- الإعلانات -

امجد صابری کی موت ہسپتال میں آنے سے پہلے ہی ہوچکی تھی ۔ ڈاکٹرز

کراچی نامعلوم افراد کی فائرنگ سے جاں بحق ہونے والے مشہور قوال امجد صابری کی بائیں طرف کی آنکھ کے اوپر کی جانب پیشانی میں لگنے والی گولی جان لیوا ثابت ہوئی ۔
ذرائع  کے مطابق امجد صابری کی ونڈ سکرین پر 6 گولیوں کے نشانات موجود ہیں تاہم قوال کو ایک گولی سینے میں لگی جبکہ دوسری گولی ان کی بائیں طرف کی آنکھ کے اوپر کی جانب پیشانی میں لگی ۔ امجد صابری کو جب آغا خان ہسپتال لایا گیا ور گاڑی سے اتارا گیا تو ان کی سانسیں چل رہی تھیںتاہم جب انہیں اندر لے جایا گیا تو وہ جاں بحق ہوگئے ۔ ڈاکٹروں نے بھی اس بات کی تصدیق کردی ہے کہ ان کی موت ہسپتال میں آنے سے پہلے ہی ہوچکی تھی ۔ ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ امجد صابری کی الٹی آنکھ کے اوپر پیشانی پر گولی ماری گئی جس کی وجہ سے وہ جاں بحق ہوئے۔