- الإعلانات -

کاروبار کھولنے کے حوالہ سے فیصلہ آج ہو گا

فاقی وزیر برائے منصوبہ بندی ترقی، اصلاحات و خصوصی اقدامات اسد عمر نے کہا ہے کہ کاروبار کھولنے کے حوالہ سے فیصلہآج ہو گا، پاکستانی قوم نے موجودہ صورتحال میں ذمہ داری کا مظاہرہ کیا ہے، 15 تاریخ کے بعد کیا کرنا ہے فیصلہ کوآرڈینیشن کمیٹی میں کیا جائے گا، حکومت گائیڈ لائنز دے گی، اسی کے مطابق کاروبار ہو گا تاکہ ملازمین بھی محفوظ رہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پیر کو میڈیا بریفنگ دیتے ہوئے کیا۔ وفاقی وزیر نے کہا کہ آج نیشنل کمانڈ سینٹرکی میٹنگ ہو گی، تمام وزراء اعلیٰ اجلاس میں شرکت کریں گے،اور تمام فیصلے مشاورت سے کرنے کی کوشش کریں گے۔ وفاقی وزیر نے کہا کہ اللہ کے فضل سے پاکستان میں صورتحال اتنی تشویشناک نہیں، پاکستانی قوم نے موجودہ صورتحال میں ذمہ داری کا مظاہرہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کاروباری افراد کہہ رہے ہیں جو حفاظتی اقدامات کرنے ہیں ہمیں بتائیں تاکہ ہم اپنا کاروبار کھولیں تاہم اس حوالے سے فیصلہ آج ہو گا۔ اسد عمر کا کہنا تھا کہ کاروبار شروع ہوا تو تمام ذمہ داری بھی ان کی ہو گی۔ اسد عمر نے مزید کہا کہ چیئرمین این ڈی ایم اے نے بتایا کہ ٹیسٹ کٹس فراہم کر دی گئی ہیں، تمام صوبوں کے وزراء اعلیٰ نے چیئرمین این ڈی ایم اے کا شکریہ ادا کیا۔ اسد عمر نے کہا کہ دیگر ممالک کی طرح ہمارے ہاں اموات نہیں ہوئیں جس کی وجہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کے اقدامات ہیں۔ وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر کا کہنا ہے کہ بندش برقرار رکھنا بہت مشکل ہے لیکن ٹیسٹ کی صلاحیت بڑھا کر لاک ڈاؤن جیسے نتائج حاصل کر سکتے ہیں جس کیلئے کوششیں کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وباء کو پھیلنے سے روکنا ہے لیکن سب بند کرکے کوشش کریں گے تو جن ممالک میں تھوڑی سے رکاوٹ سے معاشی بوجھ پڑ رہا ہو وہاں مشکل ہوتا ہے۔ اسد عمر نے کہا کہ یہ بندشیں اس لئے ہیں کہ ایک آدمی سے دوسرے آدمی ملتا ہے لیکن سب کو ایک کمرے میں بند کرنا ممکن نہیں تاہم کوشش کی گئی ہے کہ فاصلہ رکھا جائے اسی لئے میدان اور شاپنگ مالزکو بند رکھا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کم نقصان کے ساتھ لاک ڈاؤن جیسے فوائد حاصل کر سکتے ہیں جس کیلئے ٹیسٹ کرنے کی صلاحیت بڑھانا ہو گی اور اس پر زور دے رہے ہیں۔ وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ ٹریکنگ پر بھی اچھا کام ہو رہا ہے اس حوالے سے آگاہ کیا جائے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ اس حوالے سے پائلٹ پراجیکٹ کی بات کی تھی وہ تمام صوبوں میں شروع کر دیا گیا ہے جس کے نتائج اگلے 2 سے تین دن میں آئیں گے