- الإعلانات -

نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر میں تمام سٹیک ہولڈرز نے کرونا وائرس کے عدم پھیلائو اور عوام الناس کی جان کے تحفظ کے لئے تمام امور پر سیر حاصل بحث اور صورتحال کے تجزیہ کے بعد اپنی سفارشات قومی رابطہ کمیٹی کو بھجوا دیں

 نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر میں تمام سٹیک ہولڈرز نے کرونا وائرس کے عدم پھیلائو اور عوام الناس کی جان کے تحفظ کے لئے تمام امور پر سیر حاصل بحث اور صورتحال کے تجزیہ کے بعد اپنی سفارشات قومی رابطہ کمیٹی (این سی سی) کو بھجوا دیں ہیں ۔ این سی او سی کے مطابق وفاقی وزیر منصوبہ بندی ‘ ترقی ‘اصلاحات اور خصوصی اقدامات اسد عمر کی زیر صدارت منگل کو نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر میں اجلاس منعقد ہوا ۔وزیر اعظم آزاد جموں وکشمیر، وزیراعلیٰ سندھ ، بلوچستان ، گلگت بلتستان ، چیف سیکرٹری پنجاب اور خیبر پختونخوا نے ویڈیو کے ذریعے جبکہ وفاقی وزیر داخلہ بریگیڈئر(ر) اعجاز احمد شاہ ، وفاقی وزیر صنعت و پیداوارمحمد حماد اظہر ، وفاقی وزیر توانائی عمر ایوب خان ، وفاقی وزیر اقتصادی امور خسرو بختیار ، وفاقی وزیر غذائی تحفظ فخر امام ، وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے قومی سلامتی معید یوسف ، معاون خصوصی صحت ڈاکٹر ظفر مرزا اور معاون خصوصی تجارت عبد الرزاق داودنے این سی او سی میںبریفنگ میں شرکت کی۔ فورم نے ان امور پر تفصیلی غور و خوص کے بعد حکمت عملی کو حتمی شکل دیتے ہوئے صنعت کے شعبے کے لئے اپنی سفارشات میں کہا کہ صنعتوں میں مرحلہ وار نرمی کی صورت میں انسداد کرونا وائرس گائیڈ لائنز اور ایس او پی پر مکمل عمل درآمد اجر کی ذمہ داری ہوگی۔ رمضان المبارک کے کے دوران نماز تراویح ‘ باجما عت نمازیں ‘ سحری افطاری’ فطرانہ ‘ مخیر حضرات کی جانب سے اشیاء کی تقسیم اور رمضان سستے بازاروں کے حوالے سے وزارت داخلہ علماء کرام سے مشاورت کر کے حتمی لائحہ عمل تیار کرے۔ مقامی طور پر مصنوعات کی تیاری کے سلسلے میں پاکستان انجنیئرنگ کونسل 5اقسام کے وینٹیلیٹرز تیاری پر کام کر رہا ہے ‘ مقامی طور پر وینٹیلیٹئر تیار کرنے کے لئے 8ڈیزائن منظوری کے لئے پی اے سی کو بھجوائے گئے ہیں جن کے کلینکل ٹرائل شروع ہوچکے ہیں ‘وزارت سائنس و ٹیکنالوجی ‘ڈریپ اور نسٹ 36گھنٹوں میں ٹیسٹ کی کٹ تیار کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں ۔ ریلوے کے شعبے کے حوالے سے اپنی سفارشات میں کہا گیا ہے کہ پاکستان ریلوے کی 7ٹرینوں کو ہسپتالوں/ 26 آئیسولیشن وارڈ میں منتقل کر دیا گیا ہے جو پورے ملک میں کئی بھی ضرورت کے مطابق استعمال کیں جاسکتی ہیں ‘ کرونا وائرس کے متاثرین کے لئے پاکستان ریلوے کے 12بڑی ہسپتال اور 36ڈسپنسریاں بھی اس مقصد کے لئے دستیاب ہیں ۔ ائیر ٹریفک کے حوالے سے اپنی سفارشات میں کہا گیا ہے کہ آئندہ تین ہفتوں میں 1950 مسافروں نے وطن واپس آنا ہے ‘ اگر ایک ہفتہ میں 8ہزار پاکستانیوں کو واپس لایا جائے تو بیرون ممالک میں پھنسے ہوئے پاکستانیوں کو واپس لانے کے لئے 3ہفتے درکار ہیں’ بیرون ممالک سے آنے والے پاکستانیوں کو طے شدہ ایس او پی کے مطابق آمد کی جگہ پر مخصوص مدت کے لئے قرنطینہ میں بھجوایا جائے گا ‘ بیرون ممالک سے آنے والے پاکستانیوں کے لئے تیار کی گئی ایس او پی کا 16اپریل کو دوبارہ لیا جائے گا۔ ماسوائے سیالکوٹ کے 7بین الاقوامی ہوائی اڈے ہفتہ میں 8ہزار پاکستانیوں کو واپس لانے کے لئے استعمال ہونگے ۔پاکستان کی سرحدوں کے حوالے سے کہا گیا کہ سابقہ مدت ختم ہونے کے بعد وزارت داخلہ نے ملک کی تمام سرحدیں آئندہ دو ہفتے کے لئے بند کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا ہے ‘ واہگہ باڈر 29اپریل تک ‘ افغانستان اور ایران کی سرحد 26اپریل تک جبکہ کرتار پور راہداری 24اپریل تک بند رہے گی ۔ فورم نے کوویڈ 19 کے حوالے سے اپنی یہ سفارشات منظوری کے لئے قومی رابطہ کمیٹی (این سی سی) کو بھجوا دیں ہیں