- الإعلانات -

ملکی تاریخ میں پہلی بار زراعت سے متعلق پارلیمانی کمیٹی بنائی گئی ہے، زرعی تحقیق کو عالمی معیار کے مطابق لانا ہو گا پارلیمانی کشمیر کمیٹی کے چیئرمین سید فخر امام کا زراعت پر قومی مکالمے سے خطاب

پارلیمانی کشمیر کمیٹی کے چیئرمین سید فخر امام نے کہا ہے کہ پاکستان کی پارلیمانی تاریخ میں پہلی بار زراعت سے متعلق پارلیمانی کمیٹی بنائی گئی ہے، زرعی ملک ہونے کے باوجود ہم اس شعبہ میں آگے نہیں بڑھ سکے، کسان موجودہ دور میں کھاد کی قیمت میں 400 روپے فی بوری کمی پر خوش ہے۔ جمعرات کو زراعت پر قومی مکالمے سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان میں زرعی تحقیق کو عالمی معیار کے مطابق لانا ہو گا۔ پاکستان میں آبادی میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ رواں سال کاشتکاروں کو ان کی فصل کامناسب معاوضہ ملنا چاہیے جبکہ اس کے ساتھ ساتھ صارفین پر بھی بوجھ نہیں ڈالنا چاہیے۔ کھانے کے تیل کی پیداوار میں اضافہ ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں زرعی تحقیقی اداروں پر بڑی سرمایہ کاری کی ضرورت ہے۔ گزشتہ 25 سال میں زراعت پر مناسب توجہ نہیں دی گئی۔ ہمیں زرعی شعبے پر بھر پور توجہ دینے کی ضرورت ہے ۔ موجودہ حکومت نے کاشتکاروں کو ریلیف فراہم کرنے کے لئے کئی اقدامات اٹھائے ہیں