- الإعلانات -

عمران خان کی بہن سے پولیس وردی میں ملبوس افراد کی بدتمیزی

لاہور:میں عمران خان کی بہن سے پولیس وردی میں ملبوس افراد کی بدتمیزی، اہلکاروں نے بندوقیں تان لیں۔ ڈاکٹر عظمیٰ نے الزام لگایا کہ وی وی آئی پی شخصیت کی گاڑی جس گھر میں گئی انہوں نے بتایا مریم نواز آئی تھیں۔عمران خان کی بہن ڈاکٹر عظمیٰ نے کہا پولیس کی ایک گاڑی نے آ کر ان کی گاڑی کو روکا جبکہ دوسری نے آ کر ٹکر ماری۔ پولیس کی وردی میں ملبوس افراد نے ہراساں کیا۔ پولیس کسی وی آئی پی کی سیکورٹی پر مامور تھی۔ ڈاکٹر عظمیٰ نے کہا وی وی آئی پی شخصیت کی گاڑی جس گھر میں گئی انہوں نے بتایا مریم نواز آئی تھیں۔ ایک سال پہلے آج ہی کے دن پولیس والوں نے بچوں کو مارا تھا۔ کس کیخلاف مقدمہ درج کراؤں پہلے کونسا انصاف ملا تھا۔ تاہم ترجمان شریف فیملی نے تردید کرتے ہوئے کہا جب واقعہ پیش آیا مریم نواز اسلام آباد میں موجود تھیں۔ عمران خان کی بہن بھائی کی طرح جھوٹ نہ بولیں سچ بولنا سیکھیں۔ ترجمان کے مطابق مریم نواز ان کے اعصاب پر سوار ہیں خواب میں بھی دکھائی دیتی ہیں۔ مسلم لیگ ن کے رہنما طلال چودھری نے کہا ڈاکٹر عظمیٰ کو چاہیئے اگر غلط فہمی ہوئی ہے تو تردید کریں یا جھوٹ بولا ہے تو معافی مانگیں۔ مریم نواز نہ لاہور میں تھیں نہ ہی کوئی پروٹوکول چل رہا تھا۔ ڈاکٹرعظمیٰ سچی ہوتیں تو تھانے میں رپورٹ درج کراتیں۔ دوسری جانب ایس پی ماڈل ٹاؤن عمارہ اطہر کا کہنا ہے کہ گلبرگ میں کسی وی آئی پی موومنٹ کی اطلاع نہیں اور اب تک کسی نے چوکی فردوس مارکیٹ یا گلبرگ تھانے میں رپورٹ درج نہیں کرائی۔ عمارہ اطہر کا کہنا تھا کہ جہاں واقعہ ہوا وہاں سے سی سی ٹی وی کیمروں سے فوٹیج لینے کی کوشش کر رہے ہیں تاکہ حقائق تک پہنچا جا سکے۔