- الإعلانات -

گلوبل پورٹل کے اجراء سے بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو سہولت میسر ہوگی اور ان کا اپنے ملک میں سرمایہ کاری کے حوالے سے اعتماد بحال ہو گا،

 وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ گلوبل پورٹل کے اجراء سے بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو سہولت میسر ہوگی اور ان کا اپنے ملک میں سرمایہ کاری کے حوالے سے اعتماد بحال ہو گا، سمندر پار پاکستانیوں کو جب تک محفوظ ماحول فراہم نہیں ہوگا وہ سرمایہ کاری کرنے میں دقت محسوس کریں گے، معیشت کی ترقی امن و امان کی بہتر صورتحال اور قانون کی عمل داری سے منسلک ہے، دولت کی پیداوار (وویلتھ کریئیشن) کی بدولت ہی ملکی معیشت ترقی کرے گی۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے سیف سٹی اتھارٹی ، دائرہ کار ، کارکردگی اور پولیس خدمت مرکز کے گلوبل پورٹل کے اجراء پر بریفنگ کے لئے منعقدہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت سیف سٹی اتھارٹی ، دائرہ کار ، کارکردگی اور پولیس خدمت مرکز کے گلوبل پورٹل کے اجراء پر بریفنگ دی گئی۔ ایم ڈی سیف سٹی اتھارٹی نے بریفنگ کے دوران آگاہ کیا کہ سیف سٹی اتھارٹی کے اقدامات کی بدولت لاہور دنیا کے سو محفوظ ترین شہروں میں شامل ہو گیاہے۔ انہوں نے وزیر اعظم کو بریفنگ میںبتایا کہ سیف سٹی اتھارٹی کا وژن پنجاب میں محفوظ، پرا من اور خوشحال شہر ہیں، ہماری اولین ترجیح عوام کو سہولت فراہم کرنا اور پولیس کلچر میں تبدیلی لانا ہے۔ سیف سٹی اتھارٹی کے اقدامات کی بدولت لاہور میں بین الاقوامی کرکٹ ، کبڈی ورلڈ کپ اور لٹریری فیسٹیول (ادبی میلوں) کا انعقاد ہوا۔ سیاحوں کی تعداد میں اضافہ سیف سٹی اتھارٹی کے کامیاب اقدامات کا مظہر ہیں۔ پولیس خدمت مرکز کے گلوبل پورٹل کے اجراء کے حوالے سے وزیراعظم کو آگاہ کیا گیا کہ ان مراکز کی بدولت عوام الناس کو 14 سہولیات کی فراہمی ایک ہی چھت تلے میسر ہو سکے گی۔ گلوبل پورٹل کے اجراء کی بدولت بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو سفارتخانے اور وزارت خارجہ کے ذریعے ون کلک آپشن سے بغیر کسی رکاوٹ کے متعدد سہولیات کی فراہمی ممکن ہو گی۔ وزیراعظم عمران خان نے پولیس خدمت مرکز کے گلوبل پورٹل کا اجرا کرتے ہوئے کہا کہ گلوبل پورٹل کے اجراء سے بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو سہولت میسر ہوگی اور ان کا اپنے ملک میں سرمایہ کاری کے حوالے سے اعتماد بحال ہو گا۔ وزیراعظم نے گلوبل پورٹل کے اجراء کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے کہا کہ گلوبل پورٹل کا اجرا پولیس کا قابل تحسین اور متاثر کن اقدام ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہماری ترجیح ہے کہ ملک میں امن و امان اور قانون کی عملداری ہر صورت ممکن بنائی جائے۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ سمندر پار پاکستانیوں کو جب تک محفوظ ماحول فراہم نہیں ہوگا وہ سرمایہ کاری کرنے میں دقت محسوس کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ معیشت کی ترقی امن و امان کی بہتر صورتحال اور قانون کی عمل داری سے منسلک ہے، دولت کی پیداوار (وویلتھ کریئیشن) کی بدولت ہی ملکی معیشت ترقی کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہماری اولین ترجیح ہے کہ قانون کی عملداری کے ذریعے عوام الناس کی جان و مال کے تحفظ کو یقینی بنائیں، اس ضمن میں پولیس کا کردار کلیدی حیثیت رکھتا ہے ۔ وزیراعظم نے کہا کہ جس قدر تیزی سے ہماری آبادی میں اضافہ ہو رہا ہے، ہمیں محدود وسائل میں رہتے ہوئے قانون کی عملداری اور امن و امان قائم کرنے کے لیے اپنی بہترین ترجیحات مرتب کرنی ہیں۔وزیراعظم نے کہا کہ ہمیں محدود وسائل میں بہتر سروس ڈلیوری دینے کے لئے ان تھک محنت کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں سیاحت کی بے پناہ صلاحیت ہے۔ پاکستان میں سیاحت کا فروغ بھی قانون کی عملداری اور امن و امان کی صورتحال میں بہتری پر منحصر ہے۔ وزیر اعظم نے ہدایت دی کہ ملک میں محفوظ ماحول کی فراہمی ہر صورت ممکن بنائی جائے، بڑے جرائم پیشہ عناصر اور قبضہ مافیا کے خلاف بھرپور ایکشن لیں۔ وزیراعظم نے یہ بھی ہدایت کی کہ محکمہ پولیس میں سزا اور جزا کے نظام کو رائج کرنے پر بھرپور توجہ دی جائے، اس کے بغیر پولیس میں بہتری ممکن نہیں ہو گی۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ دو چیزیں ہمارے مستقبل کے لئے بہت اہم ہیں۔ وزیر اعظم نے کہا کہ بچوں کو ہر قسم کے استحصال سے تحفظ فراہم کرنا اور ملاوٹ کی روک تھام کے حوالے سے میں آپ سے توقع کرتا ہوں کہ ان دو اقدامات کے خلاف آپ بھرپور ایکشن لیں گے کیونکہ ان پر ہماری آنے والی نسلوں کا مستقبل منحصر ہے۔ انہوں نے ہدایت دی کہ بچوں کو تحفظ فراہم کرنے اور ملاوٹ کے خلاف ایکشن میں ضلعی انتظامیہ کے تعاون سے بھرپور اقدامات کئے جائیں