- الإعلانات -

اجتماعی زیادتی کیس میں پراسیکیوشن ٹیم مقرر، وزیراعلیٰ کے سخت احکامات

لاہور: صوبہ پنجاب کے دارالحکومت میں موٹروے پر خاتون سے زیادتی کے کیس میں پراسیکیوشن ٹیم مقرر کردی گئی جبکہ وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے متعلقہ اداروں کو سخت احکامات بھی جاری کردیے ہیں۔

گجرپورہ میں اجتماعی زیادتی کیس سے متعلق ڈسٹرکٹ پبلک پراسیکیوٹر رائے مشتاق نے 4رکنی پراسیکیوشن کمیٹی قائم کردی۔ کمیٹی میں پبلک پراسیکیوٹرشہبازخان، حبیب الرحمن، ساجدسعید اور محسن بھٹی شامل ہیں۔ کمیٹی تحقیقات میں اہم کردار ادا کرے گی۔

پراسیکیوشن ٹیم مقدمے کی تمام تفصیل ڈسٹرکٹ پراسیکیوٹرآفس کو فراہم کرے گی۔ ملزمان کے خلاف تھانہ گجرپورہ میں زیادتی اور ڈکیتی کی دفعہ کے تحت مقدمہ درج ہے۔

وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے متعلقہ اداروں کو سخت کارروائیوں کے لیے احکامات جاری کردیے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ خاتون زیادتی کیس میں پیشرفت کا ذاتی طورپر جائزہ لے رہا ہوں، آئی جی پنجاب کو ملزمان کی جلد گرفتاری کی ہدایات دی ہیں، ملزمان کی تلاش کے لیے جدید طریقے سے تحقیقات آگے بڑھ رہی ہے۔

اجتماعی زیادتی، سینیٹ کمیٹی کا نوٹس، وفاقی وزیر انسانی حقوق نے رپورٹ طلب کرلی

انہوں نے کہا کہ ملزمان نے انتہائی گھناؤ نے فعل کا ارتکاب کیا ہے، اندوہناک واقعے کے ذمہ دارعبرتناک سزا کے مستحق ہیں، خاتون کے ساتھ ظلم کرنے والوں کو سخت سزا بھگتنا ہوگی، متاثرہ خاتون کو انصاف کی فراہمی میں یقینی بنائیں گے، اس کیس میں ہرصورت انصاف ہوگا۔

دوسری جانب وزیر قانون پنجاب راجہ بشارت نے بھی موٹروے پر خاتون سے ڈکیتی اور زیادتی کا نوٹس لے لیا، وزیر قانون پنجاب نے پولیس سے اب تک کی پیش رفت کی رپورٹ طلب کر لی۔

راجہ بشارت نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس طرح کے واقعات انتہائی تکلیف دہ ہیں، وزیراعلیٰ پنجاب نے فوری کارروائی کی ہدایت کی ہے، متاثرہ خاندان کے ساتھ اظہار ہمدردی ہے، انصاف کا یقین دلاتے ہیں، واقعے میں غفلت کے مرتکب پولیس ملازمین کے خلاف بھی کارروائی ہوگی۔