- الإعلانات -

قانون کے رکھوالوں نے شرم و حیاءکا پیکر اتار ڈالا حوا کی بیٹی کی عزت لوٹ لی

جڑانوالہ قانون کے رکھوالوں نے شرم و حیاءکا پیکر اتار ڈالا ,جو اں سالہ لڑکی کو گھر سے اٹھا کر ساری رات شراب کے نشہ میں دھت فحش حرکات ، سب انسپکٹر وردی اتار کر لڑکی کے سامنے ننگا ڈانس کرتا رہا۔ لڑکی کو زبردستی شراب پلانے وجنسی ہراساں کرنے کی کوشش کے بعد کارروائی کرنے پر پیٹی بھائیوں نے ہی متاثرین کو دھمکانا شروع کردیا۔ذرائع  کے مطابق کومل امین دختر امین راجپوت گلی نمبر 5 رشید پارک نے وزیراعلیٰ پنجاب اور آئی جی پنجاب کو درخواستیں گزارتے ہوئے موقف  اختیار کیا کہ ظفر اقبال سب انسپکٹر ناصر اپنے ساتھیوں کے ہمراہ اس کے گھر میں گھس آیا اور مجھے زبردستی اٹھا کر تھانہ میں لے آیا۔ ساری رات میرے ساتھ فحش حرکات و غلیظ باتیں کرتا رہا مجھے شراب کی پیک بنانے اور پینے کے لیے کہتا رہا۔ بعد ازاں ظفر اقبال نے اپنی وردی اتاردی اور میرے سامنے ننگا ڈانس کرنے لگا اور مجھے زبردستی شراب پلا کر زیادتی کی کوشش کی زبردستی جپھیاں ڈالنے کی کوشش کی اس طرح تین روز تک الزام علیہان زبردستی گھماتے پھراتے اور اپنی ہوس کا نشانہ بناتے رہے ،میں لاچار مجبور ان کے لیے کھیلونا بنی رہی ،تھانہ سٹی کی فحش حرکات اور ایک حوا کی بیٹی کے تین روز تک لٹتے رہنے اور درخواستوں کے باوجود کوئی شنوائی نہ ہوئی