- الإعلانات -

کراچی کا سب سے بڑا مسئلہ اختیارات کا نچلی سطح تک منتقل نہ ہونا ہے، وزیراعظم

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے کراچی ٹرانسفارمیشن پلان کا جائزہ لیا اور صوبوں کو تباہ کن شہری مسائل پر قابو پانے کے لیے بڑے شہروں کے ماسٹر پلانز پر نظر ثانی کرنے کی ہدایت کی۔

وزیراعظم نے اپنے کراچی کے دورے میں تبدیلی کی اور اب ان کی ہفتہ کے روز ملک کے معاشی حب میں آمد متوقع ہے۔

اس تبدیلی سے باخبر ایک ذریعہ کا کہنا تھا کہ وزیراعظم نے شہر کے کچھ حلب طلب معاملات کے پیش نظر جمعہ کے روز کراچی جانے کا منصوبہ منسوخ کیا جس میں سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی (ایس بی سی اے) اور کچرہ اٹھانے کے نظام کا کنٹرول صوبائی حکومت کی جانب سے وفاقی سے مشاورت کے بعد تعینات ہونے والے ایڈمنسٹریٹر کو دینا شامل ہے۔

ذریعہ کا کہنا تھا وزیر منصوبہ بندی اسد عمر کراچی کے نکاسی آب اور سیوریج کے بند نظام، کچرہ اٹھانے کا ناقص طریقہ کار، شہر کے ماسٹر پلان کو اپ گریڈ کرنے اور تجاوزات جیسے دیرینہ مسائل کو حل کرنے کے لیے سندھ حکومت کے ساتھ ایڈمنسٹریٹر کےاختیارات کے ساتھ اجلاس کررہے ہیں۔

دوسری جانب اسد عمر نے کراچی سرکرلر ریلوے پر علیحدہ اجلاس کیا تا کہ پبلک پرائیویٹ پارٹنڑ شپ کی بنیاد پر یہ منصوبہ بروقت مکمل اور اس کے چوتھے مرحلے پر کام کیا جائے۔

کراچی ٹرانسفارمیشن پلان

دفتر وزیراعظم سے جاری بیان کے مطابق وزیراعظم نے کہا کہ کراچی کا سب سے بڑا مسئلہ انتظامی اختیارات کا نچلی سطح تک منتقل نہ ہونا ہے۔

انہوں نے کہا کہ کہ حالات کا تقاضا ہے کہ واٹر سپلائی سکیم، سیوریج ٹریٹمنٹ اینڈ ڈسپوزل، سالڈ ویسٹ منیجمنٹ اور بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی سے متعلق اختیارات ایک بااختیار ایڈمنسٹریٹر اور لوکل گورنمنٹ کو تفویض کیے جائیں۔

وزیراعظم نےکہا کہ بدقسمتی سے کسی نے بھی کراچی کے شہریوں کو درپیش مسائل کا خیال نہیں کیا، حالیہ شدید بارشوں نے نہ صرف انتظامی مسائل کو اجاگر کیا بلکہ متعدد مسائل بھی پیدا کیے۔

این سی سی اجلاس

بعدازاں نیشنل کوآرڈنیشن کمیٹی برائے ہاؤسنگ کنسٹرکشن اور ڈیولپمنٹ کا اجلاس ہوا جس میں وزیراعظم نے متعلقہ حکام کو بڑے شہروں کے ماسٹر پلان پر نظر ثانی تیز کرنے اورباقاعدگی کے ساتھ پیش رفت رپورٹ جمع کروانے کی ہدایت کی۔

انہوں نے کہا کہ تعمیراتی شعبہ معاشی استحام کے لیے نہایت اہم ہے اس لیے حکومت اس کے فروغ کے لیے پر عزم ہے۔

وزیراعظم نے صوبائی چیف سیکریٹریز اور ڈیولپمنٹ اتھارٹیز کے سربراہاں کو اپنی ویب سائٹ پر منظور شدہ ہاوسنگ پروجیکٹس کی معلومات اپلوڈ کرنے اور اسے روزانہ کی بنیاد پر اپڈیٹ کو یقینی بنانے کی ہدایت کی۔