- الإعلانات -

کراچی میں عمارت گرنے سے جاں بحق افراد کی تعداد 19 ہوگئی

کراچی: لیاری کھڈا مارکیٹ میں منہدم ہونے والی 5 منزلہ رہائشی عمارت کے ملبے سے مزید 11 افراد کی لاشیں نکال لی گئیں جس کے بعد حادثے میں جاں بحق ہونے والوں تعداد 19 ہو گئی۔

اب تک نکالی گئی لاشوں میں ایک ہی خاندان کے 6 افراد بھی شامل ہیں جوکہ منہدم ہونے والی عمارت کی پہلی منزل پررہائش پذیر تھے۔ گرنے والی 5 منزلہ مخدوش رہائشی عمارت کا ملبہ ہٹانے کا کام منگل کو بھی جاری رہا۔ اس دوران ملبے تلے دب کر جاں بحق ہونے والے مزید 3 خواتین سمیت 7 افراد کی لاشیں نکالنے کے بعد ضابطے کی کارروائی کے لیے سول اسپتال منتقل کردی گئیں۔ بعدازاں ملبے سے مزید 4 لاشیں بھی نکالی گئیں۔

ریسکیو حکام کے مطابق عمارت کے ملبے تلے دب کرجاں بحق ہونے والوں کی شناخت 50 سالہ شہناز زوجہ محمد شفیق، 20 سالہ شہزاد ولد محمد شفیع، 32 سالہ میمونہ زوجہ سعید، 52 سالہ توفیق ولد عبدالرؤف، 23 سالہ سعید ولد شفیق اور 30 سالہ فیصل عرف بہار ولد جہانگیرکے نام سے کرلی گئی۔ ملبے سے نکالے جانے والی 50 سالہ خاتون کی تاحال شناخت ممکن نہیں ہوسکی۔
عمارت کا ملبہ ہٹانے کے لیے پاک آرمی کے انجینئرنگ کور، سندھ رینجرز کے افسران اور ریسکیو اداروں کے اہلکار جدید آلات کے ہمراہ امدادی کاموں میں مصروف ہیں۔ پاک فوج کے سراغ رساں کتوں کی مدد سے بھی ملبے تلے دبے افراد کو تلاش کیا جا رہا ہے۔

متاثرہ عمارت کے مکینوں کا کہنا ہے کہ عمارت کے ملبے تلے ابھی کئی لوگ موجود ہیں جن میں ایک ہی خاندان کے 8 افراد بھی شامل ہیں۔ اس وجہ سے ملبہ ہٹانے میں انتہائی احتیاط سے کام لیا جا رہا ہے۔

حادثے کا شکار ہونے والی عمارت کے مکینوں کا کہنا تھا کہ عمارت کو منہدم ہوئے 2 روز ہوگئے لیکن ان کی مدد کے لیے کوئی نہیں آیا اور نہ کسی نے ان سے پوچھا کہ وہ کیسے زندگی گزاررہے ہیں؟ رات کھلے آسمان تلے گزاری ہے، ان کے پاس کوئی متبادل جگہ بھی نہیں جہاں جا کر وہ رہائش اختیارکرسکیں، نہ وفاقی اور نہ ہی صوبائی حکومت ان کی مدد کو آئی، ہمیں متبادل ٹھکانہ دیا جائے اور مالی معاونت کی جائے۔