- الإعلانات -

وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت پاکستان تحریک انصاف کی کور کمیٹی کا اجلاس

 وزیراعظم عمران خان نے پاکستان کے وسیع تر مفاد، جمہوریت کے تسلسل، معاشی اور سیاسی استحکام کے لئے اتحادی جماعتوں کے تعاون پر شکریہ ادا کرتے ہوئے اتحادیوں کے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر ہر ممکن اقدام اٹھانے کے عزم کا اظہار کیا ہے، وزیراعظم نے عوامی مفاد میں قانون سازی پر اطمینان کا اظہار کیا اور قانون سازی کے لئے قائم کمیٹی کو ہدایت دی کہ عوامی ریلیف اور مشکلات کے تدارک کے لئے قانون سازی بشمول احتساب آرڈیننس اور اپوزیشن کی ترامیم کو باریک بینی سے دیکھے ،کرپشن کے خلاف زیروٹالرنس کے حکومتی عزم کو سامنے رکھتے ہوئے قانون سازی کی راہ میں حائل رکاوٹیں دور کرنے کیلئے مشاورت کے زریعے قانون سازی کے عمل کو آگے بڑھایا جائے، وزیراعظم نے اس عزم کو دہرایا کہ کسی طرح بھی ہم اپنے اداروں کی ساکھ کو مجروح نہیں کرنے دیں گے، افواج پاکستان اور قومی سلامتی کے ادارے ہمارا فخر اور وقار ہیں، کور کمیٹی نے بھارتی فضاءمیں مسلمانوں کے ساتھ جڑی نفرت پر تحفظات کا اظہار کیا ۔ وہ پاکستان تحریک انصاف(پی ٹی آئی ) کی کور کمیٹی کے اجلاس سے خطاب کر رہے تھے۔اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوا ن نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان کی قیادت میں کور کمیٹی کے ہونے والے اجلاس میں پاکستان کی موجودہ سیاسی اور معاشی صورتحال پر تفصیل سے تبادلہ خیال ہوا ۔ اجلاس میں ایک دفعہ پھر وزیراعظم عمران خان نے اپنی تمام اتحادی جماعتوں کا شکریہ ادا کیا ہے جنہوں نے پاکستان کے وسیع تر قومی مفاد کے لئے ان کی قیادت پر اعتماد کا اظہار کیا، اتحادیوں کے حوالے سے چلنے والی تمام افواہیں اور قیاس آرائیاں دم توڑ چکی ہیں۔ وزیراعظم نے کورکمیٹی کو ان تمام اقدامات بشمول معاشی محاذ، سیاسی میدان،کشمیر کے ساتھ جڑے قومی بیانیہ سے آگاہ کیا ۔وزیراعظم کی معاون خصوصی ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے بتایا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں تیسری مرتبہ مسئلہ کشمیر پر بحث ہوئی ہے، عمران خان کی کشمیریوں کیلئے جدوجہد کو تقویت دینے کے لئے وزیر خارجہ امریکہ کے دورہ پر ہیں۔ وزیراعظم عمران خان نے کور کمیٹی میں تمام سیاسی قیادت کو یہ ہدایات دیں کہ 5 فروری کو یوم کشمیر کے بین الاقوامی ایجنڈا نمبر ون کے حل کے لئے موثر روڈ میپ تیار کیا جائے، حکومت اورپارٹی سطح پر تقریبات میں عوام متحد ہو کر یکجہتی کا اظہار کریں ۔انہوں نے بتایا کہ کورکمیٹی کے اجلاس میں وزیراعظم عمران خان نے آئی ایل ایف کے حوالے سے قانونی اصلاحات فریم ورک کے بارے میں آگاہ کیااور ہدایات دیں کہ ایک جامع پلان ترتیب دیا جائے تا کہ عوام کی بہتری کے لئے اقدامات کو عوام کے فائدے سے جوڑا جاسکے۔ پارلیمنٹ میں قانون سازی کا عمل مثبت انداز سے آگے بڑھنے پر وزیراعظم نے اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ عوامی مفاد میں جو قانون سازی ہوئی ہے اس سے پارلیمنٹ کی ساکھ بہتر ہوئی ہے ، پارلیمنٹ عوام کے ریلیف، مشکلات کے تدارک کے لئے قانون سازی کرتی ہے تو عوام پارلمینٹرین کے پیچھے کھڑے ہوتے ہیں۔ عوامی ریلیف اور سہولیات کے لئے قانون سازی کے عمل کو آگے بڑھانے کے لئے قائم کمیٹی کو وزیراعظم نے ہدایات دیں کہ نیب آرڈیننس کے حوالے سے ہمارے بل اور اپوزیشن کی ترمیم کو باریک بینی سے دیکھے ،پی ٹی آئی کے منشور کے مطابق ” کرپشن پر زیرو ٹارلرنس” سے متعلق ترجیحات پر سمجھوتہ کیے بغیر قانون سازی کی راہ میں حائل رکاوٹیں مشاورت سے دور کی جائیں کیونکہ ہماری سینٹ کی اکثریت نہیں ہے ۔وزیراعظم عمران خان نے فیصلہ کیا ہے کہ عوام کے ساتھ درد اور احساس کے رشتے کو تقویت دینے کے لئے ضلع کی سطح پر ایسے پروگرام ترتیب دیئے جائیں جس سے عوام کا براہ راست مفاد وابستہ ہو۔ وزیراعظم نے ہدایت دی کہ پارٹی کے اراکین پارلیمنٹ ،مقامی قیادت عوام کے دکھ درد بانٹتے ہوئے نظر آئیں۔ کورکمیٹی کے اجلاس میں وزیراعظم نے یوٹیلیٹی سٹورز پر 7ارب کے پیکیج ، 172پناہ گاہوں، انصاف صحت کارڈ،کفالت کارڈ، لنگر خانوں، نوجوان ہنر مند پرگرام، کامیاب نوجوان، احساس پرگرام کے ساتھ جڑے اقدامات کے لئے ایک کمیٹی تجویز کی جسے ہدف دیا گیا ہے کہ عوام کے ریلیف سے جڑا ہوا سیاسی بیانیہ اور موثر حکمت عملی بنائی جائے ۔ کور کمیٹی نے بھارتی فضاءمیں مسلمانوں کے ساتھ جڑی نفرت پر تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے واضح کیا ہے کہ بھارت نے مسلمانوں کی آر ایس ایس نظریہ کے زریعے نسل کشی کا ایک مذموم پلان تیار کیا ہے جس کی پاکستان شدید مذمت کرتا ہے ۔کورکمیٹی نے کا بینہ کے ممبر کی جانب سے نجی ٹاک شو میںاختیار کیے گئے رویئے پر بھی تحفظات کا اظہار کیا ۔ وزیراعظم عمران خان نے اس عزم کو دہرایا کہ کسی طرح بھی ہم اپنے اداروں کی ساکھ کو مجروح نہیں کرنے دیں گے، افواج پاکستان اور قومی سلامتی کے ادارے ہمارا فخر اور وقار ہیں ،بہادر افواج لائن آف کنٹرول اور ورکنگ باﺅنڈری اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں جو قربانیاں دے رہیی ہیں ان کو رائیگاں نہیں جانے دیں گے ۔اجلاس میں وزیراعظم عمران خان نے آزاد جموں و کشمیر ،بلوچستان ،کے پی کے اور قبائلی اضلاع میں حالیہ بارشوں اور شدید برفباری سے ہونے والے جانی و مالی نقصانات پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے تمام متعلقہ صوبائی حکومتوں کو این ڈی ایم اے کے ساتھ ملکرنقصانات کا جامع ڈیٹا اکٹھے کرنے کی ہدایت دی اور کہا کہ این ڈی ایم اے کی ریلیف سرگرمیوں کو ملکر آگے بڑھائیں ۔ ایک سوال کے جواب میں وزیراعظم کی معاون خصوصی ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا اجلاس چین کے تعاون کے بغیر ہو ہی نہیں سکتا ،وزیراعظم نے اس سے پہلے بارہا چین کے ساتھ لازوال رشتے کی بات کی ہے اور کورکمیٹی کو بھی اس حوالے سے آگاہ کیا ہے کہ چین ہمارا ایسا دوست ہے جس نے ہر مشکل میں نہ صرف مدد فراہم کی بلکہ ہر ممکنہ تعاون کا بھی یقین دلایا ،وقت کے ساتھ ساتھ چین کے ساتھ دوستی اور مضبوط ہوگی ۔ میڈیا امور سے متعلق کمیٹی کے قیام کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ تمام سٹیک ہولڈرز سے نام مانگے ہیں ، آئندہ ہفتے میڈیا مالکان کے نمائندوں کو اکٹھا بیٹھا کر اتفاق رائے پیدا کرنے کے بعد وزیراعظم کے پاس جائیں گے تا کہ روز روز کا مسئلہ حل ہوجائے