیکھا جائے گا کہ ادارے کو کیوں ٹارگٹ کیا جا رہا ہے ،یہ اضطراب کی صورتحال ہے جس کی ذمہ داری عدلیہ پر ہے ۔امجد شعیب نے کہا کہ کیا وجہ تھی کہ 12اکتوبر کو بھی آئین تو ڑا گیا جو کہ اتنا ہی بڑا جرم تھا لیکن اس کے بارے میں عدالت نے کہا کہ جنرل مشرف نے ٹھیک کیا تھا اس کے علاوہ کوئی راستہ نہیں تھا ۔