- الإعلانات -

این اے 110 انتخابی عذرداری کیس کی سپریم کورٹ میں سماعت

اسلام آباد  سپریم کورٹ میں آج این اے 110 انتخابی عذرداری کیس کی سماعت ہوئی۔ چیف جسٹس انور ظہیر جمالی کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے سماعت کی۔ دوران سماعت الیکشن کمیشن کے حکام نے کہا کہ 26 پولنگ سٹیشنز کا ریکارڈ مل گیا ہے صرف تین کا رہ گیا ہے۔عدالت میں سماعت کے دوران وفاقی وزیر دفاع کے وکیل اور چیف جسٹس آف پاکستان کے درمیان دلچسپ مکالمہ بھی ہوا۔خواجہ آصف کے وکیل نے ایک موقع پر کہا کہ ہم خود اس معاملے کو ختم کرنا چاہتے ہیں تاکہ کسی تکلیف نہ ہو جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ آپ کا موکل تو عہدے کا مزہ لوٹ رہا ہے، تکلیف تو مخالف امیدوار کو ہے۔خواجہ آصف کے وکیل نے کہا کہ اس کیس کے معاملے پر میڈیا میں بہت کیچڑ اچھالی جارہی ہے جس پر چیف جسٹس نے کہا میڈیا ٹرائل تو آرڈر آف دی ڈے ہے، کسی کو استثناءنہیں۔بعدازاں عدالت نے الیکشن کمیشن کو ہدایت کی کہ جیسے ہی مزید تین پولنگ اسٹیشنز کا انتخابی مواد ملے فوراً نادرا کو بھجوا دیا جائے۔ کیس کی سماعت جولائی کے چوتھے ہفتے تک ملتوی کر دی گئی