- الإعلانات -

،ایک پاکستان میں ایک نہیں بلکہ دو پاکستان ہیں بلاول بھٹو زرداری

 پارلیمنٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ جب سے حکومت آئی ہے اس کا رویہ درست نہیں ہے موجودہ سیشن مہنگائی فوڈ سیکیورٹی پر نہیں بلایا گیا، صرف آرڈینس میں ترامیم کے لئے بلایا گیا ہے ترامیم کے لئے اپوزیشن اور حکومت کے درمیان ڈبیٹ ہوتی ہے لیکن حکومت کا رویہ جمہوری نہیں ہے صدر ہاوس آرڈینس کی فیکٹری بنا ہوا ہے ہم اس کی مذمت کرتے ہیں انہوں نے کہا کہ ایک بار پھر سیاسی گرفتاریوں کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے محسن داوڑ اور علی وزیر احتجاج کر رہے تھے محسن داوڑ کو گرفتار کیا گیا اور مقدمات بنائے گئے اس کی ہم مذمت کرتے ہیں اگر ان کے بیانات پر کسی کو اعتراض ہے تو اس کا جواب دیا جانا چاہئے آج اسمبلی میں کہا گیا کہ محسن داوڑ پہلے معافی مانگیں لیکن مجھے نہیں پتہ انہوں نے کیا بیان دیا تھا ؟حکومت نے ان کے بیان پر سنسر شپ لگائی ہوی ہے، فاٹا سے آنے والے اراکین کو بولنے کا حق ملنا چاہئے ،جنہوں نے دہشت گردی کا سامنا کیا ،افغان وار کے دوران فاٹا کے نوجوانوں نے بہت قربانیاں دیں،جن علاقوں میں آپریشن ہوا وہاں کی عوام کو فوری طور پر بحال کیا جانا چاہئے تھا ،پاکستان پیپلزپارٹی نے فاٹا کے عوام کی ڈیویلمپنٹ کے لئے حصہ زیادہ رکھا تھا ،جہاں جہاں آپریشن ہوا سب کو واپس گھر بھیجا، بے نظیر کارڈ کا انتظام کیا تھا لیکن موجودہ حکومت نے ابھی تک آئی ڈی پیز کو مکمل طور پر بحال نہیں کیا، پاکستان پیپلزپارٹی مطالبہ کرتی ہے کہ آئی ڈی پیز کو فوری طور پر گھر بھیجا جائے۔