- الإعلانات -

چینی حکومت کوویڈ 19 سے نمٹنے کے لئے طبی امداد، ماہرین اور سہولیات کی صورت میں پاکستان سے تعاون جاری رکھے گی

 پاکستان میں تعینات چین کے سفیر یاو جنگ نے کہا ہے کہ چینی حکومت کوویڈ 19 سے نمٹنے کے لئے طبی امداد، ماہرین اور سہولیات کی صورت میں پاکستان سے تعاون جاری رکھے گی۔ یہ بات انہوں نے منگل کو پاکستان ریڈ کریسنٹ سوسائٹی (پی آر سی ایس) ہیڈ کوارٹر میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ انہوں نے کہا کہ ہم پاکستان کو روزانہ کی بنیاد پر طبی امداد فراہم کرنے کی پوری کوشش کر رہے ہیں۔ انہوں نے توقع ظاہر کی کہ پاکستان اپنی قیادت، معاشرے کی آگاہی اور لوگوں کے نظم و ضبط اور اتحاد سے اس وبائی بیماری پر قابو پا لے گا۔ انہوں نے کووڈ19 کے خلاف فوری اور موثر اقدامات کرنے کے لئے پاکستان ہلال احمر کی کاوشوں کو سراہا جن میں ہسپتال کا قیام ، طبی خدمات کی فراہمی ، آگاہی پیدا کرنا اور برادری کی سطح پر رضاکاروں کو متحرک کرنا شامل ہیں۔ انہوں نے پاکستانی عوام کی جانب سے مشکل وقت میں تعاون پر شکریہ ادا کیا اور کہا کہ چین مختلف طریقوں سے کوویڈ 19 سے نمٹنے میں پی آر سی ایس کی مدد کر رہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ چین نے ڈاکٹروں اور پیرا میڈیکل اسٹاف کے لئے این 95 سمیت دو لاکھ ماسکس کی خریداری میں پی آر سی ایس کیساتھ تعاون کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ڈاکٹروں اور دیگر طبی عملے کی حفاظت کے لئے چین نے پی آر سی ایس کو حفاظتی سامان (پی پی ای) کی کٹس بھی فراہم کی ہیں۔ یاؤ جنگ نے کہا کہ چین کی حکومت نے اس بیماری پر قابو پانے میں پاکستان کی مدد کے لئے دوسرے شعبوں میں بھی مزید تعاون کی پیشکش کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پی آر سی ایس نے راولپنڈی میں محدود وقت میں 120 بستروں کا ہسپتال قائم کیا ہے جہاں 9 وینٹی لیٹر دستیاب ہوں گے جبکہ 27 مریضوں کا ہسپتال کے انتہائی نگہداشت یونٹ (آئی سی یو) میں علاج کیا جاسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ گردوں کی بیماری جیسے دیگر امراض کی صورت میں مریضوں کو شہر کے دوسرے ہسپتالوں میں منتقل کرنے کے لئے وینٹی لیٹر کی سہولت والی ایمبولینس کی خدمات بھی میسر ہوں گی۔ انہوں نے کہا کہ عوامی رضاکار آگاہی پیدا کرنے، لوگوں کو مدد کی فراہمی کے علاوہ سرکاری تنظیم کی بھی مدد کر رہے ہیں۔ چینی سفیر نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان نے بیروز گار اور محروم طبقات کیلئے اب تک کے سب سے بڑے پیکیج کا اعلان کیا ہے جب کہ پاک فوج ، نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) اور نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ (این آئی ایچ) کا کردار بھی قابل تحسین ہے۔ انہوں نے توقع ظاہر کی کہ جلد ہی حالات میں بہتری آئے گی۔انہوں نے عوام سے خون کے ‘عطیات’ کی بھی اپیل کی،خصو صاً ایسے وقت میں جبکہ یونیورسٹیاں اور کالجز بند ہیں