- الإعلانات -

پاکستان کو بحران سے کون نکال سکتا ہے ڈاکٹر قدیر کا بڑا دعویٰ

اسلام آباد: ممتاز ایٹمی سائنسدان اور تحریک تحفظ پاکستان پارٹی کے سربراہ ڈاکٹر عبدالقدیر خان نے دعویٰ کیا ہے کہ صرف وہ ہی پاکستان کو بحران سے نکال سکتے ہیں۔

یوم تکبیر کی مناسبت سے اسلام آباد میں نظریہ پاکستان کے زیر اہتمام ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر عبدالقدیر خان نے انکشاف کیا کہ پاکستان 1984 میں ہی ایٹمی دھماکے کرنے کے قابل ہوگیا تھا، تاہم سابق فوجی آمر جنرل ضیاء الحق نے منع کیا کہ اگر اس وقت دھماکے کیے گئے تو عالمی برادری کی جانب سے افغان جنگ کی امداد ملنا بند ہو جائے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان 5 منٹ کے اندر کہوٹہ سے دہلی کو نشانہ بنانے کے قابل ہے۔

ڈاکٹر عبدالقدیر کا کہنا تھا کہ ان کی خدمات کے بغیر پاکستان دنیا کی پہلی ایٹمی قوت نہیں بن سکتا تھا، ان کا کہنا تھا، ‘ہم نے بہت مشکل صورتحال میں جوہری صلاحیت حاصل کی’۔

سابق فوجی آمر جنرل (ر) پرویز مشرف کے دورِ حکومت میں اپنے ساتھ روا رکھے گئے سلوک کا ذکر کرتے ہوئے ڈاکٹر عبدالقدیر خان کا کہنا تھا کہ ملک میں ایٹمی سائنسدانوں کو وہ عزت نہیں دی گئی جس کے وہ مستحق تھے، ان کا کہنا تھا کہ ‘ملک کو ایٹمی طاقت بنانے والے اپنی خدمات کا خمیازہ بھگت رہے ہیں’۔

ڈاکٹر عبدالقدیر خان نے کہا کہ سیاستدان ملک کو لوٹ رہے ہیں جبکہ پاناما لیکس کے ذریعے سب کچھ عوام کے پاس آگیا ہے، ان کا کہنا تھا کہ ‘ہمارے بینک اکاؤنٹس میں بمشکل چند لاکھ روپے نکلیں گے جبکہ سیاستدانوں کے اکاؤنٹس میں اربوں روپے ہوں گے۔’

ڈاکٹر عبدالقدیر خان نے کہا کہ ‘پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے رہنما اعتزاز احسن وزیراعظم نواز شریف سے سوال کرتے ہیں کہ پیسہ کہاں سے آیا ہے انہیں زرداری صاحب سے بھی سوئس بینک اکاؤنٹس میں موجود رقم کے حوالے سے سوال کرنا چاہیئے۔