- الإعلانات -

پی ٹی آئی کی حکومت ضم ہونے والے قبائلی علاقوں میں ترقیاتی کاموں کیلئے 83ارب روپے کے کثیر فنڈز فراہم کررہی ہے

وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی کی حکومت ضم ہونے والے قبائلی علاقوں میں ترقیاتی کاموں کیلئے 83ارب روپے کے کثیر فنڈز فراہم کررہی ہے تاکہ ان اضلاع کی محرومیاں دور ہوسکیں اورقبائلی علاقے بھی صوبے کے دیگر علاقوں کے برابر آسکیں، صوبائی کابینہ میں ناقص کارکردگی دکھانے والے وزراء کو فارغ کیا جائے گا، عنقریب صوبائی کابینہ میں توسیع ہوگی اور ڈیرہ اسماعیل خان کو بھی صوبائی کابینہ میں نمائندگی دی جائے گی، ڈیرہ اسماعیل خان کی ترقی کیلئے کثیر فنڈز مختص کئے گئے ہیں،ہم نے جنڈولہ کے52کلومیٹر روڈ کی تعمیر کیلئے کام شروع کیا ہے، اپوزیشن ہمارے ترقیاتی کاموں پر سیاست چمکا کر ان کاموں کا کریڈٹ لینا چاہتی ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے دورہ ڈیرہ کے موقع پر وفاقی وزیر امور کشمیر و گلگت بلتستان سردار علی امین خان گنڈہ پور کی رہائشگاہ” الامین ہائوس” میں پریس کانفرنس کے دوران کیا۔ اس موقع پر وفاقی وزیر سردار علی امین خان گنڈہ پور، رکن قومی اسمبلی محمد یعقوب شیخ، وزیر اعلیٰ کے مشیر برائے قبائلی اضلاع اجمل خان وزیر، کمشنر ڈیرہ جاوید خان مروت، ریجنل پولیس آفیسر فلائیٹ لفیٹیننٹ (ر) سید امتیاز شاہ و دیگر بھی موجود تھے۔وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان کی ڈیرہ آمد پر کمشنرڈیرہ جاوید خان مروت، ریجنل پولیس آفیسر فلائیٹ لفیٹیننٹ (ر) سید امتیاز شاہ، ڈپٹی کمشنر محمد عمیر، ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر کیپٹن(ر) حافظ واحد محمود اور وقافی وزیر علی امین خان گنڈہ پور نے ان کا استقبال کیا۔وزیر اعلیٰ نے اپنے دورہ ڈیرہ میں مختلف ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح بھی کیا۔ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان نے کہا کہ ہم نے ضلع ٹانک میں لوگوں کے پینے کے صاف پانی کی فراہمی کیلئے 30کروڑ کے فنڈز جاری کردیئے ہیں، جس سے ضلع ٹانک میں پینے کے پانی کے مسائل حل ہوجائینگے۔ ضلع ٹانک سے تحریک انصاف کی صوبائی اسمبلی میں کوئی نمائندگی نہیں ہے لیکن وہاں کی نمائندگی میں خود کررہا ہوں۔ وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان نے کہا کہ سابقہ ادوار میں خیبر پختونخوا سے زیادتیاں کی گئیں ان نمائندوں نے صوبے اور علاقے کی ترقی کیلئے کوئی کام نہیں کیا۔ 350ارب روپے کی لاگت سے 338کلومیٹر روڈ کی تعمیر کیلئے صوبائی ایکسپریس وے تعمیر کی جارہی ہے۔ چشمہ رائٹ بنک کینال کے اہم منصوبے کو سی پیک میں شامل کرایا ہے جس پر 120ارب روپے کی لاگت آئے گی اور اس اہم کثیر المقاصد منصوبے سے 2لاکھ86ہزار ایکڑ اراضی سیراب ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ٹیچنگ ہسپتال ڈیرہ کیلئے سی ٹی سکین مشین اور بچوں کا وارڈ تعمیر ہوگا، پنیالہ کو تحصیل کا درجہ دینگے، زرعی یونیورسٹی کیلئے جلد مزید کام کیا جائے گا۔ ٹریفک وارڈنز کا نظام متعارف کرایا جارہا ہے،انٹر گیمز کیلئے دو نئے جمنزیم کیلئے جلد کام شروع ہوگا۔ گومل یونیورسٹی کے مسائل حل کرینگے اور جلد ہی پہاڑ پور میں بھی گومل یونیورسٹی کا سب کیمپس بنایا جائے گا۔