- الإعلانات -

لاک ڈاﺅن کی صورتحال میں گندم کی کٹائی کے لئے کاشتکاروں کو ہر طرح کی سہولیات کی فراہمی یقینی بنائی جائے، سپیکر قومی اسمبلی کی وزارت قومی غذائی تحفظ اور تمام متعلقہ اداروں کو ہدایت

 سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نے وزارت قومی غذائی تحفظ اور تمام متعلقہ اداروں کو ہدایت کی ہے کہ لاک ڈاﺅن کی صورتحال میں گندم کی کٹائی کے لئے کاشتکاروں کو ہر طرح کی سہولیات کی فراہمی یقینی بنائی جائے۔ قومی اسمبلی سیکرٹریٹ کے مطابق ان خیالات کا اظہار سپیکر نے وزارت قومی غذائی تحفظ کے وزیر سید فخرامام ،وزیر منصوبہ بندی اسد عمر اورارکان قومی اسمبلی سے ملاقات کے دوران کیا۔ سپیکر نے فخر امام کو وفاقی وزیر برائے قومی فوڈ سکیورٹی اینڈ ریسرچ کا عہدہ سنبھالنے پر مبارکباد دی اور کہا کہ پرامید ہوں فخر امام کی قیادت میں وزارت غذائی تحفظ کاشتکاروں کیلئے اہم کردار ادا کرے گی، لاک ڈوان اور موجودہ صورتحال کے باعث کسانوں کو درپیش مسائل پر تبادلہ خیال کرتے ہوئے سپیکر نے کہا کہ گندم کی کٹائی کے دوران پورے ملک میں کسانوں کو ہر طرح کی سہولیات فراہم کی جائیں۔ آئندہ بجٹ میں خصوصی توجہ دے کر زرعی شعبے کو ترقی دی جاسکتی ہے۔ وزرات آئندہ بجٹ کے لیے اپنی سفارشات مرتب کرے۔زراعت کا شعبہ پاکستان کی قومی غذائی تحفظ، غربت کے خاتمے کے لئے اہم اور ملکی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتی ہے۔کسان دوست پالیسی زرعی شعبے کی ترقی میں اہم کردار ادا کرسکتی ہے۔ملکی زراعت کی ترقی کا دارو مدار جدید ریسرچ پر ہے۔زراعت کے شعبے کی ترقی کےلیے بڑا پیکج ضروری ہے۔خصوصی کمیٹی کی سفارشات کو ملک کی زرعی پالیسی کا حصہ بنا کر کسانوں کے مفادات کا تحفظ کیا جا سکتا ہے۔ سید فخر امام کا کہنا تھا کہ ملک میں خوراک کی کوئی قلت نہیں۔ملک کی زرعی معیشت کو ترقی دینے کے لئے خصوصی کمیٹی کی سفارشات پر عمل کیا جائے گا۔بہتر رابطے کے ذریعے زرعی ترقی کے لیے صوبوں میں ہم آہنگی پیدا کرنا ہوگی۔اسد عمر نے کہا کہ بجٹ میں زرعی شعبے کو ترجیح دی جائے گی۔حکومت زراعت کے شعبے میں سرمایہ کاری کے لیے اقدامات اٹھا رہی ہے