- الإعلانات -

پاک ترک سفارتی روابط میں سنہرے باب کا اضافہ ہوا،وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی

 وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ ترک صدر کی طرف سے مقبوضہ کشمیر اور ایف اے ٹی ایف اہم ایشوز پر ٹھوس اور واضح مو¿قف اپنانا غیر معمولی اور مثالی ہے، پاکستان اور ترکی کے سفارتی روابط میں سنہرے باب کا اضافہ ہوا ہے، اب وقت آگیا ہے کہ پاکستان اور ترکی اپنے روابط کو اقتصادی شراکتداری میں بدلیں، اقتصادی سٹریٹجک فریم ورک سے دونوں ملکوں کے مابین معاشی تعلقات کو نئی بلندی حاصل ہوگی۔ انہوں نے ترک صدر کے دورہ پاکستان اور پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کے حوالے سے اپنے خصوصی بیان میں کہا کہ ترک صدر رجب طیب اردوان نے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں جس طرح اہم ایشوز کے حوالے سے ٹھوس اور واضح موقف اپنایا وہ مثالی ہے۔ ترک صدر کا اپنے خطاب میں کشمیر کے مسئلے کو اپنا اور ترکوں کا مسئلہ کہنا، غیر معمولی ہے ایسا بیان پہلے کسی ترک صدر کی طرف سے سامنے نہیں آیا۔ ایک آزاد ریاست، ہماری خارجہ پالیسی کے اہم نکتے کو اپنا نکتہ کہہ رہی ہے اس سے بڑی بات اور کیا ہو سکتی ہے۔ انہوں نے کہاکہ میں سمجھتا ہوں کہ ہمارے سفارتی روابط میں ایک سنہرے باب کا اضافہ ہوا ہے۔ ہمارا پڑوسی ایف اے ٹی ایف میں پاکستان کی درجہ بندی کم کرنے کیلئے سرتوڑ کوششیں کر رہا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ایف اے ٹی ایف کا اگلا اجلاس جو پیرس میں ہونا ہے اس اجلاس سے قبل ہی آج اپنے خطاب میں ترک صدر نے کھل کر پاکستان کے حق میں بات کی ہے۔ ترک صدر نے واضح پیغام دیا ہے کہ ایف اے ٹی ایف کے معاملے پر ترکی پاکستان کے ساتھ کھڑا تھا، کھڑا ہے اور کھڑا رہے گا۔ انہوں نے علامہ اقبال کی فکر، تحریک خلافت میں برصغیر کے مسلمانوں کے کردار اور پاکستان اور ترکی کے مابین دو طرفہ تعلقات کے تاریخی حوالوں پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ ہم ان روابط کو اقتصادی شراکت داری میں بدلیں۔ وزیر خارجہ نے کہا کہ مجھے یہ بتاتے ہوئے خوشی محسوس ہو رہی ہے کہ ہم گذشتہ ایک سال سے اقتصادی سٹریٹجک شراکت داری فریم ورک پر خاموشی سے کام کر رہے تھے کل ہمارا اس سٹریٹجک اقتصادی شراکت داری فریم ورک پر ترکی کے ساتھ اتفاق رائے ہوگیا ہے آج انشاءاللہ ترک صدر رجب طیب اردگان اور وزیر اعظم عمران خان اس سٹریٹجک اقتصادی شراکت داری فریم ورک پر دستخط کر دیں گے۔ اس اقتصادی اسٹریٹیجک فریم ورک سے پاکستان اور ترکی کے مابین معاشی تعلقات کو نئی بلندی حاصل ہو گی۔ انہوں نے کہا کہ دفتر خارجہ میں دن رات کام کرکے ترکی کے ساتھ معاہدوں حتمی شکل دی گئی۔ آج ترکی اور پاکستان کے مابین 12/13 یادداشتوں پر دستخط متوقع ہیں۔ صدر طیب اردگان کے خطاب کے بعد تمام قیاس آرائیاں دم توڑ گئی ہیں