- الإعلانات -

کوروناوائرس سے بچاﺅ کے لئے احتیاط، روک تھام اور بعد ازاں بحالی کے اقدامات حکومتی حکمت عملی کا حصہ ہوں گے، وزیراعظم کے مشیر ملک امین اسلم کا پریس کانفرنس سے خطاب

وزیراعظم کے مشیر برائے موسمیاتی تبدیلی ملک امین اسلم نے کہاہے کہ کورونا ایک عالمی وباءہے جس سے نمٹنے کے لئے اجتماعی کوششوں کی ضرورت ہے، اس مقصد کے لئے وائرس سے بچاﺅ کے لئے احتیاط، روک تھام اور بعد ازاں بحالی کے اقدامات حکومتی حکمت عملی کا حصہ ہوں گے، وزارت موسمیاتی تبدیلی نے موجودہ صورتحال میں روزگارکی اہمیت کا ادراک کرتے ہوئے 10 بلین ٹری پراجیکٹ کو کھولا ہے جس کے تحت 65 ہزار محنت کشوں کا روزگار بحال ہو گیا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعہ کو یہاں نیشنل ڈیزاسٹر رسک مینجمنٹ فنڈ (این ڈی آر ایم ایف) کے چیئرمین لیفٹیننٹ جنرل (ر) ندیم احمد کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس کے باعث پیدا ہونے والی ہنگامی صورتحال میں این ڈی آر ایمم ایف نے ضروری طبی سامان کی خریداری کے لئے این دی ایم اے کو فوری طور پر 8 ارب روپے جاری کئے، اس فنڈ سے خریدے گئے سامان کی پہلی کھیپ جمعہ کو چین سے پاکستان پہنچ گئی ہے، مزید آرڈرز بھی دیئے گئے ہیں اور دیگر سامان بھی پاکستان پہنچ جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ عالمی بینک سے ساڑھے 9 روپے ارب روپے کی فنڈنگ حاصل ہو گی جس سے ایسے منصوبے شروع کئے جائیں گے جو دیگر مقاصد کے علاوہ روگار کی فراہمی کا بھی ذریعہ بنیں گے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ صورتحال کے پیش نظر 10 بلین ٹری سونامی منصوبہ پر کام روک دیا گیا تھا تاہم روزانہ اجرت پر کام کرنے والے محنت کشوں کی مشکلات کو سامنے رکھتتے ہوئے وزیراعظم کی اجازت سے اس پر دوبارہ کام شروع کر دیا گیا ہے جس کے نتیجہ میں شجرکاری بڑھنے کے ساتھ ساتھ 65 ہزار افراد کا روزگار بھی بحال ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا مقصد زیادہ سے زیادہ درخت لگانے کے ساتھ ساتھ لوگوں کو گرین روزگر کی فراہمی بھی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کو خوراک کی ضرورت کے پیش نظر زیادہ سے زیادہ پھلدار درخت لگانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ملک امین اسلم نے کہا کہ کورونا سے دنیا کا نقشہ بدل رہا ہے، اس وباءسے جہاں صحت اور معیشت کے شعبوںکو نقصان پہنچا ہے وہاں لاک ڈاﺅن کی بدولت ماحولیات پر مثبت اثرات مرتب ہوئے ہیں۔ ٹریفک بند ہونے سے فضائی ماحول کے معیار میں 10 گنا بہتری آئی ہے، یہ دنیا کے لئے ایک اہم پیغام دیا ہے۔ اس موقع پر لیفٹیننٹ جنرل (ر) ندیم احمد نے این ڈی آر ایم ایف کے بارے میں آگاہ کرتے ہوئے بتایا کہ موجودہ حکومت کے ایجنڈے کے تحت ڈونر اداروں کے ساتھ رابطے قائم کئے گئے ہیں، اس سلسلے میں عالمی بینک نے ساڑھے 9 ارب روپے کی فنڈنگ پر آمادگی ظاہر کی ہے۔ یہ فنڈ این ڈی آر ایم ایف کے ذریعے مختلف منصوبوں پر خرچ ہو گا۔ یہ منصوبے ماحولیات شعبہ کی ترقی، ریچارج پاکستان، حیاتیاتی تنوع، ایکو ٹورازم اور الیکٹرک وہیکلز سے متعلق ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ کورونا سے متعلق مختلف منصوبوں کے لئے فنڈنگ کے حصول کے سلسلے میں ایشیائی ترقیاتی بینک کے ساتھ بھی بات چیت چل رہی ہے